Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی

شیرانی رلی

گزری اور آنے والی بہاروں کے نام ۔۔۔ نوشین کمبرانڑیں

ہزاروں گنج ہیں جن پر تیرے پیروں کے بوسے ہیں تہہِ خاکِ وطن تو ہے یہ پیہم تیرے سبزے ہیں   میں اپنے مہرباں چلتن سے کلیاں چُننے آئی ہوں قطاروں میں شگفتہ تر تیری نظموں کے پودے ہیں   وہی پتھر ہیں جن پر کائی کے رنگوں کی مٹی ہے گُل ِ لالہ کے سینوں میں سیاہ داغوں کے ...

Read More »

پوشاک ۔۔۔ خلیل جبران

او یک جولاھگے آتکہ او گؤئشتئی:۔ مار  پوشا کہ  باروا  ڈس۔ او آنہیا جواب داثہ:۔ شمے پوشاک شمئے زیبائی ئے مزائیں بہرے لکینی، گڑہ دِہ کو جھائینا نہ لکینی۔ او حالانکہ شما پوشاکہ لافا رازداری ئے آزادی ءَ پولیں، شما اشی اندرا یک لغام او زنجیرے گندیں ارمان کہ شما  روش او گواثاگوں ملاقات کثیں،وثی پوشا کہ لافا کم او ...

Read More »

فکرِ علیل ۔۔۔ عبدالرحمن غور

(والدِ مرحوم کے مزار پر)   دُورآبادیِ گُنجاں کے چراغ جگمگاتے ہوئے تاروں کی طرح ہر جھلک میں وہ تصّور کے نقوش ترے مبہم سے اِشاروں کی طرح یوں تصّور میں آتے ہیں نظر جیسے رنگین مناظر کی بہار اِک طرف ذوقِ نظر کا یہ سماں اِک طرف تیرا شکستہ سا مزار جی میں آتا ہے لپٹ کر اس سے ...

Read More »

ہٹلر کے آخری لمحات ۔۔۔ عبدالرحمن غور

گوبلز اور ہملر سے: ۔   روس بڑھتا آرہا ہے کیا کروں جر منی پرچھا رہا ہے کیا کروں مطمئن ہوں یوں تو اب ”انجام“ ہے دل مگر گھبرا رہا ہے کیا کروں محبوبہ سے: ۔ مجھ کو معلوم ہے محبت میں کیا سے کیا جانے ہوگیا تھا میں کیسی غفلت ہوئی کہ وقت سحر پاؤں پھیلا کے سو گیا ...

Read More »

غزل ۔۔۔ اسامہ امیر

شاعر سے پوچھ جا کے جمالِ کمالِ دوست وہ ہی بتا سکے گا تجھے حسبِ حالِ دوست   پایانِ عمر میں بھی نہ خواہش وصال کی اندوختہ نہیں ہے فراقِ جمالِ دوست   یہ اور بات ہے کہ ملے بھی نہ بے دھڑک یہ اور بات ہے کہ گلے سے لگالے دوست   اک لمحہ بے دریغ سا آیا تھا ...

Read More »

خمار اُترے گا تو کھلے گا ۔۔۔ گلناز کوثر

ابھی تولہروں پہ بہتے جاؤ سلگتے رنگوں کے زاویوں سے بھنور اُٹھاؤ حیات کے دوسرے سرے سے بس ایک لمبا سا کش لگاؤ دھواں اُڑاؤ ابھی تو گہرے سنہرے پانی میں کھنکھناتی ہنسی ملاؤ نشہ بڑھاؤ دہکتے غنچوں پہ سبز جھیلوں پہ نظم لکھو ابھی بہاروں کے گیت گاؤ خمار اُترے گا تو بلا خیز ساعتوں کی خبر ملے گی ...

Read More »

سازِ سرمدی ۔۔۔ شفقت عاصمی

یہ جمہوریت اور یہ مسند تماشے مجھے لوٹنے کے بہانے ہیں سارے   یہ ایوانِ بالا، یہ منصف کدے سب مری ذلتوں کے ٹھکانے ہیں سارے   سفر برق و آتش، محلاتِ شاہی مرے واسطے تازیانے ہیں سارے   یہ پرچی کی طاقت، یہ رائے کا حق بھی نظامِ کُہن کے فسانے ہیں سارے   ”سفر کٹ رہا ہے، کوئی ...

Read More »

رات بھی ایک بلیک ہول ہے ۔۔۔ ڈاکٹر خالد سہیل

نہیں ایسی کوئی بھی رات جس کا کہیں سورج کوئی نہ منتظر ہو رات بھی ایک بلیک ہول ہے جس میں دن کی روشنی دفن ہوجاتی ہے اور اگلے دن اسی بلیک ہول کی کوکھ سے ایک نیا سورج جنم لیتا ہے صبح کا پیغام لاتا ہے دوپہر کو سورج اپنے عروج پر پہنچتا ہے پھر سورج ڈھلنے لگتا ہے ...

Read More »

قوم کی ایک خادمہ سے ۔۔۔ عبدالرحمن غور

وہ نغمہ اُلفت پھر اک بارسنا جاؤ لللہ سمجھ جاؤ خورشید چلی آؤ   ویران ہے دل میرا برباد تمنا ہوں جو کام نہ آئے کچھ وہ تلخی دنیا ہوں نے طالبِ عشرت ہوں نے ساغر ومیناہوں خودبھول گیا مجھ کو معلوم نہیں کیا ہوں   ایامِ گزشتہ کی کچھ بات بتاؤ لللہ سمجھ جاؤ خورشید چلی آؤ   آؤ ...

Read More »

مزدور ۔۔۔  شفقت عاصمی

یہ گھومتا پہیہ تم سے ہے یہ جیون سب کا تم سے ہے تم بیٹے ہو اس دھرتی کے سب مان ہمارا تم سے ہے قسمت میں تمہارے تاریکی یہ روشن دنیا تم سے ہے یہ درانتی شان تمہاری ہے اور سُرخ ستارا تم سے ہے قبضہ گیروں، شیطانوں کو اب موت کا دھڑکا تم سے ہے وہ غاصب، جھوٹے ...

Read More »