Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » قصہ (page 5)

قصہ

بے کردار کہانی۔۔۔۔ ایف ۔جے۔فیضی

وہ ایک کہانی لکھ رہا تھا۔ ایک ایک کرکے اپنے کرداروں کو تشکیل دے رہا تھا۔ اس کے ہاتھ بڑی تیزی اور پُھرتی سے کام کر رہے تھے۔ میں اُس کی طرف مسلسل دیکھے جا رہا تھا۔ میرے اکثر دوستوں نے مجھ سے کہا تھا ، ”فیضی، تم بھی کوئی کردار بن سکتے ہو۔ کبھی اُس کے پاس جانا دیکھنا ...

Read More »

مکڑی کا جالا۔۔۔۔عابدہ رحمان

میلی دیواریں ، اکھڑا پینٹ بتا رہاتھاکہ کافی عرصے سے ان دیواروں کو نہیں چھیڑا گیا ۔ہر کچھ دیر کے بعد چھت سے چونا گر پڑتا۔ دیوار پر ایک پرانا سا کیلنڈر آویزاں تھا جس کا رنگ وقت کی دھول سے پیلاہٹ لیے ہوئے تھا؛ بس اک ذرا سی ہو اچلی اور وہ منہ کے بل گر پڑے گا۔ ہوٹل ...

Read More »

دانہ جلا کر وقت دیکھتا ہوں ۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

چہرہ کھڑکی سے باہر۔ سبز جھنڈی ہوا میں پھڑپھڑاتی نظر آرہی ہے۔’’کُو…. چھک چھک ….کُو…کُو…‘‘ ٹرین آہستہ آہستہ پلیٹ فارم چھوڑتی ہے۔میں چہرہ اندر کرکے کھڑکی بند کردیتا ہوں۔سردی کا احساس۔ مفلرکھینچ کرکانوں پرباندھ دیتاہوں۔سگریٹ جلاکر دانہ کی روشنی میں کلائی میں بندھی گھڑی میں وقت دیکھتا ہوں۔ڈیڑھ بجے ہیں۔سوچتا ہوں کہ صبح نو بجے کے قریب جام شورو پہنچتے ...

Read More »

افسانچے ۔۔۔ الوک کمار

جھٹکا کیوں یار، تم تو چکن چلی کی ایک پلیٹ کی قیمت زیادہ بتارہے ہو۔ جبکہ بازووالا تمہاری قیمت سے آدھی قیمت پر دے رہاہے۔ صاحب وہ مرغوں کو حلال کرتاہے۔ جبکہ ہم جھٹکے والے ہیں۔ یارتب توتمہارا زیادہ پیسہ لینا جائز ہے۔ مستقبل اس جمہوری ملک میں بہت سی فوج تھی۔ ہندوؤں نے بھگوان کے نام سے بہت ساری ...

Read More »

ساتواں نمبر ۔۔۔ عابدہ رحمان

لکڑیاں آگ میں دہک رہی تھیں ۔شعلے اوپر تک اٹھ رہے تھے۔گلدستہ کے گال، آگ کی تپش سے انگارہ ہو رہے تھے۔ جانے وہ وہ کب سے رو رہی تھی۔ اور اماں صغراں اسے گاہے بگاہے ٹھیک ہونے کی تسلی دے رہی تھی۔ کچھ تو وہ پورے دن سے تھی کہ درد کی ٹیسیں اس کی جان کو آ جاتی ...

Read More »

درخت میرا دوست ہے ۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

صبح سویرے ہالار ابھی سکول جانے کی تیاری کررہا تھا کہ اس کے باپ نے گھر آکر یہ خبر سنائی کہ گھر کے آنگن میں کھڑے نیم کے گھنے اور بڑے پیڑکو کاٹنے کے لیے بڑھئی آچکے ہیں۔اس کے باپ نے تمام خواتین کو کمرے میں چلے جانے کا کہا۔اس وقت ہالار،جورات کو ساتویں جماعت کے پڑھے اسباق کو یادکرنے ...

Read More »

مذاق ۔۔۔ فرزانہ خدرزئی

ہلکے پھلکے انداز میں کھل کر اپنی رائے کا اظہار کیا جاتا جبر و استعداد،تنگ نظری ،بے حسی ۔۔۔۔جہالت اور دین سے دوری ہی تو تھی ۔بے تکلفی سے برتا جانے والا یہ لفظ اتنا زبان زد عام تھا کہ استعمال کرنے والے اس کے ہنر سے بخوبی واقف تھے کہ کس مقام پر موزوں رہے گا۔۔۔ وفات کی خبر ...

Read More »

ازلی سچائی ۔۔۔ منظورکوہیار/ننگرچنا

۔۲۳ ذی القعد ۳۰۹ہجری کی رات، بغداد کے مرکزی قید خانہ’’ بابِ خراسان‘‘ کی کال کوٹھڑی کا فولادی دروازہ ایک طویل چی چُوں کی آواز کے ساتھ کھلتا ہے۔ ایک جہاندیدہ اور پاکیزہ دل شخص بڑی شان اور سنجیدگی سے اندر داخل ہوتا ہے۔ کال کوٹھڑی کا داروغہ ’’النشار‘‘ دروازہ بند کرتا، چابی گھماکراس کے بندہونے کا اطمینان کرتا اور ...

Read More »

عکس ۔۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

’’ سنو!۔‘‘ ’’ جی!۔‘‘ ’’ تم نے مجھ میں ایسا کیا دیکھا تھا کہ ابا کو میرے عوض ایک لاکھ رُپے دیے تھے ؟‘‘ ’’ ایک تو تم خاندانی تھیں،جس خاندان نے سات پشتوں سے اپنے ناک پر مکھی بیٹھنے نہیں دی ہے۔ اور دوسری بات یہ کہ تم بہت خوب صورت تھیں۔‘‘ ’’ تم نا جتنی میری تعریف کیا ...

Read More »

ماہیِ بے آب! ۔۔۔۔عابدہ رحمان

سورج ڈوب رہا تھا ۔ اس کی نارنجی شعاعیں مغربی افق پر پھیل گئی تھیں ۔ کچھ ہی فاصلے پرمچھیروں کی چھوٹی چھوٹی کشتیاں بے مہار ڈولتی چلی جا رہی تھیں۔ دور سمندر میں ٹرالر بھیانک آواز کے ساتھ رواں دواں تھے۔ امیر بخش جانے کب سے سُتا ہوا چہرہ لیے ساحل پرایک بڑے پتھر پر بیٹھا نہ جانے کن ...

Read More »