Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » Javed Iqbal

Javed Iqbal

کھدائی میں نکلی ایک سِل پر ملی عبارت ۔۔۔ نسرین انجم بھٹی

کھدائی میں جو شہر نکلا تھا اس میں سب ڈھانچے عورتوں کے تھے زندگی کی مشقتوں میں مصروف پھول کاڑھنے، گندم پیسنے او رکوڑے کھانے تک کی حنوط شکلیں جوں کی توں سب موجود تھیں یوں لگتا تھا زلزلے کے دوران اس شہر کے مرد کہیں بھاگ گئے تھے کیونکہ نیلے پر کھڑی ایک صابر عورت جس نے عورت کا ...

Read More »

ترا  جیغا گون انت ۔۔۔  اللہ بشک بُزدار

بیا مئے چمانی سرا نند گہیں  گیتا ،قرآن بے  تو  دیوان  ناں  سرجم بی ناں عشق ئے ایمان وشیں نا زینکاں ناں مہرانی سلامے گوں بی جوریں دژناماں ناں کستانی کلامے گوں بی تو  نیائے؟؟ زہیں مونجھانی حساباں کئے کنت بام  نوذانی، درینانی مجالس چوں بنت عمر  گوازیں تئیں گوں سنگانی گلا و گالا۔ دیغرے زانت ئیں۔ دل ئے ھندا  ...

Read More »

میرساگر

جنتراں رِتک و رِش اِنت قصہ اِش اِنت شد پہ درداں مانش انت قصہ اِش اِنت   بار ہُژ بْرّاَنت مہ لڈّ اِت لیڑہاں گشت من پیسر’ اِش اِنت’قصہ اِش اِنت   اَژ وتا چو سر گوئزگ لئیبے نہ اِنت گوں وتا اِلّ ء وگِش اِنت قصہ اِش اِنت   عالم ئے اسرار سر تا سر تئی یک نگاہ ِ ...

Read More »

دل ۔۔۔  نسرین انجم بھٹی

ترے نور مکمل کے لیے ہر دو جہاں کھونے دیا جائے مورخ داغ دامن کا مجھے دھونے دیا جائے نہیں معلوم اس میں مصلحت کیا تھی خداوندا جو ہوتا ہے اسے تو آج پھر ہونے دیا جائے؟ غبار غم سے پتھرائی ہوئی آنکھوں کو آپھر سے شکست غم کی خاطر سے بہت رونا دیا جائے مرے خوابوں کی تعبیریں اسی ...

Read More »

غزل ۔۔۔  اظہر کلیانی

ٹوٹی لکڑی سْوکھی لکڑی چولھے میں کیا جلتی اور سانس سمے کی آنچ میں جل کرکتنا رنگ بدلتی اور تو نے دل میں قْفل  لگائے قْفل  بھی بھاری پتھر سے تیری آنکھ کی راہداری میں کتنی دیر وہ  چلتی اور اپنے آپ  کا  سارا  ملبہ پھینک  دیا  کیوں حاشیے پر تم جو یار سنبھلتے اک دن وہ بھی یار سنبھلتی ...

Read More »

غزل ۔۔۔  بلال اسود

مے کے سرد سرائے میں دھوپ ملتی ہے کسی بزرگ کے سائے میں دھوپ ملتی ہے   نہ چھت، نہ چاردیواری کا خرچ آتا ہے بہت ہی تھوڑے کرائے میں دھوپ ملتی ہے   مرا قصور نہیں ہے مرا نصیب ہے یہ مجھے ہمیشہ پرائے میں دھوپ ملتی ہے   میں نیکیوں کی ندی  پھینکتا ہوں دریا میں سمندروں سے ...

Read More »

غزل ۔۔۔  یونس نصیر

مکتبا  عشق ئے نگاہ ئے شرکنی پلگار اتیں جور ئے تہلی سگّتیں چو اْشترا دور چار اتیں   ھاجتاں پہ شگر ئے جاہا  ھچ بشارتے نہ دات ما پما یکیں انارا  سد نپر بیمار اتیں مئے ھمے کسّہ گوں عشقا بستگیں رَد گوشتگ اش نشتگیں تئی راھسرا او ما وتی راھچار اتیں   ماوتی تْنّ ئے تبکاں سر کپگ پتو ...

Read More »

غزل ۔۔۔ راشدہ نوید

در و دیوار سے جالا نہیں جاتا، اماّں مجھ سے گھر بار سنبھالا نہیں جاتا اماّں فکر عقبیٰ ہو، کہ دْنیا ہو، کہ ہو فکرِ فراق روگ کیسا بھی ہو پالا نہیں جاتا، اماّں یہ جو کچھ اشک مری آنکھوں میں در آئے ہیں ان کو الفاظ میں ڈھالا نہیں جاتا، اماّں پاؤں سے ہٹ کے تہہِ دِل میں اْبھر ...

Read More »

ایک نیا کاروبار ۔۔۔ صنوبر سبا

سورج کو ہتھیلی سے چھپانے والے ہم لوگ جشن منا رہے ہیں نونہالان قوم نے نوے فیصد نناوے فیصد اور سو فیصد نمبر حاصل کئے ہیں مبارکبادیاں،’مٹھاہیاں یہ سب ہماری محنت کا ثمر اور والدین کی دعاوں کا نتیجہ ہے مگر گزیدگان نظام زر اور واقفان حال لرزہ براندام ہیں تعلیمی اور سماجی انحطاط سے انکا دل لرز رہا ہے ...

Read More »

صفر۔۔۔ تمثیل حفصہ

زندگی کے پنے پر خواب بھی نہ لکھوں کیا؟ روشنی کے منظر کو آنکھ موند کر دیکھوں، سوچ بھی خریدوں تو مفلسی کے دامن سے گرہیں جوڑ کر رکھ دوں، چیخ بھی دبا لوں کیا؟ چپ سے بیٹھ کر تنہا راز بھی چھپا لوں کیا؟ کس طرح سے آئینہ دیکھتا ہے تو مجھ کو عیب بھی دکھا دوں کیا؟ دیکھ ...

Read More »