شاعری

خودی

میری ذات ذرہ ذرہ میری ذات کرچی کرچی مجھے یوں ہے جو بکھیرا کہ سمٹ گیا جسم میرا زباں جو لب کشا ہوئی تو دن میں رات بین کرتی جو میں موندھ لوں یہ آنکھیں رات اندھیرے میں مچلتی اری سیاہ کار او بے خبر بنے تو جو میری چارہ ...

مزید پڑھیں »

ایک سندیسے کی آس میں

ایک سندیسے کی آس میں ۔۔۔  علی بابا تاج منڈیروں پہ پنچھی جب سے چلنا بھول گئے اڑنا بھول گئے اجلے دن میں دیر تلک کیا رہنا تھا اک منظر جو آنکھ میں اترا بے شکلی میں اک آواز تھی بوسیدہ وقت کے پہلو میں سو وہ بھی سورج پار ...

مزید پڑھیں »

حملہ

شب کے شب خون میں اک تیرہ شبی کا خنجر دہر کے سینہِ بیدار میں حسبِ معمول وار بھرپور تھا ؛ پیوست ہوا قبضے تک رو کے خاموش ہوئی گنبدِ مسجد میں اذان میوزیم میں کہیں اوندھی گری گوتم کی شبیہہ نے شکستہ ہوئی ؛ نوحے تھے نہ نغمے باقی ...

مزید پڑھیں »

غزل

  جو بَن کے چھاؤں کِھلے سفر میں فریبِ گْل کے وہ شاخچے تھے جو خاک زاروں سے رِس رہے تھے وہ جستجووں کے آبلے تھے زمیں پہ جادو بھری فِضا کا یہ المیہ تھا بنامِ حیرت نظر شبستاں میں کھو گئی تو وہی توَہْم کے دائرے تھے جو “کچھ” ...

مزید پڑھیں »

گھنٹی

رات کے اندھیرے میں بلب کی ملگجی زرد روشنی میں ہر چھت میری سوچ کی طرح کفن جیسی سفید چادر میں لپٹی اُداسیوں میں ڈوبی ہوئی ہے اندھیرا سب کچھ چُھپا لیتا ہے تو اُداسی بھری سفیدی کیوں نہیں چُھپتی؟ ہُو کے عالم میں سنسان راستے پہ قدموں کی چاپ ...

مزید پڑھیں »

تاج محل

تاج تیرے لیے اک مظہرِ الفت ہی سہی تجھ کو اس وادیِ رنگیں سے عقیدت ہی سہی میری محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی مردہ شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا ان گنت لوگوں ...

مزید پڑھیں »

عالم ئے اسرار

  کوہ باریں بِچکند اَنت؟ گوات باریں گُژنگ بنت؟ نود باریں تُنگ بنت؟ مور باریں سر شودانت؟ باریں پُل ہم گند اَنت؟ رَنگ ہم نپس کش اَنت؟ روچ وَشدلی زانت اِنت؟ ماہ باریں سُہبت کَنت؟ آس باریں آپُس بِیت؟ آپ واب ہم گند اِنت؟ باریں سِنگ وڈوک و ڈل چُک ...

مزید پڑھیں »

*

  اش مئیں مُرتئی آ رَندا، کوکھر پھذا نہ گُوارنت کو کھر ضرور گُوارنت، مئیں چھم پھذا نہ گُوارنت اش بندو بُرّ بس بنت، جُڑ بستغ ایں غمانی پونچھا رغام زیری، سر گوار پھذا گُوارنت گردی سرے نہ زِیری، فتہ ئے دڑو شورش دڑد نخنت دفن گاہ ہنگر پھذا نہ ...

مزید پڑھیں »

*

  اْس کے آنکھ جھپکنے کی آواز ابھی تو آئی تھی خواب کا در بھی کْھلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی کس نے کہا تھا جاں دینے کی رسم کبھی کی ختم ہوئی؟ پروانوں کے جلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی زنداں کی سونی دیواریں کس کے گیت ...

مزید پڑھیں »