” میں عورت ہوں”

زخم دل،اشک اور یہ لب

کسں قدر ویران ہوں میں

کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔۔؟

سخت پریشان ہوں میں

پری پیکر ہوں یا بسں نشان

کہیں بے سخن، بے کلام ہوں میں

کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔؟

سخت پریشان ہوں میں…

کئی گمنام القاب ہیں پیوست

کئی خیال میرے نازاں ہے

کیا ایک ضرورت تو نہیں ہوں؟؟

کیا میں فقط نفس کی

خواہش تو نہیں ہوں؟!

کیا ہوں۔۔۔۔۔؟  کیوں ہوں میں۔۔۔۔۔؟

سخت پریشان ہوں میں…

میں تلخیاں جیل لیتی ہوں

کئی بار زہر پی لیتی ہوں

مجھے روز سننے کو ملتا ہے

تم غیرت ہو ننگ و ناموس ہو!

جب بهی آئینہ دیکھتی ہوں

ہونٹ اپنے سی لیتی ہوں

کیا کوئی میرا محا فظ ہے۔۔۔۔؟

کیا کوئی خیرخواہ ہے میرا۔۔۔۔؟

کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔۔؟

سخت پریشان ہوں میں

تو اس نیلگوں آسمان میں ٹهہر جا.

روز مر جا، بکھر جا

اور پهر سمٹ جا۔۔۔۔

تیرے اسباب پر فقدان ہے شاید!

تو یوں ہی زہر کے گھونٹ پیئے جا.

کوئی ناصح نہیں تیرا۔۔۔۔

نہ تیرا کوئی محافظ ہے

فقط سب نام کے ساتھی

یہ اتنی سی بات ہے

اے نادان

تو عورت ہے۔۔۔۔۔

تو عورت ہے۔۔۔۔۔

بس عورت ہے….

اور

ایک ضرورت ہے۔۔۔۔

(میں ایک عورت ہوں)

صبا (راجی)

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*