Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » ہنگول پارک ۔۔۔ شاہ محمد مری

ہنگول پارک ۔۔۔ شاہ محمد مری

ہم نانی مندر سے واپس ہوئے ۔
اب کے سواریاں بدل چکی تھیں۔ سعدیہ بلوچ ہمارے ساتھ جیند خان کی گاڑی میں آگئیں۔ سعدیہ پرانی دوست ہیں ۔ ملتان کے میرے ساتھی اقبال سے کسی سیمینار وغیرہ میں ملی تھیں۔اُسی حوالے سے فون پر باتیں ہوئی ہوں گی۔ ہم یقیناً ملے بھی ہوں گے۔ مگر جب کوئٹہ دوستوں کے ساتھ ملنے میرے لیب آئیں او رآمنے سامنے بیٹھ گئیں ، دوستوں کی طرح باتیں کرنے لگیں تو مجھے معلوم ہوگیا کہ میرے دماغ کے کمپیوٹر میں یادداشت والا حصہ کرپٹ ہوگیا۔ میں نے پوچھا ’’ سعدیہ جی، ہم پہلے مل چکے ہیں ناں؟‘‘۔ اس نے سب کے سامنے کھڑاک سے جواب دیا ، ’’ شاہ محمد شرم کرو‘‘۔۔۔۔۔۔۔ اور میں شرم اور تکلف میں آج تک نہ پوچھ سکا کہ ہم پہلی بار کب ملے تھے۔ ایک عمر میں جا کر آپ دماغ کو کھرچتے بھی زیادہ نہیں ہیں۔چیزوں کو سنجیدہ لینا ترک کردیتے ہیں۔بس ملے ہوں گے۔ ہم ہر اُس ذی روح سے ملے ہوں گے جو ظلمتوں سے نفرت کرتا ہو۔
بعد میں سعدیہ کوئٹہ روزگار کے لیے بھی دو چار ماہ ٹھہریں۔ لوگوں سے میل جول رکھا، ہم بس اپنی بے برکت، مگر برحق ادبی سیاسی کاموں میں جتے رہے۔کبھی ملاقات ہوئی،کبھی فون ہوا،یا کسی کے ہاتھ سلام دعا ۔۔۔۔۔۔
اور آج ہم جادو نگری میں پھر آن ملے تھے، بلوچ نگر میں ، افسانوں کی سرزمین میں، ٖآزمانکوں کے دیس میں، مائتھالوجی کے گڑھ میں۔۔۔۔۔۔
مگر اب سعدیہ کی بولتی زبان بھی خود کو لگام دے چکی تھی ۔ ایسی خوشگوار حیرت کدہ دیکھ چکنے کے بعد جس طرح کی خاموشی بنتی ہے، وہی خاموشی ہماری تھی۔ ایک طرح کا تاسف ، ایک احساسِ زیاں کہ ہم کیوں پورابلوچستان دیکھ نہ پائے۔کیوں زیادہ گھومے نہیں۔ ایسی بابرکت جگہیں پہلے کیوں نہ دیکھ پائے، مگر پھر بلوچی فوک کے شعر دل میں آئے:
اچھا ہے کہ میں نے یہ لڑکی نہیں دیکھی اپنی جوانی میں
ورنہ اب تک تو میرا سر قربان کچل دیا گیا ہوتا۔۔۔۔۔۔
اور ہمارا سر، جو آج اِس عمر میں بھی مغز سے خالی ہے،تو نوجوانی میں ہم بھلا ہنگول مائتھالوجیکل سائٹ کی قدروقیمت کیا جان پاتے۔
اچھا کیا خدا نے مجھے بادشاہ اور حاکم نہیں بنایا۔ وگرنہ میں بلوچستان کے بہت سارے پیسے’’ ضائع ‘‘کرتا۔میںیقیناً ایک بہت بڑا میوزیم بناتا جہاں ہنگول سے متعلق اپنے آباؤ اجداد کی بنائی ہوئی اس ساری افسانوی داستانوں کے مجموعے کو متجسم کرتا۔ ملینوں ڈالر اس پہ خرچ کرتا ۔ میں نصاب میں ساری بلوچ مائتھالوجی شامل کرتا۔بین الاقوامی ریسرچ والوں کو بلواتا۔ ٹورازم کوترقی دیتا ۔۔۔۔۔۔ اور، اوراور ۔۔۔۔۔۔ ہے کوئی جوانمرد جو مجھ شیخ چلی کی ان خواہشات کی پیاس بجھائے؟۔
