*

یا حداوند ءُ کردگار پاکیں
اے جہاں پُر حوف ءُ حطرناکیں
جنگل ءُ وادی ءُ پِڑن ڈاکیں
مانینِش شیر ءُ گژدم سوزاکیں
ھژدہ ہزار مہلوک سر بُر ءِ حاکیں
بکترین انساں شاہ ِ لولاکیں
باشعورین ءُ چُست ءُ چالاکیں
تابعیناں گوں مئے حضور پاکیں
چندے ولی اَنت ءُ مرد اَنت زوراکیں
چندہا حاکم اَست گروناکیں
چند غریب اَنت ءُ مرد اَنت بیباکیں
نئے طاقتے دارنت نہ لبز ءُ گویاکے

اے اتکگیں دنیا جیڑہ ءُ جاکے
دلفریب اِنت ءُ سکّیں چالاکے

ہر کس ءَ دنیا ءَ کَتگ گاڑی
پرشتگ اَنت کُوٹ ءُھَژدریں ماڑی
واجہیں مردم بیت اَنت بمباری
ہر رو دگہ نوکیں حکم بنت جاری
مال غریبانی بیت اَنت سرکاری
حاندان بیت اَنت کوٹ ءُ درباری
ما نہ دیست چوشیں وقت چِد ءُ ساری
غیرت ءُ لجّ ءَ بال کُت پیراری

 

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*