مصنف کی تحاریر : وقار بلوچ

ڈیہی

پھلانی کیاری باں گڑدیث پذا باری اَولی ہماں یاری باں لہڑاف وہغّا بی مرگانی دِہ ٹولی باں پیغامے دیئغا بی مرگے کہ توارے کاں چمّاں شہ گوارِش بی سیرآف ڈغارے کاں کوہانی نذارغ باں تئی یاد جُڑی بنداں گوں گوئشتنا گوارغ باں بورانی سواری باں ناں سمّل چَہٛوائی ناں مست ...

مزید پڑھیں »

سچ

سچ بڑا مجرم ہے زنجیروں میں جکڑا گیا ہے روزِ ازل سے پکڑا گیا ہے پکڑ جکڑ کر مارا گیا ہے جھونکا گیا ہے جلتے تیل کڑھائی میں چوٹی پر سے پھینکا گیا ہے کولھو میں مسلا گیا ہے ہاں پر پھر بھی اس کی ریِت رہی وہی ابھاگی جس ...

مزید پڑھیں »

بہار قرنطینہ میں ہے

زرد رتوں.بیمار فضاؤں سے کہدو, ابھی خوشبو کو گلاب رنگوں کو خواب رگوں میں جمے سیال کو لہو لکھنا,ہے. بے کیف و ساکت منظرکو خوش خصال لکھنا,ہے ان چڑیوں کو لوٹنے دو فضا کے حبس میں جو محصور ہیں زرد رتوں کو سرخ گلال لکھنا ہے اس کرلاتی خاموشی سے ...

مزید پڑھیں »

کوئٹہ کا ’مرحوم ڈان ہوٹل‘

ڈان ہوٹل بلوچستان کی سیاسی ،ادبی اور سماجی تاریخ میں بہت اہمیت کا حامل رہا ہے۔ یہ ہوٹل بھی کوئٹہ کے دیگر بڑے ہوٹلوں کی طرح ایرانیوں کی ملکیت تھا۔ پچھلی صدی کی ستر اور اَسی کی دہائیوں میں یہاں کے ہوٹل مختلف سماجی،سیاسی اور ادبی گروہوں کے ٹھکانوں کے ...

مزید پڑھیں »

غزل

کاغذی گلابوں کی شاعرانہ محفل ہوں درد ہوں محبت کا عاشقانہ محفل ہوں تو فلک کا تارا اور میں ہوں ریت صحرا کی اس زمیں سے امبر تک غائبانہ محفل ہوں کوئی مجھ کو بھی دیکھے میں بھی ہوں انوکھی سی دھیمے دھیمے لہجے میں وحشیانہ محفل ہوں شور سن ...

مزید پڑھیں »

مائخان

آسمان پر غروبِ آفتاب کی زردی نے ایک عجیب اداسی پھیلا دی تھی۔ سمند ر میں چلتے چلتے وہ کافی دور نکل گئی تھی۔لہریں جب اس کے پاؤں سے ٹکرا کے مڑتیں تو ایک لہر سی اس کے دل سے بھی آ ٹکراتی اور سمندر کی لہروں میں گم ہو ...

مزید پڑھیں »

پوہیں ناپوہ

پہوالانی شنزار, مالانی ٹلو آنی وشیں آواز۔۔۔ شہے شہے۔۔ٹنگ ٹنگ۔۔۔ منی چم گیست سالا رند مرشی صحو ا بانگو بانگا کھلنت۔ گوش اکھر سالا رندا ہمے وشیں آوازاں اشکونغئے ثنت۔ دل نہ گوشغیں کہ ہمے آواز کھٹاں نہ کہ بانگو آنی بانگ آہنجاماں۔۔۔ اکہر سالا رندا وثی وطن او وثی ...

مزید پڑھیں »

Eternity

کئی ہزار برس بعد کوئی خاک اگر کسی کی خاک سے آکر کسی نگر میں ملے سبھی حلاوتیں سب تلخیاں سبھی آزار محبتوں سے رچے دن عداوتوں کے شرار وہ چند ساعتیں قربت کی عمر بھر کا فراق جو زندگی میں سمیٹے تھے وہ سبھی اوراق کہ جن پہ پھر ...

مزید پڑھیں »

مگر ایک ساعت

کوئی ایک جملہ کوئی ایک لمحہ کوئی ایک ساعت مٹا کے دوبارہ سے لکھ دے ہمیں کہاں ایسا ہوتا ہے۔۔ لیکن ہوا بہت کم سخن ایک ساعت مخاطب تھی ” تم ایسی دیوارِ گریہ ہو جو سارے دکھ سوک لے خود پہ بیتے ہوئے وقت کی سب تہوں ساری پرتوں ...

مزید پڑھیں »

ہڑتال

نیپلزا ٹرام ئے کارندہاں ہڑتال کتگ ات ۔ ریویرادی کیایا آ چے سرا تا چا سرا ہشکیں کنڈیکٹر ، ڈرائیور و اوشتاتگیں ٹراما ابید دگہ ہچ گندگا نیاتک ۔ وشدل و گپّوئیں نیپلزی آنی یک مزنیں مچّی یے پیازادیلاویتوریا آ مچّ ات ۔ چہ ہمیشانی سر ئے برزی آ و ...

مزید پڑھیں »