شاعری

محبت کا سر کاری ملازم

سانپ سیڑھی کھیل نے زہریلے سانپوں سے رنگوں کی کاشت کچھ یوں کی محبت سرکاری ملازم ہو گئی جووقت پہ سوتی جاگتی ، کھاتی پیتی تو ہے لیکن کنڈلی مارے بیٹھی رہتی ہے زہریلے ناگ رنگین ہوتے جاتے ہیں اور محبت اور بهی خفتہ محبت کا سرکاری ملازم زپر باد ...

مزید پڑھیں »

ﮨﻢ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ……………….!

ﮨﻢ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ ﻻﺯﻡ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ ﻭﮦ ﺩﻥ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻟﻮﺡِ ﺍﺯﻝ ﭘﮧ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﺟﺐ ﻇﻠﻢ ﻭ ﺳﺘﻢ ﮐﮯ ﮐﻮﮦِ ﮔﺮﺍﮞ ﺭﻭﺋﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﮌ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮨﻢ ﻣﺤﮑﻮﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻠﮯ ﺟﺐ ﺩﮬﺮﺗﯽ ﺩﮬﮍ ﺩﮬﮍ ﮈﮬﮍﮐﮯ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞِ ﺣﮑﻢ ...

مزید پڑھیں »

معلق ہوئی کھسیانی ہنسی

اس سے پہلے پھول باسی ہوجائیں وہ مجھے مرا ہوا دیکھنا چاہتے ہیں وہ میری میت پہ مرے ہوئے پھول نہیں ڈالنا چاہتے مگر مجھ پہ مرے ہوئے نوحے لکھ لکھ کر مجھ سے جوڑے رشتے پہ تھوکتے لعنت بجھتے کرلاتی آواز میں بین کرنا چاہتے ہیں میری ٹکٹکی پہ ...

مزید پڑھیں »

آگ

تم نے ہی ہم کو جانا ہے تم ہی ہمیں پہچا نے ہو ہم خوب ملے تھے روز اول ہم اس دن سے ہیں سرگرداں پیہم ……. تم نے ہی اس خالی گاگر میں کچھ عشق کے ست رنگ آب بھرے وہ اک صدائے منصوری.. اور اک شرار تبریزی .. ...

مزید پڑھیں »

غزل

صُبحدَم سب چَلے گئے نہ رہے کوئی گھر میں رہے بَھلے نہ رہے مُسکرائے تھے ہم کِسی غم میں رو پَڑے ہیں وہ مشغلے نہ رہے جَلنے بُجھنے میں اَب مزا نہ رہا آئینے بُجھ گئے دئیے نہ رہے حَبس ہے ‘ شور ہے ‘ تماشا ہے شعر کہنے کے ...

مزید پڑھیں »

توکلی آ بریخت نیست

مزائیں مڑد گیلیلیو مناں حدا ژہ زیات دوستئے اے خاطرا نہ کہ تہ دوربین ٹاہینتہ نئیں پہ اے سببا کہ تہ ٹیڑدیثغنت ماہا اے دہ نئیں کہ او مرشد ڈغار تہ چرغادیثہ اوروش ثابت کثئے ساکت پر جوآئیں مڑد ،او فہمیندغ مناں دوستئے پہ اے خاطر کہ وختے آ سماکپتئے ...

مزید پڑھیں »

مینٹل اسائلم میں

"تم ہنستی ہو مجھے اکیلا دیکھ کے میرے رستے میں بیگانہ موسم ، گھائل دن ، نوکیلے کانٹے چُن دیتی ہو ۔۔۔ اور پھر پیڑ کے پیچھے چُھپ کر دیکھتی ہو۔۔۔ میری عمر کا سُوت، آنکھ کے موتی، میرے من کا سونا اِدھر اُدھر بکھرا دیتی ہو۔۔۔۔ تم ہنستی ہو۔۔۔ ...

مزید پڑھیں »

*

زندگی چو بُز میشا ساہ ءِ کہچراں چَرَغ اِیں ڈْروہ ڈْروہ دَم بُرتہ اے سَما کدی بیثہ اژ مئے ساعداں کَفَغ اِیں روح اندرا بُرَغ ایں زندگی زہیرانی نوہ گڈّگی لئیویے لئیو لئیو دہ مارا اے سما کدی بیثہ بُستگیں پُراں جَنَغ ایں یار ! گَڈّغاں وَرَغ ایں

مزید پڑھیں »

نظم کا آخری ٹھکانہ

وہ مجھے لے جاتی ہے مکانوں کی پیچھے متوازی چلتی ہوئی لمبی گلیوں کو کاٹتی پگڈنڈیوں پہ شارٹ کٹ کا بہانہ کر کے وہ مجھے لے جاتی ہے پرندوں سے ڈرے ہوۓ کھیتوں میں اور بازو پھیلا کے کھڑا کر دیتی ہے وہ میرے صبر کا امتحان لیتی ہے کڑی ...

مزید پڑھیں »

اے عورت

‎اگردنیا میں ایک ہزار مرد تمہاری محبت میں مبتلا ہیں تو رسول حمزہ بھی ان میں سے ایک ہوگا! ‎اگر ایک سو مرد تم سے محبت کرتے ہیں تو ان میں رسول کو بھی شامل کرلو! ‎اگر دس مرد تم سے محبت کرتے ہیں، تو ان دس میں رسول حمزہ ...

مزید پڑھیں »