ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : دسمبر 2020

سچ بولو گے؟۔۔۔۔

  انسانوں کے بھیس میں بیٹھے وحشی کو وحشی بولو گے۔۔۔۔ کٹ جاؤ گے مر جاؤ گے دیواروں میں چنواؤ گے زندانوں میں جل جاؤ گے سچ بولو گے؟ مر جاؤ گے بیچ سڑک میں آ کر کوئی چند پیسوں کی اک گولی سے چھین کے سانسیں لے جائے گا ...

مزید پڑھیں »

انسانیت

  میرے چاروں طرف میں ہوں!۔ مگر کچھ اجنبی ٹوٹے ہوئے چہرے، پرانے لوگ ، اور انجان، ان دیکھے سے سایے مجھ کو پیار میں نجانے کیوں؟ عزیزوں،خون کے رشتوں سے زیادہ آج کل مجھ کو بھکاری ، اور وہ مزدور مجھ کو اپنے لگتے ہیں!۔ میں جب بھی اُن ...

مزید پڑھیں »

خواب

  دھمم دھمام ڈھول پر وہ دلنواز موگری برس پڑی تو خلق کے ہجوم ناچنے لگے فضائیں ناچنے لگیں ہوائیں ناچنے لگیں وہ جوش ، وہ خروش رونما ہوا کہ عرش سے زمیں کو جھانکتے ہوئے نجوم ناچنے لگے مگر یہ خواب دیر تک چلا نہیں (سراب جوئے آب میں ...

مزید پڑھیں »

PARASITE CLASS

  بستی بستی نام ہے جن کا جن کے چرچے قریہ قریہ جن کے گرد بنے ہیں ہالے تیز سنہرے رنگوں والے جن کے پاس ہیں جال نرالے مقناطیسی دھاگوں والے جن کے پاس طلسم ہیں ایسے جو بھی ان کی جانب دیکھے بس وہ ان کی جانب دیکھے جو ...

مزید پڑھیں »

کتاب ”گندم کی روٹی“

افغانستان نژاد بلوچی ادیب عبدالستار پردلی کا لکھا گیا ناول ” سوب“ کا اردو ترجمہ واجہ ڈاکٹر شاہ محمد مری صاحب نے ” گندم کی روٹی“ کے نام سے کیا ہے۔ یہ ناول کسان محنت کشوں کی جدوجہد کو سامنے رکھ کر لکھا گیا ہے جنہوں نے افغانستان میں جہد ...

مزید پڑھیں »

کتاب ”گندم کی روٹی“ پر تبصرہ

افغانستان نژاد بلوچی ادیب عبدالستار پردلی کا لکھا گیا ناول ” سوب“ کا اردو ترجمہ واجہ ڈاکٹر شاہ محمد مری صاحب نے ” گندم کی روٹی“ کے نام سے کیا ہے۔ یہ ناول کسان محنت کشوں کی جدوجہد کو سامنے رکھ کر لکھا گیا ہے جنہوں نے افغانستان میں جہد ...

مزید پڑھیں »

اے ساھگا لیلو جتگ!۔

  ہر شپا درکپاں مراداں گوں دمبراں چنت برا وتی توکا گوں گمانی ھزابی آ بلکیں دانکہ ویرانیں جنگلے بئیت انت من چراگے گماں گوں روک کتیں من ہمے درچک ئے ساھگے آ بوپتیں چو ندارہ کتیں وتی پیما اے ھدا کمو زاہر ا بیتکیں تنگیں مرگے ئے ندارہا ترمپے ...

مزید پڑھیں »

اژما مْریذ دْراہا شتہ

حمید لیغاری اژما مْریذ دْراہا شتہ ھانی دہ اِشتئی بانہڑاں میری سلِہہ گوں جابہاں رِندی تْرا لوھیں کماں ھانی گوں کونجی گڑدنا گڑتو دِہ رِنداں گؤشتغث اژما مریذ دراہا شتہ ٹَپاں وثی پاشینغث براں تلاں گوازینغث درداں چہ ایکا نارغث ھانی زھیراں گوارغث گڑتو دِہ رنداں گؤشتغث اژما مریذ دراہا ...

مزید پڑھیں »

اقلیدس ! زندگی سنو

    دائرہ مرکزِ یعنی مرے دل کے سنگھاسن پر براجمان “تم ” اور دائرے کے تین سو ساٹھ زاویوں پر یکساں پرکار کی طرح گھومتی ہوں میری “میں ” تکون زاویہ قائمہ پر زندگی میں کسی زندہ لمحہ میں ٹہرنے کی کوشش کرتے ہوئے میں ، تم اور وہ ...

مزید پڑھیں »

آخرِ شب کی بازی

آسمان پہ شمال مغرب کی جانب اِک آخری تارہ رات کے آخری پہر ٹِمٹِماتا ہے گو ہزاروں نوری سال کے فاصلے پر ہے پھر بھی اندھیرے اور اُجالے دونوں سے ٹکرتا ہے تُم کہیں پہ ہو اور میں کہیں پر ہوں اَن گنت میلوں کی دوری ہے دوری کا سارا ...

مزید پڑھیں »