شاعری

*

  اش مئیں مُرتئی آ رَندا، کوکھر پھذا نہ گُوارنت کو کھر ضرور گُوارنت، مئیں چھم پھذا نہ گُوارنت اش بندو بُرّ بس بنت، جُڑ بستغ ایں غمانی پونچھا رغام زیری، سر گوار پھذا گُوارنت گردی سرے نہ زِیری، فتہ ئے دڑو شورش دڑد نخنت دفن گاہ ہنگر پھذا نہ ...

مزید پڑھیں »

*

  اْس کے آنکھ جھپکنے کی آواز ابھی تو آئی تھی خواب کا در بھی کْھلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی کس نے کہا تھا جاں دینے کی رسم کبھی کی ختم ہوئی؟ پروانوں کے جلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی زنداں کی سونی دیواریں کس کے گیت ...

مزید پڑھیں »

کیامحبت کہیں کھو گئی ہے

  کیا محبت کے لئے کبھی تمہارا لباس سر نگوں نہیں ہوا یا تمہارا دل آراستہ بالکنیوں سے فاختاؤں کے ساتھ ہوا میں بلند نہیں کیا گیا میں نے رقص کو فاصلے اور رقاصہ کو قریب سے دیکھا وہ تھک کر میرے زانو پر سو سکتی تھی مگر وہ اپنے ...

مزید پڑھیں »

نظم

  ایک کمزور بنیاد پر ایستادہ یہ بوسیدہ دیوار ، جو اپنے سائے سے محروم ہوتے ہوئے اپنے نابود ہونے سے بھی بے خبر۔۔۔!۔ جس کے چار وں طرف وحشتوں کا نگر جن کے اعصاب پر میرے ہونے کا ڈر ۔۔۔!۔ روز آتا ہے وہ روز اپنا تماشا دکھاتا ہے ...

مزید پڑھیں »

غزل

  مئیں زوانا ٹونک یلہ داثہ توار یلہ داثہ مئیں چماں چین یلہ داثہ خما ر یلہ داثہ ڈنگ انت بند بنداں ہوشیاں مئیں ہوناں تھؤ بوختو زلفانی سیاہ مار یلہ داثہ مروشی دیثو تھئی ہپت رنگیں بروان دریناں شموشتہ ہمشاں رنگانی چھنڈکار یلہ داثہ لالی تہ گلا بانی پجھاریں ...

مزید پڑھیں »

فولڈنگ چئیر

فولڈنگ چئیر سارہ احم “فولڈنگ چئیر اٹھائے پختہ سیڑھیاں چڑھتی کسی ادھورے منظرکو پورا کرنے وہ چندلمحے تنہا گزارے گی اس کے راستے میں ایک سیڑھی پر بلّی کی چبائی سوکھی ہڈی پڑی تھی ایک پھٹے ہوئے اشتہار کا ٹکڑا بھی گرا تھا چھت پر نیم تاریکی تھی چاند بھی ...

مزید پڑھیں »

امن کا نوحہ

  اُداس نظمیں اُداس غزلیں اُداس مطلعے ُُاُداس مقطعے اداس لوگوں کی داستانیں سُنا رہے ہیں….. کہ کس گلی میں ہے کس کو مارا کہاں ہوا کون کون زخمی یہ میری سادہ سی نظم جس کا ہر ایک مصرع سس ک سس ک کر بتا رہا ہے…..۔ کہ نظمِ انسان ...

مزید پڑھیں »

چادر کی گواہی

وہ ۔۔۔ اپنے ہاتھوں میں بے داغ چا درلیے چیختا بھونکتا اورگرجتا ہوا گھرکے سارے بزرگوں کوجتلا رہا تھا اسے دیکھیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیکھیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ کہانی جوچادر پہ لکھی ہے پڑھیے اسے جا ئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سرخ جوڑے میں لپٹی ہوئ اس غلاظت بھری پوٹ کو چو میے پوچھیے اس سے کس ...

مزید پڑھیں »

بوڑھے شاعر کا ہزیان

  1 مار دے گا مجھے عمرِ فانی کا دکھ۔۔۔ یہ مرے دل میں کروٹ بدلتا ہوا رائگانی کا دکھ۔۔۔ کون ہے تو! تو کیا کہہ رہا تھا میں؟؟؟ ہاں! آسماں راکھ ہے۔۔۔ ہے دراڑیں زمیں اور زماں راکھ ہے ایش ٹرے میں پڑے میرے سگریٹ دھواں ہیں، دھواں راکھ ...

مزید پڑھیں »

شہر والو سنو

شہر والو سنو ………!! اس بریدہ زباں شہر میں قصہ گو خوش بیاں آئے ہیں شہر والو سنو! اس سرائے میں ہم قصہ خواں آئے ہیں شہرِ معصوم کے ساکنو! کچھ فسانے ہمارے سنو دُور دیسوں میں ہوتا ہے کیا،ماجرے آج سارے سنو وہ سیہ چشم،پستہ دہن،سیم تن، نازنیں عورتیں ...

مزید پڑھیں »