ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : اگست 2020

Le Petit Nicholas A Des Annuis کے ایک باب کا ترجمہ

دلچسپ چیزوں کا بیان آج میڈم نے کہا کہ کل کلاس میں "دلچسپ چیزوں کا بیان” ہو گا۔ اس کا مطلب ہے کہ ہر بچّہ کوئی ایک چیز لائے گا، کچھ بھی، مثلاً کسی سفر کی نشانی، اور پھر سب بچّے اس چیز کو غور سے دیکھیں گے، اس پر ...

مزید پڑھیں »

ماں کے نام

میری آرزو ہے ماں کے ہاتھ کی پکی روٹی ماں کے ہاتھ کی بنی کافی ماں کے ہاتھ کا لمس بچپن میرے اندر پلتا ہے جیسے کل آج کا دودھ پی رہا ہے میں زندہ رہنا چاہتا ہوں محض اس لیے کے ماں کے آنسوؤں کے بغیر موت شرمندگی کی ...

مزید پڑھیں »

کوہ سلیمان میں مست کے آثار حصہ دوم

,, مست بیٹلا یکبہئ ,, مست کے آثار جو کوہ سلیمان کے طول و عرض میں بکھرے پڑے ہیں ان میں ایک جس کا آج ہم ذکر کرنے جارہے ہیں وہ ہے ,, مست بیٹلا یکبہئ ,, اس نشانی کے ساتھ ساتھ یکبہئ کا تعارف اور جغرافیہ بتانا لازم ہے ...

مزید پڑھیں »

آخر ترقی کیا بلا ہے؟

بلوچستان ایک ایسا خطہ ہے جس کے حکمران اپنے عوام کو سوائے جھوٹی تسلی اور سبز باغ کے دیکھنے کے علاوہ کچھ بھی نہیں دے رہے ہیں. پچھلے کئی دہائیوں سے حکمرانوں نے اپنی نااہلی اور کمزوری کا ذمہ دار کبھی وفاق کو یا کبھی قبائلی سرداروں کو ٹھہرایا ہے ...

مزید پڑھیں »

ایوان عدالت میں (نذیر عباسی کی شہادت پر کہی گئی ایک نظم)

پتھرائی ہوئی آنکھیں پتھراۓ ہوۓ چہرے پتھرائی ہوئی سانسیس چمڑے کی زبانوں پر پتھرائی ہوئی باتیں فریاد کٹہرے میں رو رو کے تڑپتی تھی قانون کے رکھوالے کل لے کے گئے جس کو اب اس کو یہاں لائیں وہ نعش تو دکھلائیں پتھراۓ ہوۓ چہرے پتھرائی ہوئی آنکھیں چمڑے کی ...

مزید پڑھیں »

ڈاکٹر سلیم الزماں صدیقی پر ڈرامہ نہیں بن سکتا!

’’کیا مشہور پاکستانی سائنسداں، پروفیسر ڈاکٹر سلیم الزماں صدیقی کی زندگی پر ڈرامہ نہیں بن سکتا؟‘‘ یہ سوال گزشتہ دنوں کراچی ادبی میلے (کے ایل ایف) میں ’’پاکستانی ڈرامے کا عروج و زوال‘‘ کے عنوان سے ایک نشست میں کسی خاتون نے کیا۔ اسٹیج پر براجمان، نابغہ روزگار پاکستانی ہدایت ...

مزید پڑھیں »

‎غزل

سامنے اک دوسرے کے کوئی بھی آتا نہیں ‎پھول اور خوشبو کے نظّارے میں آئینہ نہیں ‎پڑھ لیے ہیں غور سے یادوں کے مٹتے حاشیے ‎ داستانوں میں کسی کا نام بھی لکھا نہیں ‎ دور جانا چاہتا ہوں دل کے قبرستان سے ‎پر یہاں سے سیلِ یادِ رفتگاں جاتا ...

مزید پڑھیں »

کتا

صبح کافی دیر تک سونے کے بعد وہ بے دلی سے اٹھا ۔ اسے اپنا سر بھاری سا لگنے لگاتھا۔ جیسے اس پر بھاری وزن لاد دیا گیا ہو۔ رات کو شراب بھی کچھ زیادہ ہی ہو گئی تھی۔اسنے سستی دور کرنے کے لئے انگڑائیاں لیں، تبھی اسکی نظر کھڑکی ...

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)۔ ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)   ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر عابد  رضا دوسری  غزل  بھی  یونہی  ارسال  کر  رہا  ہوں۔  آپ  کو  پسند  آئے تو  اگلی  بار  کے  لیے  رکھ  لیجیے۔ صبر  کے  دشت  میں  اُگ  آئی  ہے  فریاد  کی  رات جانے  کب  گزرے  گی  اس   قریۂِ   برباد   کی  رات آسمانوں     سے     برستے     ہوئے   ...

مزید پڑھیں »