شاعری

غزل

کچھ دریچوں میں روشنی ہو گی شہر میں رات جاگتی ہو گی ایک وحشت زدہ کھنڈر میں ابھی تیری آواز گونجتی ہو گی زرد پھولوں پہ شام کی دستک نیم جاں دھوپ نے سُنی ہو گی اُڑ گیا آخری پرندہ بھی پیڑ پر شاخ ڈولتی ہوگی دل بھی وہم و ...

مزید پڑھیں »

میں کیا کروں

خموش ہوں کئی دنوں سے اور شگاف پھیلتا ہی جا رہا ہے کھا رہا ہے رات دن وجود کے ثبوت میں یہ دل دھڑک دھڑک کے تھک گیا ہے پھر بھلا میں سو رہوں ۔۔۔کہ رو پڑوں کوئی ہنر بھی کام آنہیں رہا میں چیختے ہوئے کواڑ کھول دوں۔۔۔میں بول ...

مزید پڑھیں »

یہاں خوش گمانی کا راج تھا

یہاں آرزوؤں کی سلطنت تھی بسی ہوئی یہاں خواب کی تھیں عمارتیں یہاں راستوں پر دعاؤں کے سنگِ میل تھے یہاں معتبر تھیں بصارتیں یہاں پھول موسم قیام کرتے تھے دیر تک یہاں چاہتوں کا رواج تھا یہاں پانیوں میں یہ زہر کس کی رضا سے ہے یہاں خوف پہرے ...

مزید پڑھیں »

گلگال

جمراں مرچی گرندگے مانیں بشئے گروخانا کندگے مانیں ساہیوال ئے مں سیاہیں زندان آ یک وطن دوستیں بندگے مانیں گل خان نصیر آج بادل گرج ر ہے ہیں ساون کی بجلیاں مسکرا رہی ہیں ساہیوال کے سیاہ زندان میں ایک وطن دوست قید ہے

مزید پڑھیں »

آنسووْں سے بنے

آنسووْں سے بنے ہوےْ ہم لوگ ٹھیس لگ جائے تو ندی کی طرح پہروں بہتے ہیں اپنی آنکھوں میں !۔ کوئی چھیڑے تو کچھ نہیں کہتے صورتِ گل ہوا سے کیا شکوہ شام کی آنچ سے الجھنا کیا ہاں مگر سانس میں کوئی لرزش مدتوں ساتھ ساتھ رہتی ہے !۔ ...

مزید پڑھیں »

فن جو نادار تک نہیں پہنچا

فن جو نادار تک نہیں پہنچا ابھی معیار تک نہیں پہنچا اس نے بر وقت بے رخی برتی شوق آزار تک نہیں پہنچا عکس مے ہو کہ جلوۂ گل ہو رنگ رخسار تک نہیں پہنچا حرف انکار سر بلند رہا ضعف اقرار تک نہیں پہنچا حکم سرکار کی پہنچ مت ...

مزید پڑھیں »

خاموش رہو

کون مسافربرسوں سے سنسان پڑی خاموش گلی سے گزرا آنکھیں ملتی رات کی اوک میں شام گلابی گاگر خالی کرتے کرتے چونک اٹھی کب ریشم سے ریشم الجھا اور بجتی ہوئی سرگم سے ٹوٹ کے سانس گری کس آہٹ نے دل میں پھیلی اک ویرانی پر پاؤں دھرا کب دیر ...

مزید پڑھیں »

غزل

اب ایک دوسرے کی ضرورت نہیں رہی جب فاصلے نہیں تو محبت نہیں رہی اس گھرسیاب یہ نقل مکانی کاوقت ہے دل میں اگر کسی کی سکونت نہیں رہی آغازِ عشق میں بڑے ثابت قدم تھے ہم اب وہ شکست و ریخت سلامت نہیں رہی جتنے بھی جاں نثار تھے ...

مزید پڑھیں »

غزل

مھربان تئی مھر داں کجائیں ما ھَم بزان اِنہ گشے تئی بے وپائی روچ مہ روچ گیش بیان اِنہ وپا آں مئے بے وپا پراموش اِنت اَنچوش اڈیت گوں سنگے ء َ سرا مئے زھر وران اِنہ اپ مباتاں تئی انارکانی اناریں رنگا کہ چادر تئی سیاھیں سْھریں رنگ چنان ...

مزید پڑھیں »