سعیدہ سگریٹ پیتی ہے اس کے کش لینے کی رفتار اور طوالت سے اندازہ ہوجاتا ہے کہ وہ کس قدر گہری سوچ میں ہے ۔ مجھے یقین ہے کہ وہ ہماری طرح غیر رومانی سوچوں میں بالکل محو نہ تھی۔ وہ یقیناًدیویوں اور دیوتاؤں کووصل کی حالت میں دیکھ رہی تھی۔حیرانگی ہوتی ہے کہ پیاسی ارواح اور رومانس سے سرشار خطے میں آنکھیں ہم بقیہ سواریوں نے کھولیں، مگر ہم سے ہزار گنا ووکل اور بولڈ و بہادر سعدیہ ہے۔
پروفیسر عابد میر دوسری گاڑی میں تھا، جیند خان اور ضیا شفیع یہاں ہمارے ساتھ خاموشی میں حصہ دار تھے۔ ہم ہنگول میں غرق تھے۔ بہت وقت چپ رہنے کے بعدکہیں جاکر ہم بولنے لگے۔ کار میں جب سعدیہ موجود ہو تو باقی تین سواریاں کیا بول پائیں گی۔ وہ صنعتی سماج کی بے تکلفی کی روح تھی اور ہم ابھی غاروں کے سماج کے حجاب کے متعدی مرض میں مبتلا فرسودگی میں گردن گردن ڈوبے ہوئے۔ شاعر، دانشور اور نئے نئے خیالات بھری وہ لڑکی باتیں کررہی تھی۔ ہم بھیڑ پال لوگ، سعدیہ سے حجاب کی بہ نسبت اپنے قبائلی ہمسفروں سے حجاب میں خاموش تھے۔ ایک اور دُرگوش مہیری کوشتر بچوں کے قتلِ عام کا سبب نہیں بننا چاہیے۔ہم خاران اور نوشکی میں سے کسی کو بھی رامین لاشاری بننے نہیں دینا چاہتے تھے۔
اور جب موضوع ختم ہوتے ہیں تو ہم مشاعرہ سجا لیتے ہیں۔ اس کار موٹر میں دو شاعر ہیں، سعدیہ اور ضیا۔مجھے توشاعروں کی یاری کی بدولت واہ واہ کرنا آتا ہے کچھ گزارہ کرلیتا ہوں لیکن عزیزم جیند خان تو ایسا بھی نہیں کرتا ۔ وہ کار موٹر چلاتا جاتا ہے اور جب تک شاعر اُس کا نام لے کر اُسے شعر نہ سنائے، وہ کچھ بولے بغیر بس سنتا جاتا ہے۔چنا نچہ میں ہی ہاں ہاں ہو ں ہوں دوبارہ پڑھو ،کہتے رہنے کے تکلف میں ڈال دیا گیا ہوں۔ محبت اور مروت میں بہت فرق ہوتا ہے ناں! مشرقی بلوچستان میں واہ واہ کہنا شاعر کی توہین میں شمار ہوتا ہے۔ حتیٰ کہ کھانسنے سے بھی شاعر برا مناتا ہے۔ یہاں الٹا حساب ہے۔ آپ کو شاعر سے بھی زیادہ بولنا پڑتا ہے: واہ واہ، بہت خوب، مکرر۔۔۔۔۔۔
سعدیہ ہی سنا رہی تھی۔ ہمہ زاویہ ، ہمہ پہلو۔۔۔۔۔۔ ایک سٹائل ایک اسلوب، ایک سلیقہ والی شاعری جو جدید سے بھی جدید تھی۔ وہ اپنے موبائل سے ہمیں شاعری پڑھ کر سنارہی تھی، ہم مہذب سے بھی مہذب سامعین بنے اُسے سنے جارہے تھے۔ چھوٹی مگر بھرپور اور پر معنیٰ نظمیں۔ استعارات، تشبیہات، ادائیگی کا انداز ۔۔۔۔۔۔ انوکھی نرالی نظمیں۔ خود کلامی میں جگ ترجمانی۔ اشاروں کنایوں سے لے کر بھرپور قیسی عریانیت تک۔پرت در پرت معانی ،شدت بھری، ایک ایک لفظ جاندار، ایک ایک لفظ پر سوزو پر درد ۔مکھن نظمیں جو ’’ واہ واہ‘‘ کی آواز میں پگھل جائیں۔
