Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » Javed Iqbal

Javed Iqbal

The Axiom Of Soil— Nosheen Qambrani

یہ بہشت ِ اجل محوِ خوابِ رواں عمر کی پیاس کا تاس (1) تھامے ہوئے میں بھی آئی یہاں غرقِ کاریزِ جاں   میں نے دیکھا درختوں پہ سائے کھلے اور سایوں میں روشن ہوئے راستے اور رستوں پہ چلنے لگیں عورتیں جن کے ہاتھوں میں تھیں وہ جڑی بوٹیاں جو زمانے کے زخموں کا مرہم بنیں   میں نے ...

Read More »

دھوپ سے مکالمہ ۔۔۔  کشور ناہید

میں نے کئی دفعہ دھوپ کو پکڑنے کی کوشش کی وہ کبھی مرے آگے،کبھی پیچھے تھی وہ ساتھ ساتھ چلنے کا حوصلہ کرتی تو میں جھلس جاتی بلبلا کرسا یہ تلاش کرتی وہ روٹھ کر افق کی جانب جاتے ہوئے پیغام دیتی بس دیکھ لیا تم نے اپنا حوصلہ میں تو تم لوگوں کے عیب وہنر دیکھ کر، جلتی کڑھتی، ...

Read More »

آخری سدھارتھ ۔۔۔  ارشد معراج

(پروفیسر یوسف حسن کے لیے)   مرا یوسف حسن الفاظ سے غزلیں بناتا ہے بدلنے کی نئی راہیں سُجھاتا اور بستر کے تلے سب پھینک دیتا ہے کہیں بیٹھا ہوا سگریٹ کے لمبے کش لگا لیتا ہے ٹھنڈی چائے سے حلقوم کڑوا کررہا ہے   رضائی اوڑھ کر نیندوں میں جاتا ہڑبڑا کر جاگ اٹھتا دیکھتا ہے کہ   کتابیں ...

Read More »

سمو ۔۔۔ زوراخ بزدار

سمو تئی گوما منتوں بازیں. توکلی داثئے مست نامانی مں دلے بنداں بیڑثؤ داشتہ رغ رغا حونی جزغیں دانی سمو تئی ناما تاج و سر قرباں سمو تئی ناما بام و در قرباں سمو تئی ناما و زر قرباں یکبہئی بیہو ماڑ سر قرباں ساونڑی مستیں کھوکراں گونئے موسمی کونجاں ولہراں گونئے یاکہ کوگانی کرامغاں گونئے یا تہ آں برانی ...

Read More »

شکیب

خوشا آنا نکہ باعزت زگیتی بساطِ خویش بر چید ندو رفتند زکالائی این آشفتہ بازار محبت را پسند ید ند ورفتند خوشا آنانکہ دراین باغ چوں گل صباحے چند خندید ندو رفتند خوشا آنا نکہ در میزانِ وجدان حسابِ خویش سنجید ند ورفتند نگر دید ند ہر گز گردِ باطل حقیقت راپسندید ندو رفتند خوشا آناناکہ براین صفحہِ خاک چو ...

Read More »

بچ گیا میں!!! ۔۔۔   سید تحسین گیلانی

دیکھتا ہوں کہ زمیں کالی دھواں تھی ہر طرف تھیں لہلہاتی کالی فصلیں جن کے شاخوں کی جگہ بازو تھے نکلے اور ہر پتے سے آنکھیں گھورتی تھیں گہری کالی گھورتی سفاک آنکھیں کچھ پرندے ایک برگد پر تھے بیٹھے اور وہ اْس پیڑ پر لٹکے ہوئے بے جسم چہرہ نوچ کھانے میں مگن تھے اور ہر لمحہ وہاں اس ...

Read More »

رخصت ۔۔۔ گلناز کوثر

صبح کی دستک وال کلاک نے آنکھیں ملتے ملتے سنی تھی کمرے کے ساکت سینے میں آخری منظر قطرہ قطرہ پگھل رہا تھا جلتی ہوئی سانسوں کے سائے دیواروں سے لپٹے ہوئے تھے میز کی چکنی سطح پر رکھی دو آوازیں پگھل رہی تھیں دو خوابوں کی گیلی تلچھٹ خالی گلاس میں جمی ہوئی تھی وقت کی گٹھڑی سے کھسکائے ...

Read More »

سمندر   مرا   ہم راز ۔۔۔  فاطمہ حسن

ہرے سمندر                 تیرے اندر اتھاہ ہے کتنی؟ ارے او ناری                 تیرے اندر اتھاہ ہے جتنی ہرے سمندر                 تیرا چوڑا پاٹ ہے کتنا؟ ارے او ناری                 تیرے دن اور رات کے جتنا ہرے سمندر                 تیری لہریں کتنی وحشی، کتنی اونچی ارے او ناری                 تیری وحشت سے کچھ کم ہی ہرے سمندر                 پورے چاند سے ...

Read More »

تم نے مجھ سے وعدہ کیا تھا ۔۔۔ سید خورشید افروز

تم نے مجھ سے وعدہ کیا تھا قسمیں کھائی تھیں ایک برس اور بیت گیا ہے اس ساحل پر اس پھیلی چاندنی میں ان امڈے طوفانوں کے سامنے ان مچلی لہروں کے روبرو ہم پانی میں کودے تھے ہم لہروں سے کھیلے تھے قہقے لگائے تھے ہم نے وعدے کیے تھے ساتھ جئیں گے ساتھ مریں گے ساتھ رہیں گے ...

Read More »

غزل ۔۔۔ فرزانہ رفیق

مبارک مرے نے داعید نادے خدا نے کنا زو گِدانا ہتے   ارا تُم ولدا ہمے نن بروئے کنا لاڈی کنتون مجلس کروئے   کنا دااُست ٹی ارمانک ہزارو ارا دے آاو کنتون عید ئے گِدادو   ہرکس تینا تیکے ٹیکی ہتیکک اِی دا ہُریوہ چیوہ او بریکک   اللہ خنیف زو عید آ نانوک ئے فرزانہ اوڑکن بے حد ...

Read More »