شاعری

خود سے باہر

تب پھر میں نے ایک ہی جست میں اپنے بدن کو چھوڑ دیا تھا یہ کل شام کی بات ہے جب ان دیواروں کو گھورتے گھورتے ساتواں دن بھی بیت چکا تھا سات زمینیں ، سات جہان یا۔۔۔ سات جنم اور سات قبیلے سب کچھ جیسےگڈ مڈ ہو کر سانس ...

مزید پڑھیں »

کورا کاغذ! ۔۔۔ (“آصف فرخی“ کے لیے)

وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس کاغذ پر اْس کو کچھ لکھنا تھا کیا لکھنا تھا؟ کوئی نام گام یا کوئی کام نام کبھی جو لے نہیں پاتے لیکن اْس کا پہلا حرف لکھ لیتے ہیں!۔ یا وہ گام جو ہم سے کبھی کا چھوٹ گیا ...

مزید پڑھیں »

کورا کاغذ! (“آصف فرخی“ کے لیے)

وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس کاغذ پر اْس کو کچھ لکھنا تھا کیا لکھنا تھا؟ کوئی نام گام یا کوئی کام نام کبھی جو لے نہیں پاتے لیکن اْس کا پہلا حرف لکھ لیتے ہیں!۔ یا وہ گام جو ہم سے کبھی کا چھوٹ گیا ...

مزید پڑھیں »

نظم

چرواہا خواب دیکھتا ہے اس کی ایک بھیڑ گم ہو گئی صرف انچاس بھیڑیں باقی ہیں چرواہا خواب دیکھتا ہے اس کی تین بھیڑیں زخمی ہیں صرف چھیالس باقی ہیں چرواہا خواب دیکھتا ہے بھیڑیے نے اس کے گلے پر حملہ کر دیا بھاگتی منتشر ہوتی بھیڑوں میں سے پیچھے ...

مزید پڑھیں »

نئی پیدائش

مرا تمام تر وجود ایک اداس مصرع ہے جو تمہیں سحر ہونے تک دہراتا رہتا ہے ایک ایسا پھول جو تازگی سمیت پھیلتا جاتا ہے میں نے ایک آہ بھر کر تمہیں نظم میں ڈھال لیا اور پانی ، آگ اور درختوں میں پیوند کر دیا شاید زندگی اک طویل ...

مزید پڑھیں »

اے حانی

یہ جیون بھی ایک جُوا ہے اے حانی تیرا بیلی ہار گیا ہے اے حانی مُجھ میں اِک لشکر نے پڑاؤ ڈالا ہے تھک کر شاید چُور ہوا ہے اے حانی میرے آنسو میرے دل پر گِرتے ہیں کوئی مُجھ سے رُوٹھ گیا ہے اے حانی جانے کیسا درد ہے ...

مزید پڑھیں »

شئیر

سنج کناں بورے ٹونڈ کناں پاغے من ہمے کلانی رذا داثہ سومری یے گوں تنگویں سہثاں ماں سرا گِندی پِیرِہّ تاخاں ار منی بالاذا نہ واجھائنی زیان او پیرہّ من تھرا دیثیں شنگیں گونڈل و براہندغ بیاختیں پشت دیمیا تھرا گپتیں گڈثیں سر دھڑ کثیں دیرا ڈاہ بڑتیں ورنایاں گشینی ...

مزید پڑھیں »

روچا کئے کشت کنت

روچا کَے کُشت کنت؟ رُژنا کَے داشت کنت؟ سْیہ شپ ئے جُلگہا شپچراں گَل کُتگ روچئے بیرانی ئے زِندئے شاہِنشہ ئے مرگ ءِ جارِش جَتَگ بِیدِ رُژن ئے دَرا تَنگہیں فِیبُسا گُل زمین, آسمان پور, ماہ, کلکشان نیستی ئے شپ جَتیں بِیدِہا گار بنت مِہر گُٹ گِیر بیت لَہڑ ایر ...

مزید پڑھیں »

جوگن

ریت کے بگولے صحرا میں تیرے قدموں سے لپٹے ابھی تک محو رقصاں ہیں ہوا بھیرویں گاتی پیڑ کو یوں چھو کر گزرتی ہے جیسے تمہاری مسکان کا راز اسے بتانے آئی ہو بستی کے چرند سارے تیرے چنری تیرے جھومر تیری ونگوں کی چھنکار سے دم بخود کھڑے ہیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

چھم دہ انڑزی نیاں سوزاں شہ دل دہ زہیر نئیں تھئی گنوخیں عاشقا را نام دہ تھئی گیر نئیں گڑدغاں ہرو شہ راہا تھؤ نواں بدنام بئے ماں تھرا پہریزغاں تھئی لوغ اکھر دیر نئیں کل نہ ایں کہ تھانرگا تھا چیرثا سینغ منی گندغاں من دہ تھئی دستاں کمان ...

مزید پڑھیں »