Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » قصہ (page 5)

قصہ

درخت میرا دوست ہے ۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

صبح سویرے ہالار ابھی سکول جانے کی تیاری کررہا تھا کہ اس کے باپ نے گھر آکر یہ خبر سنائی کہ گھر کے آنگن میں کھڑے نیم کے گھنے اور بڑے پیڑکو کاٹنے کے لیے بڑھئی آچکے ہیں۔اس کے باپ نے تمام خواتین کو کمرے میں چلے جانے کا کہا۔اس وقت ہالار،جورات کو ساتویں جماعت کے پڑھے اسباق کو یادکرنے ...

Read More »

مذاق ۔۔۔ فرزانہ خدرزئی

ہلکے پھلکے انداز میں کھل کر اپنی رائے کا اظہار کیا جاتا جبر و استعداد،تنگ نظری ،بے حسی ۔۔۔۔جہالت اور دین سے دوری ہی تو تھی ۔بے تکلفی سے برتا جانے والا یہ لفظ اتنا زبان زد عام تھا کہ استعمال کرنے والے اس کے ہنر سے بخوبی واقف تھے کہ کس مقام پر موزوں رہے گا۔۔۔ وفات کی خبر ...

Read More »

ازلی سچائی ۔۔۔ منظورکوہیار/ننگرچنا

۔۲۳ ذی القعد ۳۰۹ہجری کی رات، بغداد کے مرکزی قید خانہ’’ بابِ خراسان‘‘ کی کال کوٹھڑی کا فولادی دروازہ ایک طویل چی چُوں کی آواز کے ساتھ کھلتا ہے۔ ایک جہاندیدہ اور پاکیزہ دل شخص بڑی شان اور سنجیدگی سے اندر داخل ہوتا ہے۔ کال کوٹھڑی کا داروغہ ’’النشار‘‘ دروازہ بند کرتا، چابی گھماکراس کے بندہونے کا اطمینان کرتا اور ...

Read More »

عکس ۔۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

’’ سنو!۔‘‘ ’’ جی!۔‘‘ ’’ تم نے مجھ میں ایسا کیا دیکھا تھا کہ ابا کو میرے عوض ایک لاکھ رُپے دیے تھے ؟‘‘ ’’ ایک تو تم خاندانی تھیں،جس خاندان نے سات پشتوں سے اپنے ناک پر مکھی بیٹھنے نہیں دی ہے۔ اور دوسری بات یہ کہ تم بہت خوب صورت تھیں۔‘‘ ’’ تم نا جتنی میری تعریف کیا ...

Read More »

ماہیِ بے آب! ۔۔۔۔عابدہ رحمان

سورج ڈوب رہا تھا ۔ اس کی نارنجی شعاعیں مغربی افق پر پھیل گئی تھیں ۔ کچھ ہی فاصلے پرمچھیروں کی چھوٹی چھوٹی کشتیاں بے مہار ڈولتی چلی جا رہی تھیں۔ دور سمندر میں ٹرالر بھیانک آواز کے ساتھ رواں دواں تھے۔ امیر بخش جانے کب سے سُتا ہوا چہرہ لیے ساحل پرایک بڑے پتھر پر بیٹھا نہ جانے کن ...

Read More »

ساتھ دیتے ہیں کچھ اس طرح ۔۔۔ علی بابا / ننگرچنا

’’پروفیسر ! پلیز، میری بہن کی زندگی کا سوال ہے ۔ اس کا میرے سوا اور کوئی نہیں ۔ اگراسے کچھ ہوگیا تو میں پاگل ہوجاؤں گا !‘‘ سراج نے روتے ہوئے کہا۔ پورے دوسو رُپوں کا سوال تھا، اس لیے پروفیسر ایاز گہری سوچ میں پڑگیا۔ بالآخر اس نے اپنا جھکا ہوا سر اٹھایا اور کہا،’’ مجھے تمہارے ساتھ ...

Read More »

تُوتُو او ماتو ۔۔۔ گوہر ملک

اَستت، اَستت، یک مَردے ۔ایشی نام اَت شاھو۔ دوچک اتنتے۔ یک جنکے چادر ئے لمبا بست کہ نام ئے شانتل اَت او بچکے کہ نام ئے تُو تُو اَت۔ شانتل او تو تو کسان اَتنت کہ ماسش مُرت او شاھوآ دِگہ جنے گپت ۔تُو تُو ماتو آ ھامگیں نان ئے او تاسے آپ پتک او شانتلا دات کہ برو تُو ...

Read More »

چھوٹی سی کہانی ۔۔۔ آمنہ ابڑو

جْوس کے اسٹال پر پہنچ کر کافی دیر تک وہ بڑی بڑی کالی کار پارکنگ ڈھونڈتی رہی۔ بھیِڑ اتنی تھی کہ لگا جیسے اْس گاڑی کو پارکنگ نہیں ملے گی اور اسے واپس جانا پڑے گا۔ لیکن معجزاتی طور پر سامنے پارکنگ لاج میں سے ایک گاڑی باہر نکلتے ہوئے نظر آئی۔ اور اس بڑی کالی گاڑی کو رْکنے کی ...

Read More »

نیا سال، پرانا کال ۔۔۔ علی بابا / ننگرچنا

کہتے ہیں کہ آج سے سینکڑوں برس پہلے اس دھرتی پر سونا وطن کے نا م سے ایک بہت ہی خوشحال اورشادوآباد ملک ہوا کرتا تھا۔ کئی ندیاں اسے سیراب کیا کرتیں، جن میں سب سے بڑی ندی کا نام سوشوما تھا۔ یہ ندی سال کے بارہ ماہ اونچے پہاڑوں سے دھاڑتی گرجتی بہتی رہتی ۔ پورے ملک کی زراعت ...

Read More »

بلا عنوان ۔۔۔ آمنہ ابڑو

“مما، لگتا ہے آج بھی ماسی نہیں آئے گی۔۔۔۔” فضا، میری بڑی بیٹی سخت بیزاری کے عالم میں بڑبڑاتی میرے کمرے میں داخل ہوئی، اس کے ہاتھوں میں پکڑے ٹرے میں قہوے کا کپ دیکھ کر میں پیار سے مسکرا دی۔ “تھینک یو فجنی”۔۔۔۔ “مما” قہوے کے گرم کپ کو مجھ سے دور رکھنے کی کوشش کرتے کرتے اْس نے ...

Read More »