ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : اکتوبر 2020

بلوچستان کی اولین عشقیہ داستان ۔۔۔ آسٹریلیا کا پنّوں،مکران کی سسی

ہمارا بلوچستان دو بلوچستانوں سے مل کر بنا ہے۔ملینوں سال قبل (جب ہم انسان ابھی پیدا نہیں ہوئے تھے) آج کے مغربی بلوچستان کی چاہت میں زمین کا ایک بہت بڑا ٹکڑا‘ قطبِ جنوبی والی منجمداور برفانی زمین سے علیحدہ ہوگیا۔یہ بہت بڑا ٹکڑا تھا۔ اس لیے رینگ رینگ کر ...

مزید پڑھیں »

آل انڈیا بلوچ کانفرنس جیکب آباد

ہم نے آل انڈیا بلوچ کانفرنس پارٹی کے قیام کے ارادے سے لے کر 1932میں اُس کے کامیاب اولین سالانہ جلسے کے انعقاد تک ساری دستیاب تفصیلات دی ہیں ۔ہم نے اس پارٹی کے عہدیداروں اور مرکزی کمیٹی کا انتخاب ، اِس کے منشور آئین اور دیگر دستاویزات کی تیاری ...

مزید پڑھیں »

جہاں جسکیں دَہ روش

چوکہ ہمے ڈولیں ہر زمانہ اے آ بی، شہر ئے عامیں زیندھ دہموذ کہ بیثہ بیثہ انقلابا نظر انداز کناناں روغئے چلاّناں۔ شاعر شیئراں لکھغئے ثنت………… پر انقلابہ باروا نہ۔ حقیقت پسندیں آرٹسٹ مِڈایول ئے روس ءِ سوادھانی بزاں انقلابا سوا دوہمی ہر چیز ئے پینٹنگاں ٹاہینغئے ثنت۔ صوبہاں ژہ ...

مزید پڑھیں »

آزادی کی آزردگی

تم اپنے آنکھوں کی بینائی گنواتے ہو اپنے دمکتے ہاتھوں کو مزدور بناتے ہو اُن درجنوں روٹیوں کا آٹا گوندھتے ہو جن میں سے ایک نوالا بھی نہ چَکھ پاو تُم آزاد ہو ، دوسروں کے غلام بننے کو امُراء کو اور امیر کرنے کو، تُم آزاد ہو وہ جس ...

مزید پڑھیں »

آرٹ اور سماجی زندگی

1 آرٹ کا سماجی زندگی سے تعلق ایک ایسا سوال ہے جو ہر اُس لٹریچرمیں موضوع بحث بنتا ہے جو اپنے ارتقا کی ایک واضح سطح تک پہنچ چکا ہو۔ اکثر اس کا جواب متخالف ومتضاد معنوں میں دیا جاتا ہے ۔بعض لوگ کہتے ہیں کہ آدمی سبت (آرام کا ...

مزید پڑھیں »

کروپسکایا،اسکرا کی ایڈیٹوریل سیکریٹری

کروپسکایا لینن کی طرح ایک پروفیشنل انقلابی تھی۔ اُس نے بیرون ِ ملک جلاوطنی محض برائے جلاوطنی نہیں جھیلی۔ وہ ایک کاز کے لیے دربہ در رہی۔ اور اسی کاز، اسی مقصد ہی کو سامنے رکھا۔اٹھنے بیٹھنے میں، وطن اور پروطن میں، جیل اور جبر میں۔ا ور وہ کاز انقلاب ...

مزید پڑھیں »

سمو بیلی

” فکر مست محض نظریاتی دانشورانہ نکتہ وری نہ تھی-یہ تو عوامی پذیرائی اور قبولیت کا ایک ایسا انقلاب تھا جسے جان ریڈ کے بقول،”ہزاروں لاکھوں کان ایسے تھے جو اس کی باتیں سننے کے لیے جیسے پہلے ہی تیار ہوں”- ذرا غور کیجیے کہ غربت و افلاس میں پڑا ...

مزید پڑھیں »

محبت کا سر کاری ملازم

سانپ سیڑھی کھیل نے زہریلے سانپوں سے رنگوں کی کاشت کچھ یوں کی محبت سرکاری ملازم ہو گئی جووقت پہ سوتی جاگتی ، کھاتی پیتی تو ہے لیکن کنڈلی مارے بیٹھی رہتی ہے زہریلے ناگ رنگین ہوتے جاتے ہیں اور محبت اور بهی خفتہ محبت کا سرکاری ملازم زپر باد ...

مزید پڑھیں »

گارشیا مارکیز اور "محبت کا انتظار”

اپنی وفات سے پہلے، جب وہ آہستہ آہستہ ہر چیز کو بھول رہا تھا، تو اس نے اپنے پڑھنے والوں کے نام جو آخری خط تحریر کیا، اس میں لکھا تھا کہ "آدمی اس وقت بوڑھا ہوتا ہے، جب وہ محبت کرنا ترک کر دیتا ہے”. یہ الفاظ اس لکھاری ...

مزید پڑھیں »