شاعری

غزل

اے تحیّرِ عشق سُن میری طرح سے خواب بُن یہ جو دماغِ ہست ہے اس کو لگ نہ جائے گُھن جا تُو بھی کچھ سمیٹ لے تُجھ پہ برس رہا ہے ہہن توڑ دیا ہر آئنہ کسکی لگی ہوئی ہے دُھن شب تو اپنا جواب دے صبح تو اپنا سوال ...

مزید پڑھیں »

سطور

انگلیوں کی پوریں لمس کو پہچانتی ہیں وبا کو نہیں محبت آسمان سے بارش کی مانند نازل ہوتی ہے ہر خشک و تر پہ اور مٹی اپنی اپنی تاثیر کے مطابق گل بوٹے اگاتی ہے یا کیچڑ بنتی ہے محبت کے قرطاس پر سات سطریں ہوتی ہیں پانچ جو روح ...

مزید پڑھیں »

غزل

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے پھر تو بازار کے بازار سے لگ ...

مزید پڑھیں »

خود کلامی

عارفہ نے مجھ اگا ہے پیڑ نیا ایک خودکلامی کا نموپذیر ہیں شاخیں بدن کو چیرتی ہیں کٹار کونپلیں ہیں چھیدتی رگ وجاں کو نہ کوئی دھن ہے نہ ہی ساز اور نہ آوازیں بدن رکھیل ہے پوروں کا ناچ جاری ہے گڑے ہیں پاوں مرے،ریت سے نکلتے نہیں کسی ...

مزید پڑھیں »

فہمیدہ ریاض

تم بالکل ہم جیسے نکلے فہمیدہ ریاض (یہ نظم اس بہادر دانشور نے ہندوستان میں لکھی تھی اور وہیں سنائی تھی ) اب تک کہاں چھپے تھے بھائی وہ مْورکھتا، وہ گھامڑ پن جس میں ہم نے صدی گنوائی آخر پہنچی دوار تمہارے ارے بدھائی، بہت بدھائی پریت دھرم کا ...

مزید پڑھیں »

نسیم سید

تمہیں استعمال کے بعد قتل کردینا ہی مناسب ہے ۔۔۔۔۔۔۔کرسٹوفر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میری ماں نے بتا یا تھا ’’ ہم اپنے وجود سے شرمندہ تھے سفید آدمی ہمیں دیکھ کے نفرت سے ہمارے منہ پرتھوک دیتے ’’ بد شکل جنگلی عورتیں ’’ وہ ہم میں سے کسی کوبھی کسی بھی وقت ...

مزید پڑھیں »

غزالہ مُحسن رضوی

بے پر کی تیتری کی بوڑھی آنکھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ غزالہ مُحسن رضوی انتظار کی دہلیز پر پڑی یہ بوڑھی آنکھیں برسوں سے انتظار میں ہیں انتظار! جو خود بھی بوڑھا ہو چُکا ہے اِک ایسی کل کے انتظار میں جو اب تک نہیں آئی! اور اسی کل کے انتظار نے بچپن ...

مزید پڑھیں »

” میں عورت ہوں” زخم دل،اشک اور یہ لب کسں قدر ویران ہوں میں کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔۔؟ سخت پریشان ہوں میں پری پیکر ہوں یا بسں نشان کہیں بے سخن، بے کلام ہوں میں کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔؟ سخت پریشان ہوں میں… کئی گمنام القاب ہیں پیوست ...

مزید پڑھیں »

بے پر کی تیتری کی بوڑھی آنکھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انتظار کی دہلیز پر پڑی یہ بوڑھی آنکھیں برسوں سے انتظار میں ہیں انتظار! جو خود بھی بوڑھا ہو چُکا ہے اِک ایسی کل کے انتظار میں جو اب تک نہیں آئی! اور اسی کل کے انتظار نے بچپن کے ہاتھوں سے ...

مزید پڑھیں »