شاعری

شئیر

سنج کناں بورے ٹونڈ کناں پاغے من ہمے کلانی رذا داثہ سومری یے گوں تنگویں سہثاں ماں سرا گِندی پِیرِہّ تاخاں ار منی بالاذا نہ واجھائنی زیان او پیرہّ من تھرا دیثیں شنگیں گونڈل و براہندغ بیاختیں پشت دیمیا تھرا گپتیں گڈثیں سر دھڑ کثیں دیرا ڈاہ بڑتیں ورنایاں گشینی ...

مزید پڑھیں »

روچا کئے کشت کنت

روچا کَے کُشت کنت؟ رُژنا کَے داشت کنت؟ سْیہ شپ ئے جُلگہا شپچراں گَل کُتگ روچئے بیرانی ئے زِندئے شاہِنشہ ئے مرگ ءِ جارِش جَتَگ بِیدِ رُژن ئے دَرا تَنگہیں فِیبُسا گُل زمین, آسمان پور, ماہ, کلکشان نیستی ئے شپ جَتیں بِیدِہا گار بنت مِہر گُٹ گِیر بیت لَہڑ ایر ...

مزید پڑھیں »

جوگن

ریت کے بگولے صحرا میں تیرے قدموں سے لپٹے ابھی تک محو رقصاں ہیں ہوا بھیرویں گاتی پیڑ کو یوں چھو کر گزرتی ہے جیسے تمہاری مسکان کا راز اسے بتانے آئی ہو بستی کے چرند سارے تیرے چنری تیرے جھومر تیری ونگوں کی چھنکار سے دم بخود کھڑے ہیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

چھم دہ انڑزی نیاں سوزاں شہ دل دہ زہیر نئیں تھئی گنوخیں عاشقا را نام دہ تھئی گیر نئیں گڑدغاں ہرو شہ راہا تھؤ نواں بدنام بئے ماں تھرا پہریزغاں تھئی لوغ اکھر دیر نئیں کل نہ ایں کہ تھانرگا تھا چیرثا سینغ منی گندغاں من دہ تھئی دستاں کمان ...

مزید پڑھیں »

غزل

پروں پر لاد کر جگنو اڑی ہوں اوڑھ کر بدلی میں رہتی ہوں پرستاں میں، نہیں ہوں میں کوئی لڑکی میں بچپن سے تھی کٹھ پتلی، یہ قصہ میں نہیں بھولی ذرا سوچو ذرا سوچو، میں گڑیا سے نہیں کھیلی میرا ہر درد بہنے دے، جو کہنا ہے وہ کہنے ...

مزید پڑھیں »

قید تنہائی

میں اک ساعت نم گزیدہ کی کھونٹی پہ ٹانگی گئی ہوں خرابے کی صورت مرے آنکھ کے منعکس آئینوں میں گھری یک بہ یک بے تکاں رقص کرنے لگی ہے سوالی کتابیں، جوابی نگا ہیں مرے کتب خانے کے چپ کے دہانوں میں پاٹی گئی ہیں مرے ہم سبق. نطق ...

مزید پڑھیں »

محبت مار دیتی ہے

بہت پہلے سنا میں نے محبت مار دیتی ہے توکھل کے ہنس پڑی یک دم بھلا ایسا بھی ہوتا ہے؟؟ کبھی ایسا بھی ہوگا کیا؟ محبت مار سکتی ہے جو جینے کی اک آس ہوتی ہے وہ کیسے مار سکتی ہے؟ مگر جب پھر مدتوں بعد اک ایسا سانحہ گزرا ...

مزید پڑھیں »

غزل

نہ اٹھائو پیڑ سے روشنی ، نہ جھکائو شام کی بدلیاں ابھی ان فضائوں میں تیرتی ہیں گداز لہجے کی تتلیاں یہ گئے دنوں کی ہے داستاں کہ ستارے کھلتے تھے جھیل میں کسی شاہزادے کی راہ میں کھڑی خواب بُنتی تھیں لڑکیاں وہ عجیب شہرِ خیال تھا نہ ہوا ...

مزید پڑھیں »

ھانی

کوئل جو کُوکی رات کو بیدار مُجھ کو کر گئی باد از مُلیبار آ چلی دل کو کوئی یاد آگیا بابُل کی بھیڑوں کی قطار ہے دُھند سُوئے آسماں آئی فقیروں کی صدا تھا پیشتر میرا مرید ڈاڈر کی گلیاں پھانکتا ماضی کی یادیں ہانکتا میری نظر جب مِل گئی ...

مزید پڑھیں »

نظم

ہم نہیں جانتے کہاں سے آئیں ہیں۔۔۔ کیوں آئے ہیں کب لوٹائے جائیں گے۔۔۔ آنکھوں پہ اندھیرا باندھ کر کہاں بھاگ رہے ہیں۔۔۔ آگے کیا ہے۔۔۔ پیچھے کیا چھوڑ آئیں ہیں اس زندگی کے بعد کیا ایسی زندگی ہے۔۔۔ جس پہ ہمارا بھی اختیار ہو یا شاہکار کا یہی اختتام ...

مزید پڑھیں »