شاعری

غزل

ستا د‌ ښائست او ګل ورین نظر بلا واخلم وږمه وږمه شمه او سپړ شم چي نوم ستا واخلم چي شم ورپېښ کله په کرکه او په مينه باندي پرېږدم تياره لمن خوره کړم او رڼا واخلم وایه چي څنګه به شي ورک زما د زړه غمونه وي ستا فراق ...

مزید پڑھیں »

*

چو بے ترک ءُ الگار ھمچو کہ من صدایاں گرفتار ھمچو کہ من بہ بِی ہر کسے یار ھمچو کہ من مہ بِی کس سُبکسار ھمچو کہ من اے زِر چو منا ساکت ءَ ساکت اِنت وتی اندر ءَ گار ھمچو کہ من شپے گوں وتا دارگی اِنت منا شپے ...

مزید پڑھیں »

سَنیہا

اُٹھی سَئیݨ سُوہݨی ذدا ڈیکھ تاں سہی تیڈے چندربھاگے دے پاݨیاں وچ ول رتول جھال پئی ڈیندی اے ول عورت دا اتھاں قتل تھیا اے ول مرد کوئی ازلی چُپ اچ ھن ول وُسوں کوں کوئی نانگ لڑئے ول دھی توں منہ لکیندے َپئین ول عزت دے نانویں سولیاں ھن ...

مزید پڑھیں »

۔

عظمت رفتہ کے ویران مناروں میں بسے عہد گم گشتہ کی خاک سنبھالے ہوئے لوگو آئینے! جن میں نظر آتا ہے تمہیں ماضی اپنا ماضی! جو امروز سے آگاہ ہے نہ فردا سے جڑا ماضی! جو ایام گذشتہ کی مئے سے ہے معمور ماضی ! جو سالہا سال سے ماضی ...

مزید پڑھیں »

جہیز میں کتاب تھی

جہیز میں کتاب تھی کتاب میں فرائض و حقوق زوجیت کے سب اصول تھے نکتہ نکتہ بات تھی بات تھی کہ اونٹنی کی پشت پر بھی حکم ہو۔۔۔۔۔ تو بس رضا و رغبت ہی میں بیبیوں کی بخشش و نجاب ہے نہ میرا کوئی ذکر تھا نہ میری کوئی بات ...

مزید پڑھیں »

سائے کی کہانی

سوتی جاگتی رات کا کوئی پچھلا پہر تھا چاند کا روشن چہرہ کھڑکی کے شیشوں پر جھکا ہوا تھا نیند لرزتی پلکوں کی جھالر کے نیچے پھیل رہی تھی خواب سرہانے اونگھ رہا تھا آنے والا دن ہاتھوں میں بادل، خوشبو، گیت لیے تیار کھڑا تھا ایسے شانت سمے میں ...

مزید پڑھیں »

عورتیں

عورتیں!! قتل گاہ کی رونقیں لہو سے مہندیوں کے رنگ کو نکھارتی، مساگ کو اجالتی یہ عورتیں جانتے ہو کون ہیں؟ یہ وہ ہیں جن کے آئینوں میں گولیوں کے، چاقووں کے ، برچھیوں کے گھاو ہیں اور آئینے بھی کون ہیں؟؟ روح کے الاو ہیں ان عورتوں نے تھان ...

مزید پڑھیں »

جبر و اختیار

زندگانی ایک متعین راہ حیرتوں سے چرب ایک گنگ راہ رکاوٹوں ہمواریوں میں بندھی ہوئی چڑھائیوں درندوں اور بادصبا میں بھیڑوں یتیم لیلوں ماہتابوں میں مجنونوں محبوبوں گاتے پرندوں میں مارکسوں مسندوں موسیقوں میں عجب رنگ کے اسراروں میں عاشق پہریدار، راہی جاسوس زندگی ایک آنکھ مچولی زندگی چال چلنے ...

مزید پڑھیں »

غزل

سراپا خواب ہوں اور جاگتا ہوں یہ کس تعبیر میں الجھا ہوا ہوں نہیں پہچان یوں آسان میری شعاعِ مُرتعش کا آئینہ ہوں خموشی کو مری آسان مت لے کہ میں جب بولتا ہوں۔ بولتا ہوں ہوئے متروک سب الفاظ جن کے انہی بھاشاؤں میں لکھا گیا ہوں اذل سے ...

مزید پڑھیں »

غزل

سراپا خواب ہوں اور جاگتا ہوں یہ کس تعبیر میں الجھا ہوا ہوں نہیں پہچان یوں آسان میری شعاعِ مُرتعش کا آئینہ ہوں خموشی کو مری آسان مت لے کہ میں جب بولتا ہوں۔ بولتا ہوں ہوئے متروک سب الفاظ جن کے انہی بھاشاؤں میں لکھا گیا ہوں اذل سے ...

مزید پڑھیں »