ضیا شفیع کی شاعری نما چیزبلوچی میں تھی مگر یہاں ایک سواری یعنی سعدیہ بلوچی نہیں جانتی۔لہٰذا ،اُ س ایک سواری کی خاطر ہم تین لوگ اپنی مادری قومی زبان نہیں بولے۔۔۔۔۔۔بلوچ کی رواداری نے بلوچی کو کتنا نقصان پہنچایا!!۔
ہنگول دریا سے کوسٹل ہائی وے پر آگے بڑھیں تو آپ کُنڈ ملیر ساحل پہ آئیں گے۔اسے ’’ اگور‘‘ بھی کہتے ہیں۔ وہاں سے درہِ بُزی آئے گا۔
ہمیں اندازہ تھا کہ اب ہمیں ایک اور منظر دیکھنے کو ملے گا ۔ نعمت کدہ ہے میرا وطن۔ جہاں مٹی جیسی ’’ بے کار‘‘ چیز نے وہ کارامدی دکھائی کہ صرف دور سے اُسے دیکھنے کے لیے سالانہ اتنے پیسے ملنے تھے جس سے پورے بلوچستان کا بجٹ چلایا جاسکتا ہے۔
اور ایک موڑ مڑتے ہی ہمارے اوسان سلامت نہ رہے۔ ۔۔۔۔۔۔ یہا ں سکوت میں ڈوبا بلوچستان ایک اور منظر نامہ دکھانے لگا ، بالکل ہی اجنبی، نا آشنا منظر نامہ ۔بالکل حیرت ہورہی تھی کہ ہم آئے کہاں پہ ہیں۔لگتا تھا وطن آج اپنے بیٹوں پہ ہمیشہ سے زیادہ مہربان ہوچلا ہے ۔یہا ں آپ کے اندر جمالیات کے مختلف قبائل جنگ شروع کرتے ہیں۔ یوں تو آنکھ والاقبیلہ جیت جاتا ہے، مگر کان اور ناک کی حسیات کبھی ہار نہیں مانتیں۔ بالآخر ایک دوسرے کی تکمیل کرتے رہنے پر صلح ہوجاتی ہے۔
یہاں ہزاروں سالوں کی بارشوں اور ہوا کی تعمیر کردہ عظیم الجثہ عمارتیں ہیں، مجسمے ہیں، قلعے ہیں۔
مجھے یاد ہے کہ ہم نے چند برس قبل انجلینا جولی کی تصویر سے اپنے ماہنامہ’’ سنگت‘‘ کا ٹائٹل منور کیا تھا۔ انسان دوست، امن و خیر کی سفیرانجلینا جولی۔بے حد حسین ، باصلاحیت اور ہالی وڈکی سب سے زیادہ معاوضہ لینے والی ادا کارہ انجلینا جولی۔ اُسے جائزطور طورپر’’دنیا کی حسین ترین عورت ‘‘قرار دیاگیا۔
ہماری یہ ممدوحہ انجیلینا معروف اداکارہ اور دنیا کی حسین ترین خاتون ہونے کے ساتھ ساتھ انسانی بھلائی اورخیرکے کاموں میں بھی بڑھ چڑھ کرحصہ لیتی ہے ۔ وہ سیلاب وزلزلہ جیسی آفات میں گھرے ضرورت مندوں پہ خود کو وقف کیے رکھتی ہے ۔ وہ سیر الیون اور تنزانیہ گئی ، کمپو چیا، سوڈان کے جنگ زدہ علاقے گئی، ڈار فر، اورخانہ جنگی والے چاڈپہنچی، جنگ میں جھونکے ہوئے عراق ، آتش ولہومیں ڈوبے لیبیا میں جا موجود ہوئی۔……….وہ خودروتے ہوئے اپنی خدا ترس فطرت میں تیس ممالک میں آفت زدگان کے آنسوپونچھتی رہی ۔وہ بے شمار فلاحی اداروں کو چندہ دیتی ہے۔ وہ ایشیااور افریقہ سے بے شمار غریب وبے وارث و بیماربچوں کو لے پالک بناکرامریکہ لے گئی ،اور وہاں انہیں ماں بن کرپال رہی ہے ۔
