Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » Javed Iqbal (page 30)

Javed Iqbal

غزل ۔۔۔۔ بدر سیماب

اس دل کی وحشتوں کا زمانہ تمام شد اے یاد یار ! تیرا فسانہ تمام شد درپیش اب مجھے ہے مری ذات کا سفر اپنا ہو یا ہو کوئی بیگانہ تمام شد اشکوں کا سیل خواب ہی سارے بہا گیا آنکھوں میں حسرتوں کا ٹھکانہ تمام شد میرے ہیں کام سارے ادھورے پڑے ہوئے اب دوستوں کا بوجھ اٹھانا تمام ...

Read More »

قصہانی آسمان ۔۔۔۔ شہاب اکرم

بیا ، بنند ________ دم بکن مناں!!! تو اِش کتگ _________ قصہانی آسمان صورتانی ماہیکان بیا کہ گرنچے ‘ قصہانی بوجگئے ودار ا پیر کپت بیا، کرنے ئے مسافتانی بیمّ گوں منا “منی تہا شیرکنیں تلاوتانی ھاراں مَلّ اِتگ چَراگ و ملگزاراں شاہ جتگ کوہ و کوچگانی زگریں جمبراں بگر داں زپتیں درچک ئے نیبگاں من یک یکا ششتگ اَنت ...

Read More »

افتخار عارف

منکر بھی نہ تھے حامء غالب بھی نہیں تھے ہم اہلِ تذبذب کسی جانب بھی نہیں تھے مٹی کی محبت میں ہم آشفتہ سروں نے وہ قرض اْتارے ھیں جو واجب بھی نہیں تھے

Read More »

افتخار عارف

اب بھی توہینِ اطاعت ، نہیں ہوگی ہم سے دل نہیں ہوگا ، تو بیعت نہیں ہوگی ہم سے روز اِک تازہ قصیدہ ، نئی تشبیب کے ساتھ رزق برحق ہے ، یہ خدمت نہیں ہوگی ہم سے دل کے معبود جبینوں کے خدائی سے الگ ایسے عالم میں ، عبادت نہیں ہوگی ہم سے اْجرت عشق وفا ہے تو ...

Read More »

غزل ۔۔۔۔ افضل مرادؔ 

وحشتوں عذابوں سے یوں نکال جاتا ہے روز میری آنکھوں میں خواب ڈال جاتا ہے شام کے اُترتے ہی میں دیئے جلاتا ہوں وہ دیئے بجھاتا ہے مجھ کو ٹال جاتا ہے میں کچھ جواز لاتا ہوں رمز کچھ بناتا ہوں دل کے ہجر سے اکثر اک وصال جاتا ہے جیسے کوئی جادو ہے یا تمہاری خوشبو ہے جس سے ...

Read More »

نہیں سمجھا ۔۔۔۔ سلیم شہزاد

لہوشمشیر پہ چمکا ، نہیں چمکا وہ میرا مدعا سُن کر ذرا سا مسکرایا اور فرمایا، نہیں سمجھا سو میں نے بھی غنیمت جان کے سارے پھپولے داغ دل کے جالے ، والے اُس سے کہہ ڈالے یہ ذائقہ کسیلا ہے زباں پر آگئی نا تھر تھراہٹ طبیعت میں حزیمت بھی ہوئی محسوس پھر آخر پہ طے پایا اگرچہ رات ...

Read More »

سرمایہ دار سے ۔۔۔۔ عبدالرحمن غور

نالہِ دلفگار کا عالم جیسے ہنگامہ زار کا عالم میں نے دیکھا نہیں کہیں ایسا ترے اِس اقتدار کا عالم مرے کارِ دراز کی دنیا ترے لیل و نہار کا عالم تری بد کاریوں کا صدقہ ہے عرصہِ کا ر زار کا عالم مری مجبوریوں کا ہنگامہ یہ ترے اختیار کا عالم مری بربادیاں ترے ہاتھوں دیکھ یہ خار زار ...

Read More »

عیسی بلوچ

دریا ہو کہ صحرا کوئی بن ہو کہ نگر میں ان دیکھا کوئی رنگ مسلسل ہے سفر میں ہر رنگ میں ہوتا ہے نئے رنگ کا پرتو ہر چند کہ بے رنگ ہیں سب رنگ نظر میں اک رنگ ہے جس رنگ کا چرچا نہیں ہوتا حلقہ کیے بیٹھا ہے کہیں دیدہِ تر میں بجھتے ہوئے رنگوں سے حزیں آنکھ ...

Read More »

کار پوریٹ میڈیا ۔۔۔۔ ڈاکٹر منیر رئیسانڑیں

تم کبھی بے بسی سے روئے ہو؟ تم نے برسات کی حسیں رُت میں چھت کے گرنے کا خوف جھیلا ہے ؟ کیا کبھی دھوپ میں جھلسی ہے تمہاری رنگت سخت سردی میں وہ لمحہ کبھی گزرا تم پر؟ انگلیاں لگتا ہے جب ہاتھ سے جھڑ جائیں گی چکھ کے دیکھا کبھی کیا ہوتا ہے گدلا پانی؟ رات کاٹی ہے ...

Read More »