Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی

شیرانی رلی

November, 2020

  • 11 November

    اوست ۔۔(چاچا بزدار ئے ناما) ۔۔  تاج بلوچ

    ہورو، اے دنیا مئیگ وتئی گیگانہ اِنت پرچا وتی ارسانی باوستا دگہ اندوہ و ڈکان زیرگئے؟   ہورو، اے دنیا واہگ ومِہری نہ اِنت تؤ پہ کجام اوستاہدا مرزیگیں وابی ٹُکراں نزآر گائے دامنا؟ ہورو، اے دنیا آس و گو کُرتانی پُشتا جکّتگ ہورو، اے دنیا آ دمی ہونانی پُشتا سبزِ تگ   ہورو، منی چمانی دیماتئی گُلیں ورنائی پُلانی ...

  • 11 November

    مہلب ہلاسیں کسہے ۔۔۔ مہلب نصیر

    ترمپ ترمپ دردَ میسینیت منا مہر چو جولاھگا پیچا نہ کنت نکشاں دلئے گم کنئے وکئی چماں رُنت اچ میتگئے دمک و دراں بازار و باگ و کہچراں دل رُستگنت کونسانی نزیں رولہاں زی بیگھا روز ردئے رنگان گریتگ ات بیوانکیا دیوانگ انت۔۔۔۔ اینچک نزاننت ترانگی دنزاں شلنت وشیشگی دیوالئے آدستئے ندارگ کہ سر پیت نُگر پیں اومانئے سگ سک ...

  • 11 November

    شبِ یلدا ۔۔۔  قندیل بدر

    وہ مجھ سے کہیں دور بہت دور جاگتا رہتا ہے کبھی اپنے کمرے میں مجھے آئینے میں سجتے سنورتے ہوئے دیکھتا ہے اور مسکراتا ہے تو کبھی اپنی سائیڈ ٹیبل پر کتاب پڑھتے ہوئے مجھے پڑھنے کی کوشش کرتا رہتا ہے اور کبھی دیواروں پر انگلیاں گھماکر میری تصویر بنانے کے جتن کرنے لگتا ہے جب تھک جاتا ہے تو ...

  • 11 November

    یکسوئی ۔۔۔  ساحر لدھیانوی

    عہدِ گم گشتہ کی تصویر دکھاتی کیوں ہو؟ ایک آوارۂ منزل کو ستاتی کیوں ہو؟   وہ حسیں عہد جو شرمندۂ ایفا نہ ہوا اس حسیں عہد کا مفہوم جتاتی کیوں ہو   زندگی شعلہء بے باک بنا لو اپنی! خود کو خاکسترِ خاموش بناتی کیوں ہو   میں تصوّف کے مراحل کا نہیں ہوں قائل میری تصویر پہ تم ...

  • 11 November

    دیوتا ۔۔۔  آسناتھ کنولؔ

    موم کی گڑیا تو پھولوں سے بہل جاتی ہے لفظ کے دیوتا روح کے ملگجے سایوں پہ کوئی حرف اُتار روشنی دینے لگے خوشبو کو  پَر لگ  جائیں میرے سورج بس تیری حرارت کی قسم موم کی گڑیا تو خوشبو سے بہل جاتی ہے نطق و لب تیری دہلیز کے چند سائے ہیں مگر افسوس مرے پاس میرا میرا کچھ ...

  • 11 November

    لائل پور ۔۔۔  حبیب جالب

    لائل پور اک شہر ہے جس میں دل ہے مرا آباد دھڑکن دھڑکن ساتھ رہے گی اس بستی کی یاد میٹھے بولوں کی وہ نگری گیتوں کا سنسار ہنستے بستے ہائے وہ رستے نغمہ ریز دیار وہ گلیاں وہ پھول وہ کلیاں رنگ بھرے بازار میں نے ان گلیوں پھولوں کلیوں سے کیا ہے پیار برگ آوارہ میں بکھری ہے ...

  • 11 November

    تاج محل ۔۔۔ ساحر لدھیانوی

    تاج تیرے لیے اک مظہرِ الفت ہی سہی تجھ کو اس وادیِ رنگیں سے عقیدت ہی سہی میری محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی مردہ شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا ان گنت لوگوں نے دنیا میں محبت کی ہے کون کہتا ہے کہ ...

  • 11 November

    ایک سندیسے کی آس میں ۔۔۔  علی بابا تاج

    منڈیروں پہ پنچھی جب سے چلنا بھول گئے اڑنا بھول گئے اجلے دن میں دیر تلک کیا رہنا تھا اک منظر جو آنکھ میں اترا بے شکلی میں اک آواز تھی بوسیدہ وقت کے پہلو میں سو وہ بھی سورج پار گئی اک منڈیر پہ پنچھی آتے گاتے اک سندیسہ روز وہ لاتے آن کی آن میں خوشبو بھر کے ...

  • 11 November

    بنام فیض احمد فیض  ۔۔۔ صفدرصدیق رضی

    ہم تجھے بھولنے والے تھے تجھے بھول گئے ہوتے کہ ہم زود فراموش کسی کو بھی بھلا سکتے ہیں حافظہ اتنا سبک سر ہے کہ تادیر اس میں کوئی محفوظ نہیں رہ سکتا ہم تجھے بھولنے والے تھے مگر بھولے نہیں عہدِ حاضر میں بھی ماضی کی طرح شہر کی سرخ و سیہ سڑکوں پر رنج اور کرب کی اڑتی ...

  • 11 November

    انچو تہنایا رند ئے تو ۔۔۔۔ دادبخش کلمتی

    انچو تہنایا رند ئے تو گشے گاراں  وتئی رند پداں گمان بھی ٹکرے دلئے تو گوں وتا برتگ پہ وابابند بنت چم منی… اکس تئی چول جنت باتنا انچو کمزور باں گشئے تہا سک پرشتگاں تو یاد  کائے ارس انارکاں ہْل وراں اِشکْتہ انچو کے گشتگ تو تئی محبت نست مناں۔۔۔ آسمان ہما روچا ہروتکا سرا منی زمین انگر بوتگ ...