یہ دلچسپ خاتون جب سیلاب متاثرین کی امداد کے لیے پاکستان آئی تھی تو یہاں یوسف رضا گیلانی وزیراعظم تھا۔ اُس نے انجلینا کو ظہرانہ دیا ۔ انجلینا نے بعد میں کہا کہ کھانے کی میز پر اس قدر شاندار اور وافر کھانا دیکھ کر وہ نہایت آزردہ رہی۔ آٹے کی ایک تھیلی اور پانی کی ایک بوتل کے پیچھے دوڑتے ہوئے سینکڑوں سیلاب متاثرین کے لیے یہی کھانا کافی تھا۔ وزیراعظم ہاؤس کے شاہانہ اخراجات ، نجی چارٹرڈ طیاروں میں سفر اور دیگر ایسی تعیشات آپ کو بے چین تو کرتی ہی ہیں جبکہ آپ کے سامنے ایک المیہ موجود ہو۔
انجلینا نے اقوام متحدہ میں اپنی رپورٹ میں یہ مطالبہ کیا تھا کہ اقوام متحدہ پاکستان کو مجبور کرے کہ کسی قسم کی عالمی امداد طلب کرنے سے قبل حکومت پاکستان اور اس کے اعلیٰ حکام اپنی تعیشات اور شاہ خرچیوں میں کمی کریں۔ ۔۔۔۔۔۔ہے نا بڑی عورت!!۔
اُسی زمانے میں ہم نے ایک اور ٹائٹل اِسی ہنگول علاقے کے قدرتی سینکڑوں میٹر بڑے نسوانی مجسمے کو ٹائٹل بنایا تھا۔ ارے ہمارے دائیں جانب افق کے پس منظر میں ایک حیرت کدہ تھی۔ براعظمی وسعتوں میں تنہا کھڑی ایک طویل قامت نازک دبلی پتلی، مہین چٹان ہے جو ایک باوقار خاتون سے مشابہت رکھتی ہے۔ ہم بلوچستان کو بخشی ہوئی فطرت کے سب سے حسین منظر کا نظارہ کررہے تھے۔
اقوام متحدہ کی ’’ خیر خواہی‘‘ کی سفیر ،محترمہ انجلینا جولی 2002 میں اس علاقے سے گزری تھی۔ دراز قد،بلند بخت ، پرہ چہرہ ،اورحسین بدن والی اس پری کے حسین دماغ نے عورت کے اس بہت بڑے مجسمے کودیکھا تو حیرت سے اس کی موٹی اور متحیر آنکھوں کو کتنی خوبصورتی عطا ہوئی ہوگی۔ استعجاب سے اس نے دراز و بہشتی انگلی اپنے صدف صورت دانتوں میں دبائے ارض مقدس کی تقدیس میں اپنی پاک دلی ڈال دی ہوگی۔۔۔۔۔۔ اس نے اُس قدرتی طور پر بنے ہوئے مجسمے کا نام رکھا اورلعل و گوہر جیسے یہ الفاظ بولے :Princess of good hope۔ کتنا معتبر و محبوب نام ہے یہ !!۔
ہمارے دانشور اِسے صرف Princes of hope کہتے اور لکھتے ہیں۔ یہ غلط ہے ۔ یہ صرف امید کی شہزادی نہیں ، یہ خیر کی امید کی شہزادی ہے ۔ ’’ اچھی امید کی رانی ۔۔۔۔۔۔ ھیرہ اومیثہ گودی‘‘۔الفاظ اتنے بھی بے توقیر نہیں ہوتے کہ اُن کے آگے پیچھے کرنے ،یا حذف کرنے سے کچھ فرق نہیں پڑتاہو۔ بھئی ہنگول کی ہماری یہ شہزادی خیر اور نیکی کی امید کی علامت ہے۔ خیر ہو وطن کی ، خیر ہو بلوچستان کی، خیر ہو کُل جہان کی !!
