شاعری

مست تئوکلی

  کبھی سمّو کی خواب آلود آنکھوں سے گری تھی جو تجلی تیرے سینے پر اگر وہ طور پر گرتی تو جل کر راکھ ہوجاتا وہ کیسا حسن آفاقی تھا جس تمثیل کی خاطر نجانے کیسے کیسے حسنِ فطرت کے فسوں انگریز نقشے کھینچتا تھا تُو تری رمز آشنا آنکھوں ...

مزید پڑھیں »

قبرستان کے مجاور

  سیاہ، اُجاڑ،بکھرے بالوں کو میرے ماتھے سے سمیٹ کر ساس نے کہا جب ساٹھ سال کی ہوگی تب سمجھوگی ایک گھر کے لیے کیا کیا قربانیاں دی جاتی ہیں بے تاب، خودسر، باغی آنسوؤں کو میرے رخساروں سے پونچھ کر سُسر نے کہا جب ساٹھ سال کی ہوگی تب ...

مزید پڑھیں »

سِلسلہ!

او میرے دِلرُبا وہ تِری مُطرِبہ اپنی آنکھوں میں صحرا سمائے ہوئے گیت گاتی رہی جو، تِرے روز و شب بارِ غم اپنے کاندھے پہ لادے چلی تمازت بھرے آسماں کے تلے تپش گرم لہجے کی سہتی رہی آگ کیسےلگی؟ آشیاں کیوں جلا؟ برق کیوں یہ گری؟ کُچھ پتہ ہی ...

مزید پڑھیں »

فنا کی چاپ

سنو! جنگل کی بھیانک راتیں مسافروں کو بے سمت بے خلاء بے ردا, بے لباس گہری چپ کے لبادے اداسی کے چھن چھن بجتے نقرئ زیور پہنا جاتیی ہیں گہری چپ باتیں کرتی ہے صندل تعویذ بازوؤں کا گھیرا تنگ کردیتے ہیں ایسی طلسم راتیں گھاتیں کرتی ہیں…. سنو!!!!! کہیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

  مرچاں شوھاز پرچہ دلگرانے لبزے لکھے نہ کتابے وانے زند آسودگی نہ بیت دائم زند ئے گرانیں گمانی دیمپانے وھدئے لیٹینگ ئے کجنت تئی گپ وھد ئے زوراکیانی ہرجانے مدتے بیت نہ وپتگئے ہرشپ نشتگئے تو امیت و مہکانئے توچو پیش ئے وڑا نئیے مرچاں گندگا کارے آ پشومانے ...

مزید پڑھیں »

ھینّار

  من دَمانانی ھَلاسیئے ابَدمانیں مُساپر کہ نزانان کُٹگ وھدئے انداما درَھگ ھورکنین وَداران نندگ باز دَم برتگان ریس پَر رِتکگ اَنت زِردئے اَنچو کہ ھَمُک تابا پَدَرد اِنت بچکند چو منا گواتیا مِسلِ جمبر گون وتا دور پتاتگ بُرتگ ما ہمودا گون وتی جندا کماتگ وتی تہنائی گوں لبزان ...

مزید پڑھیں »

غزل

  کاغذ کی کشتیوں سی بَنا لائے محبت دریا سے کہو پھر سے بہا لائے محبت سب شہر تھا سائے کا طلبگار مگر ہم اک دھوپ کی شدت سے بچا لائے محبت لگتا ہے ہر اک فرد یہاں سب کو عدو سا اِس خوف کی بستی میں خدا لائے محبت ...

مزید پڑھیں »

رُومی کی پیشنگوئی

  کچھ ایسا ہو جائے گا کہ ہم ۔۔ ایک دوسرے کی تنہائی کو چھو سکیں گے دانائی چکھ سکیں گے اور محبت ۔۔ ہاں محبت میں شریک ہو پائیں گے دُکھ ہمیں دِکھائی دینے لگیں گے ایک دوسرے کے دکھ ۔۔ خواب ہمیں سنائی دینے لگیں گے ایک دوسرے ...

مزید پڑھیں »

کھیل کھیل میں

  یہ جو اجلی دھوپ پہن کر گھوم رہے ہو، کب کِھلنا تھی لیکن ہم نے رات کی کالی مٹی گوندھی، منتر پھونکا، آگ جلائی ہنستے کھیلتے سورج کی اک شکل بنائی بڑے جتن سے چرخہ جوڑا کرنیں کاتیں، جھلمل روشن دن کی یہ پوشاک بنائی اور جو ہنسی کی ...

مزید پڑھیں »

دل کب مانتا ہے

  ہمیں کہاں رہنا ہے سارے موسم کب جینے ہیں ساری ندیوں اور درختوں سے کب ملنا ہے ان بجھتی ہوئی آنکھوں سے کتنی دنیا دیکھی۔۔۔۔ کتنی دیکھ سکیں گے لاکھوں کروڑوں برسوں کا اک ننھا ساحصہ ہے اپنا جیون یونہی چار گھڑی کا قصہ ہے سب سچ ہے۔۔۔ لیکن ...

مزید پڑھیں »