شاعری

حیات بلوچ

پیری میں لُٹ گئی عمر بھر کی کمائی خاک میں مل گئیں اُمیدیں لہو ہو کر وہ علم کا سودا ئی تھا خواب تھے آ نکھوں میں بھروسہ تھا قوت بازو پر آ خری لمحوں تک درانتی ہاتھوں میں تھی اپنی محنت پر ناز تھا جس کو وہ شہر یار ...

مزید پڑھیں »

ریکھاؤں سے باہر

"اچھا تو کیا دنیا سچ مچ بالکل خالی ہوجائے گی؟ کیا یہ ہنستے چہروں والے لوگ بھی باقی نہیں رہیں گے؟ اور کیا میں بھی!! ۔۔۔ دھول اڑاتے دن کی راکھ میں کھو جائوں گا؟” بوڑھی آنکھوں سے اس نے تب دور خلا میں گھورتے گھورتے خشک گھاس کا تنکا ...

مزید پڑھیں »

ذرا سی حرارت ملے تو۔۔۔۔

ذرا سی حرارت ملے تو چمکتا ہوا دھوپ کا ایک ٹکڑا بنائوں ٹھٹھرتی فضائوں کی یخ بستہ آنکھوں میں کرنیں کھلائوں بہت منجمد آسمانوں کو چھوتی ہوئی چوٹیوں پر کھنکتے ، سبک ، مست جھرنے دھروں اور تخیل کے بیکار،ساکت پرندوں کو اڑنا سکھائوں ذرا سی محبت ملے تو سیہ ...

مزید پڑھیں »

نوشین قمبرانی کی شاعری کا مختصر انتخاب

نخلِ دل کے برگ و باراں کو مُیسّر، تُو نہ تھا بج رہے تھے ساز تیرے چارسُو پر، تُو نہ تھا جنگلوں کی نیند پہلو میں مِرے جاگی رہی نیم بیداری کی شِریانوں میں شب بھر، تُو نہ تھا چاپ سے تیری تَھرک جاتیں زماں کی وُسعتیں آگہی کا رقصِ ...

مزید پڑھیں »

پہاڑوں کے نام ایک نظم

(شاہ محمد مری کی ایک کتاب پڑھ کر) روایت ہے پہاڑوں نے کبھی ہجرت نہیں کی یہ بارش برف طوفاں سے نہیں ڈرتے یہ خیمے چھوڑ کر اپنے نہیں جاتے کبھی نامہرباں افلاک پانی بند کردیں تو نہ بارش کے خدا کا بت بناکر پوجتے ہیں اور نہ سبزہ زار ...

مزید پڑھیں »

قطبی ستارہ

(نوٹ: موسٰی عصمتی نابینا ہیں اور نابینا بچوں کے اسکول میں بطور استاد فرائض انجام دے رہے ہیں)۔ اگر کسی دن آگ لائی جائے اور میری ٹوٹی ہوئی لالٹینیں دوبارہ روشن کردی جائیں میں تب تک دیکھوں گا جب تک آسمان بے رنگ نہیں ہوجاتا جب تک پہاڑوں کی برف ...

مزید پڑھیں »

شئیر

گہے روش روشن پہ اے روزگار گہے شپ کہ وفسی جہاں برقرار گہے سیل وشادی گوں دوستاں اوار گہے روث وفسی مں قبرے تہار گہے گوئہروساڑتی زمستاں اوار گہے سبزگلزارعجب خوش بہار یکے میوہ شیریں یکے زہردار زمیں یک نمونہ و میوہ ہزار کبھی دن ہے روشن کہ چلے کاروبار ...

مزید پڑھیں »

جُست بکن

تو کہ سَر زُرتہ وتی دست ئے دلا جُست بکن!۔ تو وتی سینگ ئے پُر مہریں گُلا جُست بِکن!۔ تو وتا جُست بِکن!۔ تو مناجُست بِکن!۔ ہر کساجُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ تو وتی کوہ وگَراں جُست بِکن!۔ کوچگ و مچگدگاں جُست بِکن!۔ کور و گیابان و ڈلاں جُست ...

مزید پڑھیں »

کلام بابا بلھے شاھ

وے ماہیا تیرے ویکھن نوں چُک چرخہ گلی دے وچ ڈاہواں میں لوکاں باہنے سوت کتدی تند تیریاں یاداں دے پاواں بابل دی سوں جی نئی لگدا ساڑے سیک ہجر دی اگ دا اج میرا دل کردا گھر چھڈ کے ملنگ بن جاواں چرخے دی کُو کڑ دے اوہلے یاد ...

مزید پڑھیں »

مکتب عشق

مکتب عشق تمہاری محبت نے سکھایا غم کیسے سہا جاتا ہے صدیوں سے اک ایسی عورت کی تلاش تھی مجھے جو لذت غم سے آشنا کر تی اک ایسی عورت، جس کے کندھوں پر سر رکھ کر کسی پرندے کی طرح رو پاتا اک ایسی عورت، جو ٹوٹے ہوئے شیشے ...

مزید پڑھیں »