انجلینا جولی ہمارا شکریہ کوئی نہ کوئی تو تمہیں پہنچادے گاہی۔نام تو بے نامی گمنامی کا الٹ ہوتا ہے۔ تم نے ہمیں گمنام رہنے نہ دیا۔اس عجوبہ قدرت کواُس وقت نہ صرف انسانی آنکھ نے دیکھاتھابلکہ ایک اور آلے کی آنکھ نے بھی، جسے انسان، کیمرہ کہتا ہے۔تب ہمارے کوہستانوں کی یہ رانی ، امید کی یہ شہزادی اچانک مشہور ہوئی، پورے لولاک میں۔ ایک نیلا بورڈ لگ گیا۔ جس پر اُس کا نام لکھا تھا: ’’امید کی رانی‘‘ ۔
وہیں میر ا دل خود اپنے ساتھ چھیڑ خانی میں لگ گیا: کہ آج زندہ انسانوں میں’’ اچھی امید کی رانی ‘‘کو ن ہو سکتی ہے؟ ۔ انجیلینا جولی کی عظمت ، دانشورانہ بر تری اور اچھے فیصلے کے سامنے ہتھیار ڈالتے ہو ئے میں نے ’’رتھ فاؤ‘‘ کا نا م واپس دل کی جیب میں رکھ دیا ۔ نہ ہم انسانیت کی اس محسن کو نوبل پرائز دلا سکتے ہیں ، نہ اس کے نام کا کوئی مجسمہ کھڑا کر سکتے ہیں ۔ کا ش ہم کسی ہسپتا ل کا نام ہی اُس پر رکھ سکتے۔۔۔۔۔۔۔ رتھ فاؤ ہاسپٹل!!
اور آج،ہم تقدس کی قدموں میں تھے۔ میرا وطن ایسا شاندار کہ اپنے مظاہر کے آگے جھکا جھکا کر غیر کے آگے جھکنے کا کوئی موقع چھوڑتا ہی نہیں۔ ہم ’’پرنسس آف گڈ ہوپ‘‘ کی عظمت میں حیران تھے ۔ ہم لولاکی احترام میں ایک دوسرے سے لفظ بھی کہے بغیر، گاڑی سے نیچے اترے۔ سانس تھامے، ساری توجہ اُسی عظیم ساخت کی شہزادی کی طرف۔ اب ہم بہ یک وقت ساٹھ سالہ بچے بھی تھے، دھرتی کے کلچر اور سولائزیشن کے ذمے دار ترجمان بھی۔ہم اسی مٹی کے عاشق بھی تھے محبوب بھی۔ منظر بھی تھے ناظر بھی۔ سامع بھی ناطق بھی، عکس بھی عکاس بھی، حیرت بھی حیران بھی، خمار بھی مخمور بھی۔ ہم اس کے محافظ بھی تھے تباہ کن بھی۔۔۔۔۔۔ سرزمین تیرے ساتھ کتنا پیچیدہ رشتہ ہے ہمارا۔
اگر یہ منظر امریکہ میں ہوتا تو ’’ سونے کی تلاش‘‘ اور’’ میکاناز گولڈ‘‘نامی بے شمار ناول لکھے جاتے، کئی فلمیں بنائی جائیں۔ کوئی امین مالوف کتنے جبل الموت تخلیق کرتے ۔ بلوچ! تو نے کتنے مواقع ضائع کردیے، تیری کتنی صدیاں خالی گزر گئیں!!
