مصنف کی تحاریر : اکبر بارکزئی

روچہ کئے کشت کنت

روچا کَے کُشت کنت؟ رُژنا کَے داشت کنت؟ سْیہ شپ ئے جُلگہا شپچراں گَل کُتگ روچئے بیرانی ئے زِندئے شاہِنشہ ئے مرگ ءِ جارِش جَتَگ بِیدِ رُژن ئے دَرا تَنگہیں فِیبُسا گُل زمین, آسمان پور, ماہ, کلکشان نیستی ئے شپ جَتیں بِیدِہا گار بنت مِہر گُٹ گِیر بیت لَہڑ ایر ...

مزید پڑھیں »

آخری پتا

یہ 1890 کی دہائی کی بات ہے کہ نیو یارک کے علاقے ” گرین وچ ویلیج ” میں بہت سے مصور رہا کرتے تھے۔۔۔ سُو اور جونسی بھی مصور تھیں۔۔ یہ دونوں لڑکیاں مئی کے مہینے میں ایک دوسرے سے گرین وچ ویلج کے ایک ریستوران میں ملی تھیں۔۔۔ ” ...

مزید پڑھیں »

دھند

چاچا خیر دین آج بہت افسردہ بیٹھا ہوا تھا، بات بھی پریشانی کی تھی، صبح سے رات ہوگئی تھی مگر پچھلے دو دن کی طرح آج بھی کوئی گاہک نہیں آیا تھا ۔۔۔ چاچا خیردین یہی سوچ رہا تھا کے کاش اگر ایک بھی گاڑی صاف ہونے والی آجاۓ تو ...

مزید پڑھیں »

آفاقی کہانی

یہ پھڈہ سالوں سے چل رہا رھا تھا۔ بچپن سے لے کر آج تک وہ اس شدید کوشش اور خواہش میں مبتلا رہی کہ وہ اپنے لہو میں گردش کرتی اس طاقتور اور لازوال کہانی کو پنے پر اتار سکے۔ لیکن نٹ کھٹ کہانی کبھی ہاتھ تو کبھی پیر کی ...

مزید پڑھیں »

چورہ

منی گِس ءَ چہ کمّے پَشت اَست یک چورویں جنکے آئی ءِ پِت ءُ مات ھردوکاں چیزے وھد بیت کہ امروز ی یل کتگ ءُ رسترانی بازار ءَ ایوک کتگ جِنکوک ءَ چہ درکسّانی ءَ وانگ ءِ واھگ بیتگ بلے بژن اِنت کہ تنگدستی ءَ چہ آئی ءِ اے واھگ ...

مزید پڑھیں »

اماں جنتے

کپکپاتے ہاتھ، چہرے پر جھریوں کا جال، منحنی ساجثہ، میں نے اس پر طائرانہ نگاہ ڈالتے ہوئے پوچھا۔ ”اماں! نام کیا ہے! کام کر لوگی؟“۔ سوچا کہ یہ بوڑھی لاچارسی عورت میری کیا مدد گار ہوگی۔ گھر کے بظاہر معمولی کام بھی جان مانگتے ہیں اور یہ نحیف جان تو ...

مزید پڑھیں »

آخری چیک

اُس کی آواز کا جادو دشت اور کہساروں میں بہتے چشمے کی آواز بن کر دھیمے سروں سے گنگنا تا۔ وہ جب لوک گیتوں کے الاپ کے ساتھ مست ؔ، سمو ؔ، شہداد،مہناز،ماہ گل اور سیمک کے اشعار گنگنا تا تو اُس کی آواز کے اتار چڑھاؤ کے ساتھ محفل ...

مزید پڑھیں »

جوگن

ریت کے بگولے صحرا میں تیرے قدموں سے لپٹے ابھی تک محو رقصاں ہیں ہوا بھیرویں گاتی پیڑ کو یوں چھو کر گزرتی ہے جیسے تمہاری مسکان کا راز اسے بتانے آئی ہو بستی کے چرند سارے تیرے چنری تیرے جھومر تیری ونگوں کی چھنکار سے دم بخود کھڑے ہیں ...

مزید پڑھیں »

صاب جی!

ایویں نئیں تے ڈھولا تیرے پچھے پچھے آندی آں ہو کہ مجبور ترے ترلے میں پاندی آں عشق دا روگ بُرا۔۔۔ ہائے۔ گاڑی کے سائیڈ والے چھوٹے سے شیشے میں طوفان برپا ہوگیا۔ بیک وقت کان میں اِس گانے کی آواز اور شیشے میں متحرک عکس۔۔ میری نظریں منجمد ہوتے ...

مزید پڑھیں »

گُراغ بال دیئغ شئیر

سیاہیں گراغ صذ مرادیں مالانی سرا نندیث و آنہاں را چنگلاں جنت۔ وختے مالاں را وروخیں چُچڑانا پٹیث۔ وختے لوغ کئیث حیران و منگھی آنی زڑدیں موشناں باڑت۔ گُراغ ئے اے عادت بھاگیایاں را وش نئیں پوانکہ آنہاں گُراغانی بال دیئغا پہ شئیر گشتغ انت۔گراغ دہ ہمے ماحول ئے سہدار ...

مزید پڑھیں »