Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » قصہ

قصہ

پہلا آدمی ۔۔۔ پروفیسر ڈاکٹر مزمل حسین 

پروفیسر وقار تے سمیرا دی عمراں وِچ وَڈا فرق ہئی۔سمیرا یاھرویں جماعت اِچ پڑھدی ہا ،جڈاں جو پروفیسر وقار ڈھلدی عمراں دا بندہ ہئی اُوندی جماعت ءِ چ اردو پڑھاونٹر آیا۔پروفیسر وقار ہک اعلی استاد ، نقاد، شاعر تے دانشور تے طور تے یکے وَسیب ائچ اپنڑی سنجاننڑرکھینداہئی، وَلا اُوندے لیکچر ڈیونٹر دا اَندازوِی طلبا ء کو ں اُوندا گرویدا ...

Read More »

دست یکے منی ۔۔۔ عبدالوحید عاقب

من یک دَپترے آ صاحب ئے مُنشی اِتنت۔ مدام ئے وڑاھمک بیگاہ وتئی ڈیوٹی دات۔ کم کم آ مردم آھگا اِت اَنت برئے چار، برئے دہ مردم بیگاہ آ روچے اَتک۔ اسلام و علیکم!۔ بیا واجہ ! اِد ا نندتئی طبعیت او مردم او عالم چون اَنت۔ درست جوڈ او وش آں۔ صاحبا من گشت ، مُنشی ! واجہا آپے ...

Read More »

 اکٹوپک کاجن ۔۔۔۔ فرزانہ خدرزئی

دو دن سے اس کے پیٹ میں شدید درد اٹھ رہا تھا۔درد کی شدید ٹیس پیٹ میں اٹھتی اور پھر آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا جاتا۔شادی کو دو ہی سال ہوئے تھے ۔حمیداللہ کا رویہ بہت اچھا تھا ۔البتہ ساس ساری کسر پوری کردیتی ۔ایسے میں حمیداللہ خاموش تماشائی کا کردار بن کر بس تماشا ہی دیکھا کرتا۔ فہد ابھی ...

Read More »

اور شہرہی الٹا ہوگیا۔۔۔۔۔۔ منظورکوہ یار/ ننگرچنا

صبح ہوچکی تھی ۔سرخ سورج آہستہ آہستہ مشرق سے ظاہر ہورہا تھا۔پہاڑیوں پرٹھنڈی بادِسحرکے جھونکے رواں تھے۔چاروں طرف مختلف پرندے چہچہارہے تھے۔ قلندرشہباز چہارستونی چبوترے پراپنے تمام تر جاہ وجلال کے ساتھ کھڑاتھا۔نیچے کھڑے تھے دورو نزدیک کے سب طالبانِ معرفت اور مریدین،جو اُس کی لب کشائی کے منتظر تھے۔ قلندر شہباز،جس کی گردن گلے میں پڑے گلوبند کے سبب ...

Read More »

سراب۔۔۔۔جلال فراق

گِدان کے سامنے سے ایک بگولہ چکرا کر تیزی سے گزرگیا۔اِس چلچلاتی دھوپ اور جلسا دینے والی گرمی میں کسی انسان کا باہر نکلنا تو محال ، بھیڑ بکریاں بھی کھجور کے اُن چار درختوں کے سائے تلے آنکھیں نیم بند کر کے جگالی کر رہی تھیں جو گاﺅں کے واحد اور پرانے کنویں کے ارد گرد اپنی پتلی مگر ...

Read More »

گوادر۔ٹائر کی آگ۔۔۔۔جاوید حیات

1 ناشتے سے زیادہ مجھے دادی کے دیئے ہوئے وہ دوروپے زیادہ پیارے تھے، جو وہ ہر روز مجھے سکول خرچ کے طور پر دیتی تھی۔ میں جوتوں کے تسمے باندھے بغیر سکول کا ڈانگری بیگ اُٹھائے گھر سے نکل پڑا۔ بیری کے درخت والی گلی سے نکلتے ہی میں اُسی راستے پہ چل پڑا جہاں سائیکلوں کے پنکچر کی ...

Read More »

دے نہ دے لٗس۔۔۔۔گارسیامارکیز۔غمخوار حیات

دوشمبہ نادے اینو پھر آن بید ٹک تس ….سُہب وختی تغ آن بش مننگ نا عادتی ‘ بے سَندآ دنتان ساز ‘ایسکو‘ شش بجہ غا تینا کلینک ئے مَلا ونقلی آ دنتان تے شیشہ نا شوکیس ٹی سوارنگ ئے شروع کرے ۔ اوکان گڈ او دنتان کشوکا اوازار تے ہم شوکیس نا ارٹمی خانہ ٹے تخسہ کرے ۔ ایسکواسہ باریتہ‘ ...

Read More »

بے کردار کہانی۔۔۔۔ ایف ۔جے۔فیضی

وہ ایک کہانی لکھ رہا تھا۔ ایک ایک کرکے اپنے کرداروں کو تشکیل دے رہا تھا۔ اس کے ہاتھ بڑی تیزی اور پُھرتی سے کام کر رہے تھے۔ میں اُس کی طرف مسلسل دیکھے جا رہا تھا۔ میرے اکثر دوستوں نے مجھ سے کہا تھا ، ”فیضی، تم بھی کوئی کردار بن سکتے ہو۔ کبھی اُس کے پاس جانا دیکھنا ...

Read More »

مکڑی کا جالا۔۔۔۔عابدہ رحمان

میلی دیواریں ، اکھڑا پینٹ بتا رہاتھاکہ کافی عرصے سے ان دیواروں کو نہیں چھیڑا گیا ۔ہر کچھ دیر کے بعد چھت سے چونا گر پڑتا۔ دیوار پر ایک پرانا سا کیلنڈر آویزاں تھا جس کا رنگ وقت کی دھول سے پیلاہٹ لیے ہوئے تھا؛ بس اک ذرا سی ہو اچلی اور وہ منہ کے بل گر پڑے گا۔ ہوٹل ...

Read More »

دانہ جلا کر وقت دیکھتا ہوں ۔۔۔ محمد علی پٹھانز/ ننگر چنا

چہرہ کھڑکی سے باہر۔ سبز جھنڈی ہوا میں پھڑپھڑاتی نظر آرہی ہے۔’’کُو…. چھک چھک ….کُو…کُو…‘‘ ٹرین آہستہ آہستہ پلیٹ فارم چھوڑتی ہے۔میں چہرہ اندر کرکے کھڑکی بند کردیتا ہوں۔سردی کا احساس۔ مفلرکھینچ کرکانوں پرباندھ دیتاہوں۔سگریٹ جلاکر دانہ کی روشنی میں کلائی میں بندھی گھڑی میں وقت دیکھتا ہوں۔ڈیڑھ بجے ہیں۔سوچتا ہوں کہ صبح نو بجے کے قریب جام شورو پہنچتے ...

Read More »