ہم نے توقیر کی ، ادب احترام کیا، نشے کی اتا ہ حالت میں موجود فطرت ،کو سلام کیا، ہم جتنا قریب جاسکتے تھے گئے مگر امید کی دیوی کا دامن پھر بھی سوڈیڑھ سو میٹر دور ہی رہا۔
نہ جانے وہ کب سے اُس بیا بان میں بے نام کھڑی تھی۔ ہوا کی تھپیڑیں کھاتی ہوئی ، یا پھر اُس کی موسیقی سنتی ہوئی ۔ ہوا جو ریت سے آلودہ رہتی ہے۔جب راہ ،شاہراہ نہ تھی تو وہ کس قدر تنہائی محسوس کرتی ہوگی۔ نظر اندازی کا غم بہت اندوہناک ہوتا ہے۔ بس ایک عظیم الجثہSplinx (ابو الہول )ہی اُس کا پڑوسی تھا مگر وہ بھی اس حال میں کہ خود بھی گِل اوراس کے پابھی بہ گل ۔ارددگرد تو بس مٹی کے مٹیالے رنگ کی عجیب اور بڑی بڑی بے ترتیب سینکڑوں میٹر طویل ڈھیریاں ہیں۔ سینکڑوں میٹر بلند اشکال۔ یہیں پہ مصر کا سوگنا بڑا ابوالہول کا مجسمہ کا ڈُپلیکیٹ فطرت نے بنایا ہوا ہے۔
سینکڑوں میٹر بڑایہ Sphinx مٹی کے بہت اونچے پلیٹ فارم پہ بنا ہے۔ اتنا دیو ہیکل کہ انسان دنگ رہ جائے۔ ایسا لگتا ہے جیسے سر عورت کا اور بدن شیر کا ہو۔ فطرت کی شاہکار۔سب سے بڑا انسان کا بنایا ابو الہول تو مصر میں ہے۔ سالانہ ہزاروں لوگ دنیا بھر سے اِسے دیکھنے آتے ہیں اور اس کے بنانے والوں کی تعریف کرتے ہیں۔
حیرانگی ہوتی ہے کہ بلوچستان کے ساحلی علاقے میں ایک قدرتی Sphinx موجود ہے جو مصر والے سے عظیم مشابہت رکھتا ہے۔
صدیاں اسی طرح گزرگئیں تب چین نامی ملک کو بہت بھوک نے ستایا۔ بلوچی زبان میں ’’ آف ڈھاگ‘‘ ایک ایسی حالت کو کہتے ہیں جب آپ پانی پیتے جاؤپیتے جاؤ مگر پیاس مٹتی نہیں۔ چین بھی ایک ایسی حالت سے دو چار ہوگیا ہے ۔ بحیثیت ملک اُسے ’’ زرڈھاگ‘‘ ہوگیا ہے۔زرکی پیا س ، پیسہ جمع کر نے کی لت ۔پیسہ پیسہ!!! اسے سونے چاندی سے دفنا دو تب بھی وہ ’’ پیسہ پیسہ ‘‘ مانگے گا آکسیجن نہیں۔
وہ زمانہ گیا جب ہم کہا کرتے تھے کہ ڈائن بھی پڑوس کے سات گھر چھوڑ کے تباہی مچاتا ہے۔ ڈائن اور ڈریگن میں فرق ہے۔ ڈریگن کے لیے اڑوس پڑوس، حلال حرام، ذبیحہ، جھٹکا سب بکواس۔ چنانچہ زرو جواہر کے لیے بھوکے چین نے اپنے بہی خواہو ں کی مدد سے اپنے ڈریگن کا منہ ہماری طرف کرکے اُس کا کانٹے دار لگام کھول پھینکا ۔ اُس اژدہاکے منہ سے نکلے آگ کے شعلے خالص نہ تھے ۔ اب کے وہاں سے ابلتا ہوا ایک سیاہ مائع نماز ہر، آتش فشاں کی طرح بہنے لگا ۔جس کا ایک سرا کاشغر تھا دوسرا گوادر ۔راستے میں جو چیز بھی سامنے آئی برباد کر ڈالی۔ پہاڑ دریا، گھاٹی کھائی، کاہ کر پاس کچھ بھی سلامت نہ بچا۔سب ہموار ۔ اِسے وہ ’’شاہراہ ‘‘کہتے ہیں: ہائی وے ۔ کاشغر گوادر کا ہمارا حصہ ’’ کوسٹل ہائی وے ‘‘ کہلایا۔
