شاعری

غزل

سراپا خواب ہوں اور جاگتا ہوں یہ کس تعبیر میں الجھا ہوا ہوں نہیں پہچان یوں آسان میری شعاعِ مُرتعش کا آئینہ ہوں خموشی کو مری آسان مت لے کہ میں جب بولتا ہوں۔ بولتا ہوں ہوئے متروک سب الفاظ جن کے انہی بھاشاؤں میں لکھا گیا ہوں اذل سے ...

مزید پڑھیں »

ٹکڑیاں (چھوٹی نظمیں)

۔1۔کشتی جل جاؤ۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔۔۔ چاند کے پار۔۔۔۔ اک ندیا بہتے پانی کی۔۔۔۔ نیند کی لوری گاتی ہے۔۔۔۔ ۔2۔ایک لمحے کی رات رات کا ظلم سہا جنگ تاروں سے لڑی چاند چپکے سے ہنسا نیند حیران کھڑی خواب خاموش کھڑے سوچ کیسی ہے گھڑی ۔3۔منظر، خدشہ، احساس اور آس آدھی آنکھیں ...

مزید پڑھیں »

انقلاب

کتاب : چے گویرا مصنف: ڈاکٹر شاہ محمد مری صفحات: 120 قیمت: 200 روپے مبصر: عابدہ رحمان ڈاکٹر شاہ محمد مری صاحب کی کوئی بھی کتاب اٹھا کر پڑھیں ، چاہے وہ ان کی اپنی تخلیق ہو یا پھر کسی کتاب کا ترجمہ، اس میں آپ کو ان کی فکر، ...

مزید پڑھیں »

پْٹ منی بیہوبورئے ڈولنت

دل منی سوزیں بڈنڑے دانی بْت پہ بالاذا نہیل بیثہ دل دنی بازیں اٹکلاں زانی روح چو برین آسکئے ڈولیں ڈوبرئے نیاما َ تھاں رنگا مانی جزغا لوٹی مست ہم گاما جوسراں دیثیں سملئے بانہی درژبر و میوہ شام بیہو اے ساڑتتیں سوما آف برانی. ما کثیں دیوانے مریذحانا اشکثیں ...

مزید پڑھیں »

جبرواختیار

زیندھئےمقراریں دگے اغراراں مشتغیں انڑ دگے گٹاں راستغاں ہم گرنچیں گواشاں رستراں سرگواثاں میشاں میشلاں مہ تاباں مستاں مہلباں مرگ پینچاں مارکساں مسنداں موسیقاں ماراں مسواں مسکیفاں اسراراں عجب رنگیناں عاشق ٹوہو، رائی چاری زیندھ یہ لکاں بوٹی اے زیندھ یہ باراں بازی اے ایذااختیار مختیار مقراریں ایذا انہ و ...

مزید پڑھیں »

شاعری

جانتا ہوں کہ وہ وقت آئے گا جب مری شاعری کو اچانک کبھی چاند آکاش گنگا میں نہلائے گا جانتا ہوں کہ وہ وقت بھی آئے گا جب زباں کا تعصب نہ ہو گا کہیں میری خوشبو سے ہر اک مہک جائے گا جانتاہوں کہ وہ وقت بھی آ ئے ...

مزید پڑھیں »

بھوک کے راستے حملہ کرتی محبت

کیا تم پہچانتے ہو رات کے آخری پہر عورت کے چہرے کی تھکن کو شطرنج کے آخری پیادے کی خوشی کو جب وہ دشمن کے پہلے خانے پہ قابض ہو جاتا ہے کیا تم نے کبھی سنی ہے حوصلے کی ٹوٹتی کڑیوں کی کراہ جس کے بعد دھڑکنیں زنجیر میں ...

مزید پڑھیں »

حیات بلوچ

پیری میں لُٹ گئی عمر بھر کی کمائی خاک میں مل گئیں اُمیدیں لہو ہو کر وہ علم کا سودا ئی تھا خواب تھے آ نکھوں میں بھروسہ تھا قوت بازو پر آ خری لمحوں تک درانتی ہاتھوں میں تھی اپنی محنت پر ناز تھا جس کو وہ شہر یار ...

مزید پڑھیں »

ریکھاؤں سے باہر

"اچھا تو کیا دنیا سچ مچ بالکل خالی ہوجائے گی؟ کیا یہ ہنستے چہروں والے لوگ بھی باقی نہیں رہیں گے؟ اور کیا میں بھی!! ۔۔۔ دھول اڑاتے دن کی راکھ میں کھو جائوں گا؟” بوڑھی آنکھوں سے اس نے تب دور خلا میں گھورتے گھورتے خشک گھاس کا تنکا ...

مزید پڑھیں »

ذرا سی حرارت ملے تو۔۔۔۔

ذرا سی حرارت ملے تو چمکتا ہوا دھوپ کا ایک ٹکڑا بنائوں ٹھٹھرتی فضائوں کی یخ بستہ آنکھوں میں کرنیں کھلائوں بہت منجمد آسمانوں کو چھوتی ہوئی چوٹیوں پر کھنکتے ، سبک ، مست جھرنے دھروں اور تخیل کے بیکار،ساکت پرندوں کو اڑنا سکھائوں ذرا سی محبت ملے تو سیہ ...

مزید پڑھیں »