Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی

شیرانی رلی

September, 2020

  • 7 September

    بانجھ بنجھوٹی ۔۔۔ انجیل صحیفہ

    میں نے  کثرت سے آنکھوں کی بینائی خوابوں پہ خرچی ہے سو آنکھ اب کوئی منظر بھی تکنے کے قابل نہیں دل نے آنکھوں کی باقی بچی روشنائی سے خوابوں کاسودا کیا ہے جو روز ازل سے سفیدی کی رہ تک رہی ہیں وہ وحشت بھری ساری بے خواب آنکھیں کہاں پر کھلی تھیں یہ اسرار تم پر کہاں کھل ...

  • 7 September

    قندیل بدر

    آسماں سے جو شب گرا ہوگا سرمئی جھیل میں پڑا ہوگا   خواب وادی میں نیند جھرنے سے دودھیا چاند بہہ رہا ہوگا   بخت کی ملگجی ہتھیلی پر آتشیں پھول کاڑھنا ہوگا   لاکھ روکا گھڑی کو چلنے سے ریت لمحہ پھسل گیا ہوگا   قمقمے تھک کے سو چکے ہوں گے پر وہ جگنو ہے جاگتا ہوگا   ...

  • 7 September

    رتجگا ۔۔۔ تمثیل حفصہ

    نظم کہتی رہی میں نہیں ہوں نہیں ہاں کہیں ہوں کہیں لفظ گٹھڑی بھرے کاغذوں کے تلے چھپ کے بیٹھے ہیں یوں بات کرتے نہیں دیکھتے بھی نہیں سوچ کشتی میں چپو چلاتے رہیں رات مجھ کو مجھی کو سناتے رہیں تم نہیں ہو نہیں مجھ کو مجھ میں کہیں لفظ ملتے نہیں تیری پہلی کرن ڈوبتی بھی نہیں صبح ...

  • 7 September

    ستیہ پال آنند ۔۔۔ بساط

    بساط کیا ہے؟ کسی بھی مہرے کی؟ فربہی، ڈیل ڈول، جْثہ؟ عمل کی قوت؟ بضاعت و کارکردگی؟شکل؟ چھب؟ تناسبِ؟ خطاب، اعزاز، کلغی، وردی،نجابت و نسل و جاہ و منصب کہ نا تراشیدہ، نیچ، اسفل، غلام، گھسیارے، امکے ڈھمکے؟ چلو، چلیں، دیکھیں کیا بچھایا گیا ہے۔۔۔ اپنی بساط پر آج کے حوالے سے کون کیا ہےَ؟ یہ فوجی جرنیل۔۔۔کل کلاں یہ ...

  • 7 September

    غزل ۔۔۔ بلال اسود

    کسی بھی شخص کے شانے پہ بار ِ غیب نہیں لگی ہے بھیڑ انا کی، قطار ِغیب نہیں   نظر کے سامنے کم ہے زیادہ اوجھل ہے حسابِ ہست ہے ممکن، شمار ِغیب نہیں   ہماری روح کی کیسے ہو آب یاری، یہاں پناہِ نفس میسّر، جوار ِ غیب نہیں   ہمیں اجل جو بلاتی ہے وقتِ شام، اِسے صدائے ...

  • 7 September

    شئیر ۔۔۔ مہتاب جکھرانی

    مور جزغ وشکی چالیں یار مئے مئے نِغاہا مُرگ بالیں یار مئے   روح باندی، قید دل،بے حال ما تھئی نِغاہانی کمالیں یار مئے   رک گلابانی  وڑا دتّاں سوے پونز شیفغ دیذ ڈالیں یار مئے   وش طبیعت، وش مزاج  و  وش لساں نرم خو دشت ئے غزالیں یار مئے   دئے مناں بشکندغے من  سوز باں زندغی ئے ...

  • 4 September

    خواب کی شیلف پر دھری نظم ۔۔۔  سبین علی

    گر سمندر مجھے راستہ دیتا تو سفر کرتی اس قندیل کے ساتھ جو شام کا ملگجا پھیلتے ہی ساحل پر روشن ہو جاتی ہے اڑتی ققنس کے ہمرکاب افق کی مسافتوں میں تیرتی مچھلیوں کے سنگ کھوجتی ریگ زاروں میں نیلگوں پانیوں کو سرمئی پہاڑوں میں جادوئی سرنگوں کو لیکن میرے سرہانے آدھے پونے خواب پڑے ہیں اور میری شیلف ...

  • 4 September

    غزل ۔۔۔  تمثیل حفصہ

    آواز سے سمٹی جاتی ہوں خاموشی سنتی جاتی ہوں   بادل، بارش، قطرہ، شبنم موسیقی بْنتی جاتی ہوں   تری ذات کے درپن میں سجنا دلہن سی سجتی جاتی ہوں   تری یاد کی خوشبو آنے پر میں خود سے ملتی جاتی ہوں   گیتا، قرآن، کتابوں سے ایمان کو چنتی جاتی ہوں   میں آیت نیلے رنگوں کی آکاش ...

  • 4 September

    غزل ۔۔۔  دادبخش کلمتی

    مھربان تئی مھر داں کجائیں ما ھَم بزان اِنہ گشے تئی بے وپائی روچ مہ روچ گیش بیان اِنہ   وپا آں مئے بے وپا پراموش اِنت اَنچوش اڈیت گوں سنگے ء َ سرا مئے زھر وران اِنہ   اپ مباتاں تئی انارکانی اناریں رنگا کہ چادر تئی سیاھیں سْھریں رنگ چنان اِنہ   زندگی گوں تئی یات وزھیراں ھمگرنچ ...

  • 4 September

    غزل ۔۔۔  صفدرصدیق رضی

    اب ایک دوسرے کی ضرورت نہیں رہی جب فاصلے نہیں تو محبت نہیں رہی اس گھرسیاب یہ نقل مکانی کاوقت ہے دل میں اگر کسی کی سکونت نہیں رہی آغازِ عشق میں بڑے ثابت قدم تھے ہم اب وہ شکست و ریخت سلامت نہیں رہی جتنے بھی جاں نثار تھے جاں سے گذر گئے اس کو گماں ہے رسمِ بغاوت ...