شاعری

رقصِ بِسمِل

چکور چاند کی اُور پرواز کرتا ہے زخمی سینہ لیئے زمین پر آن گرتا ہے بدن میں کئی ناگ ایک ساتھ پُھنکارتے ہیں اور من کا کُُتّا سرد اندھیری رات میں روتا ہی رہتا ہے زندگی کا سمندر موتیوں سے خالی ہے محبت ریت کا اِک ایسا ذرّہ جو آنکھ ...

مزید پڑھیں »

بشارت

  دن گزارا ہے سزا کی صورت رات آئی شب یلدا کی طرح صحن کی آگ میں جلتے ہوئے شعلوں کی تپش منجمد ہوتے ہوئے خون میں درآئی ہے یادیںیخ بستہ ہواؤں کی طرح آتی ہیں آتش رفتہ و آیندہ میں رخشاں چہرے برف پاروں کی طرح دل کے آئینے ...

مزید پڑھیں »

..

  چم ہر وختا پہ دیذارا شذیّاں جانی من وثی زیندا پہ تئی ناما کثیّاں جانی ہچو ناراض مہ بی ساہا بکو گؤر بیاراں تو نہ زانئے کہ من اولا شہ جثیّاں جانی آہ نیم راہائیں، درگاہا دِہ سر بی آخر روشئے تو حقاں دیئے پیشی پذیّاں جانی تو مناں ...

مزید پڑھیں »

تُڑس

  دیغریں کوہئے سرا نشتہ وداریگاں کہ گِنداں رولہے ساھے ، دمے کشاں، نواں گامیگ باں (بالاں بدلی زُڑتگیں پندھانی پیچگ چون بی) مئیں ومنی بام ئے نیاما لرزغیں ڈئینڑیں شفے مں تُڑسغاں ڈُنگے براثانی ھمیذا گوں کفی گُڈیث پاذاں ٹیلغاں کشیث بام ئے وزّتاں بے نور کنت شف تُڑسغیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

  کون سا آپ کے گھر جائیں گے؟ راہ ہے ہم بھی گزر جائیں گے! اشک ہوں، مے کہ لہو، جام اپنے شام آئے گی تو بھر جائیں گے! اور جانا ہے کہاں اے جاناں تم جدھر جاؤ اْدھر جائیں گے!۔ مَل کے چہرے پہ لہو کی سرخی اْن کے ...

مزید پڑھیں »

ہماں روشا۔۔۔

  ھماں روشا کہ میرا بذ بُڑتہ شہیں مُریذئے راستیں ٹونکاں مناں گیریں دُراھیں شفچراں مُچی کثہ گوئشتہ ما دانا عاقلیں ، بینا مئے فہم ئے لوغ دیما زیند موت ئے راز سجدہ کنت مئے شاندا آزماں چری زمیں لُڈی زرانی چول ھامی بنت نفا نُکسان ئے لیکوّ مئے درا ...

مزید پڑھیں »

سرِ گنگ زارِ ہوس

  دل کہ پندارِ عرضِ طلب کے عوض، رہنِ آزار تھا ، تم نے پوچھا؟ جب سرِگنگ زارِ ہوس، حرفِ جاں بار تھا ، تم کہاں تھے؟ سنگ و آہن کے آشوب میں، ہم سپرزادگاں خودپنہ تھے تو تڑپانہ کوئی صدا آشنا اپنے احساس کے کوہ قلعوں میں عمر آزما ...

مزید پڑھیں »

شئیر

کو٘ہانی سرئے چِرکی٘ں راہ ڈی٘رانی گوئرئے لَہڑئے چَر شی٘فانی تہئے چُر و چانک زرخی٘زیں ڈغار گوئرٹی٘ڑھ ئے سیاہ آف وَہندائیں جو٘آنی ہینژاف دیر سری٘ں کھؤرانی آفبندی٘ں جُڑئے جُڑساھگ گرند و چیلک و شَنز و گوار ھؤراں شہ پھذی پُور و ہار پُرّی٘ں کِیلغ و سی٘ریں بند زررنگی٘ں کِشار گندیم ئے ...

مزید پڑھیں »

وے کیہڑا ایں

"وے کیہڑا ایں” — نسرین انجم بھٹی— وے کیہڑا ایں میرِیاں آندراں نال منحبی اُندا میرا دِل داون آلے پاسے رکھیں تے اکھاں سرہانے بنّے میں سرہانے تے پُھل کڑھنے نیں دھرتی دی دھون نیویں ہووے تے اوہدے تے اسمان نہیں چکا دَئیدا بابا کوئی کِیڑا کڈھ کُرونڈیا ہودے تاں ...

مزید پڑھیں »

مست تئوکلی

  تئوکلی مست !۔ سمو کی خواب آلود آنکھوں سے گری تھی جو تجلی تیرے سینے پر اگر وہ طور پر گرتی تو جل کر راکھ ہوجاتا وہ کیسا حسن آفاقی تھا جس تمثیل کی خاطر نجانے کیسے کیسے حسنِ فطرت کے فسوں انگیز نقشے کھینچتا تُو تری رمز آشنا ...

مزید پڑھیں »