اور یہ لا وا بالکل اچھی امید کی شہزادی کے مجسمے کے قریب سے گزرا۔ اچھا ہوا شاہزادی محض مجسمہ ہے۔ اگر یہ ذرا بھی حرکت کرتی ہوتی تو آج وہ بھی چین کے ڈریگن کے بے انت و مہیب پیٹ کے کسی کونے میں ہوتی۔سرمایہ داری نظام سے بڑا اژدھا کیا ہوسکتا ہے۔ سامراجیت سے بڑا ڈریگن ابھی تک دنیا نے نہ دیکھا۔
اس شہزادی کے پا س سے گز رتے ہو ئے اس جمے ہوئے لاوا کو کوسٹل ہائی وے کہتے ہیں۔ اور اِس کے اوپر کاروں، ٹرکوں، ویگنوں، اور بسوں کی’’ گوش شکن‘‘ ریل پیل ہے۔
آج ہم اکیسویں صدی کی مغربی دنیا کی شہزادی کے متبرک ذہن و دہن سے عطا کردہ نام والی قدیم سے بھی قدیم اپنی مشرقی شہزادی کے درشن کررہے تھے۔ اس درشن میں بھی جیند خان ہماری سپہ سالاری کررہا تھا۔ ضیا شفیع کی سنگت تھی اور سعیدہ بلوچ کی رفاقت ۔ پروفیسر عابد میر اتنا ہی گم سم تھا جتنا ہم ا پنے ہوش و ہواس کی گمشدگی سے بھی بے خبر کھڑ ے تھے۔
بلوچستان مصور کی ورکشاپ ہے۔ اس کی ہوا آزر، اس کی مٹی پکا سو، اس کا پا نی وان گوغ ، اس کا سورج صادقین ۔ ایک اوسیع کینوس ہے بلوچستان۔ یہ اپنے بچو ں سے بھی سکلپچر بنواتا ہے۔ اور خود بھی خوبصورت پنٹنگز کرتا ہے۔۔۔ بس آپ ہنگول ہو آئیں آپ بلو چستا ن کی جما لیا تی حس کی تکریم کرنے لگیں گے۔

ہم حکومت کو ’’ خدارا ، خدارا‘‘ والا غلامی بھرا لفظ نہیں کہیں گے، ہم اُسے اپنی فولادی کُوھلی (مٹکے نما بہت بڑا مٹی کا برتن جس میں اناج ذخیرہ کیا جاتا ہے) سے پیسہ نکالنے کو نہیں کہیں گے۔ ہم اُس کے ورلڈ بینکی سوچ سے عاری پولٹری فارمی چہروں اورنازک دماغوں پہ زور دینے کی بات بھی نہیں کریں گے۔ وہ کچھ نہ کرے ۔ بس ’’ اے سکندرِ اعظم، تم موسمِ سرما کی سردی میں فلاسفر، ڈایوجنیز اور دھوپ کے بیچ کھڑا مت ہو‘‘۔بس اے حکومت ! تم انسانوں اوراِن مناظر کے بیچ رکاوٹ نہ بنو۔
یہ ہم اس لیے کہہ رہے ہیں کہ اس لئے کہ ہنگلاج کو پیسوں، دماغوں، مددگاروں ، ماہروں کی ضرورت نہیں۔ اس لیے کہ ہنگلاج اب محض مقامی عجوبہ نہیں رہا۔ ٹوراِزم کا یہ وسیع و عریض خطہ صوبائی نہیں مرکزی کنٹرول میں ہے۔ اس کی دیکھ بحال کے لیے ورلڈ بنک پیسہ دیتا ہے ،بے شمار این جی اوز اِس پہ پل رہے ہیں۔ اس لیے یہ ایک بین الاقوامی درجے کی جگہ ہے۔
