شاعری

اقلیدس ! زندگی سنو

    دائرہ مرکزِ یعنی مرے دل کے سنگھاسن پر براجمان “تم ” اور دائرے کے تین سو ساٹھ زاویوں پر یکساں پرکار کی طرح گھومتی ہوں میری “میں ” تکون زاویہ قائمہ پر زندگی میں کسی زندہ لمحہ میں ٹہرنے کی کوشش کرتے ہوئے میں ، تم اور وہ ...

مزید پڑھیں »

آخرِ شب کی بازی

آسمان پہ شمال مغرب کی جانب اِک آخری تارہ رات کے آخری پہر ٹِمٹِماتا ہے گو ہزاروں نوری سال کے فاصلے پر ہے پھر بھی اندھیرے اور اُجالے دونوں سے ٹکرتا ہے تُم کہیں پہ ہو اور میں کہیں پر ہوں اَن گنت میلوں کی دوری ہے دوری کا سارا ...

مزید پڑھیں »

*

  تھاں تھاں ٹوکا گیراراں مں، گوں من چے کردار کثئے وہاوّ سکون پُلِثو اژ مں زیند منی گرانبار کثئے مروشی اژمن تو دیرائے، تو شہ مئیں دڑداں پوہ نئیے جان گوں دڑداں اِشتو شتغئے، بے ڈوہا مناں گار کثئے زیند گلِثہ رندا تیغا ہچ وختے تئی مہر نوی کُشتئے ...

مزید پڑھیں »

شمُش تئے

  شمُش تئے اے دِہ کارے ایں شکیں بی آزماں بُڑزیں نا ڈیہہ ئے دل ترکّی اُستمان ئے کار مہتل بنت من لبزے یاں شہ رکّاں رِتکغیں روشے گواثانی سرا شِنگیں یہ حرفے یاں منی فہمگ زمانہ ڈِکشن ئے وقت ئے سوالیگیں مئیں وشبو ہیذ،ھونانی نذر بیثہ مئیں زیبائی لِواراں ...

مزید پڑھیں »

رقصِ بِسمِل

چکور چاند کی اُور پرواز کرتا ہے زخمی سینہ لیئے زمین پر آن گرتا ہے بدن میں کئی ناگ ایک ساتھ پُھنکارتے ہیں اور من کا کُُتّا سرد اندھیری رات میں روتا ہی رہتا ہے زندگی کا سمندر موتیوں سے خالی ہے محبت ریت کا اِک ایسا ذرّہ جو آنکھ ...

مزید پڑھیں »

بشارت

  دن گزارا ہے سزا کی صورت رات آئی شب یلدا کی طرح صحن کی آگ میں جلتے ہوئے شعلوں کی تپش منجمد ہوتے ہوئے خون میں درآئی ہے یادیںیخ بستہ ہواؤں کی طرح آتی ہیں آتش رفتہ و آیندہ میں رخشاں چہرے برف پاروں کی طرح دل کے آئینے ...

مزید پڑھیں »

..

  چم ہر وختا پہ دیذارا شذیّاں جانی من وثی زیندا پہ تئی ناما کثیّاں جانی ہچو ناراض مہ بی ساہا بکو گؤر بیاراں تو نہ زانئے کہ من اولا شہ جثیّاں جانی آہ نیم راہائیں، درگاہا دِہ سر بی آخر روشئے تو حقاں دیئے پیشی پذیّاں جانی تو مناں ...

مزید پڑھیں »

تُڑس

  دیغریں کوہئے سرا نشتہ وداریگاں کہ گِنداں رولہے ساھے ، دمے کشاں، نواں گامیگ باں (بالاں بدلی زُڑتگیں پندھانی پیچگ چون بی) مئیں ومنی بام ئے نیاما لرزغیں ڈئینڑیں شفے مں تُڑسغاں ڈُنگے براثانی ھمیذا گوں کفی گُڈیث پاذاں ٹیلغاں کشیث بام ئے وزّتاں بے نور کنت شف تُڑسغیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

  کون سا آپ کے گھر جائیں گے؟ راہ ہے ہم بھی گزر جائیں گے! اشک ہوں، مے کہ لہو، جام اپنے شام آئے گی تو بھر جائیں گے! اور جانا ہے کہاں اے جاناں تم جدھر جاؤ اْدھر جائیں گے!۔ مَل کے چہرے پہ لہو کی سرخی اْن کے ...

مزید پڑھیں »

ہماں روشا۔۔۔

  ھماں روشا کہ میرا بذ بُڑتہ شہیں مُریذئے راستیں ٹونکاں مناں گیریں دُراھیں شفچراں مُچی کثہ گوئشتہ ما دانا عاقلیں ، بینا مئے فہم ئے لوغ دیما زیند موت ئے راز سجدہ کنت مئے شاندا آزماں چری زمیں لُڈی زرانی چول ھامی بنت نفا نُکسان ئے لیکوّ مئے درا ...

مزید پڑھیں »