ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : ستمبر 2020

غزل

ستا د‌ ښائست او ګل ورین نظر بلا واخلم وږمه وږمه شمه او سپړ شم چي نوم ستا واخلم چي شم ورپېښ کله په کرکه او په مينه باندي پرېږدم تياره لمن خوره کړم او رڼا واخلم وایه چي څنګه به شي ورک زما د زړه غمونه وي ستا فراق ...

مزید پڑھیں »

*

چو بے ترک ءُ الگار ھمچو کہ من صدایاں گرفتار ھمچو کہ من بہ بِی ہر کسے یار ھمچو کہ من مہ بِی کس سُبکسار ھمچو کہ من اے زِر چو منا ساکت ءَ ساکت اِنت وتی اندر ءَ گار ھمچو کہ من شپے گوں وتا دارگی اِنت منا شپے ...

مزید پڑھیں »

سَنیہا

اُٹھی سَئیݨ سُوہݨی ذدا ڈیکھ تاں سہی تیڈے چندربھاگے دے پاݨیاں وچ ول رتول جھال پئی ڈیندی اے ول عورت دا اتھاں قتل تھیا اے ول مرد کوئی ازلی چُپ اچ ھن ول وُسوں کوں کوئی نانگ لڑئے ول دھی توں منہ لکیندے َپئین ول عزت دے نانویں سولیاں ھن ...

مزید پڑھیں »

اوکاڑہ کا دانشمند

ہم تو اوکاڑہ کو میر چاکر کے مقبرے کے حوالے جانتے تھے۔ بعد میں پھر کامریڈ عبدالسلام نے اس مقام کو شہرت بخشی۔اوکاڑہ پھر”آموں کے پھٹنے“ جیسی خوبصورت تحریر والے محمد حنیف کے ریفرنس سے اچھا لگا۔ یا پھر اوکاڑہ کو ہم وہاں کے ملٹری فارم میں موجود کسان تحریک ...

مزید پڑھیں »

۔

عظمت رفتہ کے ویران مناروں میں بسے عہد گم گشتہ کی خاک سنبھالے ہوئے لوگو آئینے! جن میں نظر آتا ہے تمہیں ماضی اپنا ماضی! جو امروز سے آگاہ ہے نہ فردا سے جڑا ماضی! جو ایام گذشتہ کی مئے سے ہے معمور ماضی ! جو سالہا سال سے ماضی ...

مزید پڑھیں »

میر چاکر کا مزار

ہمارا اگلا دن بھی اپنی جڑوں کی کھوج لگانے کا دن تھا۔ ہم چاکر کا مزار دیکھنا چاہتے تھے۔ ہماری نیم میزبان، ساہیوال کی رِند بلوچ محترمہ حنا جمشید چاکر کے بارے میں جاننے اور اپنا ماضی کریدنے کے سلسلے میں مجھ سے بھی زیادہ جذباتی تھی۔ اس کے خاوند ...

مزید پڑھیں »

رقص درویش

سائنس کی دریافت کے مطابق نظامِ شمسی کے جو نو ستارے سورج کے گرد اپنے مقررہ مدار میں گھومتے ہیں اُن میں سے ایک ہماری زمین ہے۔ اِن نو میں سے چار اندروالے سیارے ہیں: مرکری(رومنوں کے ہاں خداؤں کے پیغامبر کا نام ہے)، وینس(محبت اور حسن کی دیوی)۔ ارتھ ...

مزید پڑھیں »

سماجی تبدیلی کا ایک اہم آلہ

ہم بیرونی طور پر سامراجی قرضوں ،اور دفاعی تجارتی ظالمانہ معاہدوں میں جکڑے ہوئے ہیں۔ داخلی طور پرہمارے عوام تین طرح کے جبر سے نجات کی جدو جہد کر رہے ہیں:1۔طبقاتی جبر(سرداری جاگیر داری اور سرمایہ داری نظام)،2۔ قومی جبر ،3۔صنفی جبر۔ یہاں ایک طرف وہ لوگ ہیں جو مندرجہ ...

مزید پڑھیں »

جہیز میں کتاب تھی

جہیز میں کتاب تھی کتاب میں فرائض و حقوق زوجیت کے سب اصول تھے نکتہ نکتہ بات تھی بات تھی کہ اونٹنی کی پشت پر بھی حکم ہو۔۔۔۔۔ تو بس رضا و رغبت ہی میں بیبیوں کی بخشش و نجاب ہے نہ میرا کوئی ذکر تھا نہ میری کوئی بات ...

مزید پڑھیں »

سٹیٹ و انقلاب

2۔سلح بندیں مڑدانی اُڑد، زیل خانہ وغیرہ اینگلز دیمہ لکھی:۔ ”کہنیں برادری نظامہ (1) برخلاف سٹیٹ وثی رعیتہ اُلکہ وعلاقہانی حسابہ بہرہ کنت۔۔“ مار ہمے بہر قدرتی معلوم بی، پر اشی قیمت کہنیں تنظیمہ خلافا یک دراژیں جُہدے اث کہ نسلانی نسلّاں یا قبیلہ آں دَہ چلتہ۔ ”۔۔۔دوہمی خاصیں دروشم ...

مزید پڑھیں »