ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : نومبر 2020

تاج محل

تاج تیرے لیے اک مظہرِ الفت ہی سہی تجھ کو اس وادیِ رنگیں سے عقیدت ہی سہی میری محبوب کہیں اور ملا کر مجھ سے بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی مردہ شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا ان گنت لوگوں ...

مزید پڑھیں »

گوادر کے ماہی گیر

گوادر کے ماہی گیروں کے لیے روزی کمانے کے سارے راستے بند کیے جارہے ہیں۔کبھی کسی ایکسپریس وے کی تعمیر کے بہانے ، کبھی کوئی اور عذر بناکر۔ صدیوں سے ماہی گیری ہی اِن محنت کشوں کاآبائی پیشہ اور بچوں کے زندہ رکھنے کا وسیلہ رہی ہے ۔ سی پیک ...

مزید پڑھیں »

عالم ئے اسرار

  کوہ باریں بِچکند اَنت؟ گوات باریں گُژنگ بنت؟ نود باریں تُنگ بنت؟ مور باریں سر شودانت؟ باریں پُل ہم گند اَنت؟ رَنگ ہم نپس کش اَنت؟ روچ وَشدلی زانت اِنت؟ ماہ باریں سُہبت کَنت؟ آس باریں آپُس بِیت؟ آپ واب ہم گند اِنت؟ باریں سِنگ وڈوک و ڈل چُک ...

مزید پڑھیں »

*

  اش مئیں مُرتئی آ رَندا، کوکھر پھذا نہ گُوارنت کو کھر ضرور گُوارنت، مئیں چھم پھذا نہ گُوارنت اش بندو بُرّ بس بنت، جُڑ بستغ ایں غمانی پونچھا رغام زیری، سر گوار پھذا گُوارنت گردی سرے نہ زِیری، فتہ ئے دڑو شورش دڑد نخنت دفن گاہ ہنگر پھذا نہ ...

مزید پڑھیں »

*

  اْس کے آنکھ جھپکنے کی آواز ابھی تو آئی تھی خواب کا در بھی کْھلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی کس نے کہا تھا جاں دینے کی رسم کبھی کی ختم ہوئی؟ پروانوں کے جلنے کی آواز ابھی تو آئی تھی زنداں کی سونی دیواریں کس کے گیت ...

مزید پڑھیں »

چندن راکھ

  ایکٹ (1) صحن میں تنہا ایزی چیئر پرنیم دراز آکاش پر ٹمٹماتے تارے گن رہی تھی۔ نپے تلے اُٹھتے قدموں کی آہٹ کانوں میں گونجی۔ اپنی انگلیوں کا دباؤ اپنی کنپٹیوں پر محسوس کیا۔ درد ہوک کی طرح اُبھرتامٹتا تھا۔ ”یہ گھر ہے کہ کنجڑ خانہ!“۔ اس نے چونک ...

مزید پڑھیں »

کیامحبت کہیں کھو گئی ہے

  کیا محبت کے لئے کبھی تمہارا لباس سر نگوں نہیں ہوا یا تمہارا دل آراستہ بالکنیوں سے فاختاؤں کے ساتھ ہوا میں بلند نہیں کیا گیا میں نے رقص کو فاصلے اور رقاصہ کو قریب سے دیکھا وہ تھک کر میرے زانو پر سو سکتی تھی مگر وہ اپنے ...

مزید پڑھیں »

نظم

  ایک کمزور بنیاد پر ایستادہ یہ بوسیدہ دیوار ، جو اپنے سائے سے محروم ہوتے ہوئے اپنے نابود ہونے سے بھی بے خبر۔۔۔!۔ جس کے چار وں طرف وحشتوں کا نگر جن کے اعصاب پر میرے ہونے کا ڈر ۔۔۔!۔ روز آتا ہے وہ روز اپنا تماشا دکھاتا ہے ...

مزید پڑھیں »

غزل

  مئیں زوانا ٹونک یلہ داثہ توار یلہ داثہ مئیں چماں چین یلہ داثہ خما ر یلہ داثہ ڈنگ انت بند بنداں ہوشیاں مئیں ہوناں تھؤ بوختو زلفانی سیاہ مار یلہ داثہ مروشی دیثو تھئی ہپت رنگیں بروان دریناں شموشتہ ہمشاں رنگانی چھنڈکار یلہ داثہ لالی تہ گلا بانی پجھاریں ...

مزید پڑھیں »