شاعری

غزل

ستارہ وار جلے پھر بجھا دیئے گئے ہم پھر اس کے بعد نظر سے گرا دیئے گئے ہم عزیز تھے ہمیں نوواردان کوچۂ عشق سو پیچھے ہٹتے گئے راستہ دیئے گئے ہم شکست و فتح کے سب فیصلے ہوئے کہیں اور مثالِ مالِ غنیمت لُٹا دئیے گئے ہم زمینِ فرش ...

مزید پڑھیں »

بیاتئی دستاں رژاں

  توشہ لوغا درابیا کہ مں نشتغا راہ چاراں تئی، مں دِہ یاراں تئی توکہ بھِتانی پُشتا وثا دارغئے بھِتاں نیستیں زواں گونتہ ٹوکے کننت نئیں کہ ساہ مان نِش کہ تئی دستا گِرنت نئیں کہ گوشے پہ آواز دار نت ہمے نئیں کہ پاذے ہمیشاں کہ سِرنت گُرے گونتہ ...

مزید پڑھیں »

آنسووْں سے بنے

  آنسووْں سے بنے ہوےْ ہم لوگ ٹھیس لگ جائے تو ندی کی طرح پہروں بہتے ہیں اپنی آنکھوں میں !۔ کوئی چھیڑے تو کچھ نہیں کہتے صورتِ گل ہوا سے کیا شکوہ شام کی آنچ سے الجھنا کیا ہاں مگر سانس میں کوئی لرزش مدتوں ساتھ ساتھ رہتی ہے ...

مزید پڑھیں »

"ہوا باسی نہیں ہوتی” ہوا باسی نہیں ہوتی تری خواہش کی خوشبو،تیری یادوں کی فضا باسی نہیں ہوتی کبھی تپتے بگولوں میں ترا، رقص رواں دیکھوں کبھی برسات کی بوندوں میں عکس جاوداں دیکھوں یہ خاک دشت ہے آب آشنا، باسی نہیں۔ ہوتی کبھی مہتاب کی صورت، مری سانسوں کو ...

مزید پڑھیں »

خاموش رہو

  کون مسافربرسوں سے سنسان پڑی خاموش گلی سے گزرا آنکھیں ملتی رات کی اوک میں شام گلابی گاگر خالی کرتے کرتے چونک اٹھی کب ریشم سے ریشم الجھا اور بجتی ہوئی سرگم سے ٹوٹ کے سانس گری کس آہٹ نے دل میں پھیلی اک ویرانی پر پاؤں دھرا کب ...

مزید پڑھیں »

نظم

بچپن کی طرح لگتا ہے اب بھی وہ میرے دل کو چونی کی طرح پیر سے دبائے …..رستا روکے کھڑا ہے میں تصور میں بھولے سے ہاتھ جھٹک کر کہتی ہوں ہٹ جاؤ رستے سے .. لیکن وہ تو کانٹآ بن کر اب تک دل میں گڑا ہے

مزید پڑھیں »

اللہ اللہ تئی امن

اللہ اللہ تئی امن تئی اکبری نامیں مزن تہ لاشریک بے تمن تہ لامکان بے وطن تہ بے مثال بے بدن نئیں آف واڑتئے نئیں نغن خسا نہ دیزا تئی حسن تئی قدرت آں گل اے چمن پیدا خزے شاہیں شہن فہ عالم آ بیز ضمن آخت وہی آڑتئی سمن ...

مزید پڑھیں »

یا حداوند و کردگار پاکیں اے جہاں پُر حوف و حطرناکیں جنگل و  وادی او پِڑن ڈاکیں مانینِش شیر و گژدم سوزاکیں ھژدہ ہزار مہلوک سر بُر ئے حاکیں بکترین انساں شاہ ِ لولاکیں باشعورین او چُست و چالاکیں تابعیناں گوں مئے حضور پاکیں چندے ولی اَنت او مرد اَنت ...

مزید پڑھیں »

غزل

زِندگی لئیوے ِ دِہ نَیں، بارے دِہ نَیں!۔ ھا ھمنکَر کَستریں کارے دِہ نَیں!۔   قَولئے پھروشغ، اَؤلا مَرک اث مڑدمئے نی ھمے عَیبے دِہ نَیں، مِیارے دِہ نَیں!۔   مَں مَروشاں جْزغایاں ایوکا سَنگتا َ مورے دِہ نَیں، مارے دِہ نَیں!۔   مہر داثیں، مہر گِفتیں ھر کَسا بے ...

مزید پڑھیں »

شپے ما کاتکیں وَختے

شپے ما کاتکیں وختے عجب جاہ اَت شرابی قدّحے رِتکیں   نگاہاں یکّ و دومی آ ہزاراں داسپانانی ہمک  پیچاں گوں الوت کْت بَڑاں اَرسے تلاوت کْت   شپے ما کاتکیں وختے سواداں موسمانی رنگ باہینت اَنت درہیں پیادگ جَنائینت اَنت ما نشت و کْوزگانی اَنگ ٹاہینت اَنت   گْلاباں ...

مزید پڑھیں »