ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : اگست 2020

بچوں کو بوڑھا ہونے کی لوریاں نہ دو

آنکھیں کھڈوں میں ٹائی ڈھیلی وائیٹ شیو بڑھی ہوئی، بولان کی گولائیاں چڑھتی دو انجنی ٹرین جیسی گہری آہیں، سر کے قحط مارے بال خشکابے میں باجرے کی فصل جیسے پریشان بدحال پشیمان، تین تباہ کن عناصرکا پہلے ہی بتادیاتھا: ریت کا سفر غربت کی مہمان نوازیاں اور بڑھاپے کی ...

مزید پڑھیں »

غزل

کِشتہ ما کہ تئی عکسے چَمّ ءِ تہ ءَ شاه جنان اِنت پدا سنْجے چَمّ ءِ تہ ءَ ہرّوچ میم ءِ گُلاب ءَ کہ سوچان کنت روک کُت ءُ تو شُت ئے وابے چَمّ ءِ تہ ءَ تئ جتائی مُدام جِک جَنت بے کساس کپتہ چو کہ گُش ئے بوچے ...

مزید پڑھیں »

پبلک لائبریری نال

نال،،،،،، سنگت اکیڈمی آف سائنسز اور کے مرکزی ڈپٹی سیکریٹری و چائلڈ اسپیشلسٹ ڈاکٹر عطاء اللہ بزنجو کا پبلک لائبریری نال آئے اور سنگت اکیڈمی اور مہر در کی جانب سے نال، اورناچ کیلئے عطیہ کردہ کتابیں طلباء رابطہ کمیٹی نال کے حوالہ کردیں۔ پبلک لائبریری نال میں موجود تمام ...

مزید پڑھیں »

یوٹوبروٹس

کالج میں چھوٹے سے باغیچہ میں ہری گھاس پہ آتی پالتی لگائے بیٹھی تھی۔ سعدیہ کی دور سے لہراتی ہوئی آواز کانوں سے ٹکرائی۔ ”پیریڈ فری؟“۔ ”ہاں یار!“ میں نے اثبات سے سر ہلایا۔ ”تو پھر چلیں مٹر گشت پہ“ سعدیہ نے ہال کی چھت کی ریلنگ کے ساتھ لگے ...

مزید پڑھیں »

نظم

من کہ زیراں قلم انڑز پھیشی ریشی حرف پھیشی جڑی گال لکھاں سری اے قلم بی دفی اش مناں پھول کھاں شف کھزیں روش بی بادشاہیں قلمارا چھیا گوشاں شف تہاری ٹلی روژنائی روزی ماہ رو ایرکھفی گار استار باں مرگ چو چو کھناں گھنڈ مالانی وجنت ھو ھو کھناں ...

مزید پڑھیں »

غزل

زندگی آس ءَ منتگیں پاسے عاشقی درد ءُ غم کہ وسواسے جنت کلیت چَم ءِ لوگ ءَ نوں دُنیا دید مرچاں ہم گرانیں چکاسے آس دریگ ءِ تو لمب ءَ نادینتگ چماں شیپانک ءُ دستءَ کرپاسے تئی گنوگ پتو کوهے بورینیت مینیت برپے ءُ سائیت کہ آسے دریا من ساه ...

مزید پڑھیں »

پاداش

جانتی ہو اُداسی راس آجائے تو زندگی آسان ہو جاتی ہے۔ مشکلیں مشکلیں نہیں لگتیں۔ الجھنیں الجھن میں نہیں ڈالتیں۔جھیل کے پانی کی طرح ٹھہراؤ آجاتا ہے۔ دیکھتی ہو نہ جھیل کے پانی کی سطح کیسے کنول کے پھولوں سے بھر جاتی ہے۔ دیکھنے والے کی آنکھ کو کیسے دھوکہ ...

مزید پڑھیں »

بزنجو کاپاپاخ

یخ ٹھٹھرتا دسمبر تھا۔ درختوں سے پتے بے وفائی کے مرتکب ہو چکے تھے۔ شاخوں کو ٹھنڈے سرد موسم کے حوالے کر کے وہ خود بھی یہ جدائی نہ سہہ پائے تھے۔ سردی کی ٹھنڈی لہر اور وجود کوکاٹ دینے والی ہواؤں کی زد سے بچنے کے لیے غریب کسان ...

مزید پڑھیں »

بزنجو کاپاپاخ

یخ ٹھٹھرتا دسمبر تھا۔ درختوں سے پتے بے وفائی کے مرتکب ہو چکے تھے۔ شاخوں کو ٹھنڈے سرد موسم کے حوالے کر کے وہ خود بھی یہ جدائی نہ سہہ پائے تھے۔ سردی کی ٹھنڈی لہر اور وجود کوکاٹ دینے والی ہواؤں کی زد سے بچنے کے لیے غریب کسان ...

مزید پڑھیں »