یہ جگہ اس قدر خوبصورت ہے کہ ملین ڈالروں کی سالانہ آمد ن ٹورازم سے ہو سکتی ہے۔ شرطیہ کہا جا سکتا ہے کہ یہ علا قہ امر یکی کاؤبوائے فلموں کے منا ظر سے سو گنا زیا دہ خوبصورت ہے۔
چنانچہ حکومت کچھ نہ کرے۔ میں تو بس اتنا کہتا ہوں کہ کالج اور یونیورسٹی طلبا کے ہنگو ل پا ر کی بہ نسبت بہت کم خوبصورت اور کم دلچسپ علاقوں کے مطالعاتی دوروں پر حکومتِ بلوچستان ہر سال کروڑوں روپے خرچ کرتی ہے ۔ کوئی انہیں یہ سمجھائے کہ ذرا یہ مناظر بھی تو دیکھو، ورطہِ حیرت میں رہتے ہوئے ساری زندگی، زندگی سے محبت کرتے رہو گے۔
ہما را مشا ہد ہ ہے کہ آپ جب بھی مڈل کلاس اور اپر مڈل کلاس کی سڑاند بھری محفلوں میں بیٹھو تو آپ کواُن کی گفتگو میں دبئی، فرانس اور امریکہ کے متعفن دوروں کی قے آور دوہرائی ملے گی۔ جہازوں ، ایر پورٹوں ، کافی ہاؤسوں ،لفٹوں ٹراموں ، اورٹائیوں کی خریداری کے قصے ملیں گے۔جبکہ یہاں اپنے وطن میں محض آواز لگانے کے فاصلے پر بین الاقوامی معیار کے عجوبے موجود ہیں۔ بالکل پڑوس میں۔جہا ں فطرت بھرپور شا ن اور جوانی اور حسن میں عیاں ہے ۔ سینما ہال میں نہیں، لیپ ٹاپ میں نہیں بلکہ پہاڑوں دریاؤں کے پیچ و خم میں۔ یہاں فیس بک اور ٹوئیٹر آپ کو کچھ نہیں دے سکتے، بلکہ الٹا آپ انہیں مالا مال کرسکتے ہیں ۔ نہ یہاں ڈوبتے ٹائٹانک پہ آئس برگ کی بولیاں لگتی ہیں نہ ٹی وی ریٹنگ کے لیے کھردری بھدی بھاری آوازوں کو گلیمرائز کیا جاسکتا ہے ۔ یہاں انفرادی گلیمر چلتا ہی نہیں۔ ضم ہوجائیے فطرت میں، حصہ بن جائیے بلوچستان کا ، بلوچستان آپ کو گود لے گا۔ ہم گود لیے چار بچے نہ تھے ،ہم تو ماں جائے بچے ہیں سمو کی ماں بلوچستا ن کے۔
ہم نے اُس روز قلم کو نہیں چھوا، ہم کیمرے کی عظیم ترین نعمت سے مزین و مسلح تھے۔ ہم آج سب سے زیادہ مقرو ض تھے عراق کے سائنس دان ابن الہیشم کے جس نے پہلا کیمرہ ایجاد کیاتھا ۔ ہم نے کتنی تصویریں اتروائیں۔ نیلگوں آسمان کی ، مٹیالے دیو ہیکل قلعوں مجسموں کی، ساتھ ہی موجود شفاف نیلے سمندر کی۔عجیب زمانہ آگیا کہ اب اپنے سارے جذبات کا اظہار موبائل فون کے کیمرے سے فوٹو کھچوا کر کیا جاتا ہے۔ واضح رہے کہ ہیشم صاحب کے بیٹے کی ایجاد اب بہت بہتر بن چکی ہے۔ہم اِس زبردست ایجاد کی نعمت فوٹو گرا فس کو وہیں سے دنیا کے کسی بھی کونے، جی ہاں کسی بھی کونے کو بھیج سکتے تھے۔ اب اور وہ بھی پلک جھپکتے میں۔ سرمایہ داری نظام برباد بھی بڑا کرتا ہے۔ مگر آسائشیں بھی بڑی دیتا ہے۔
ہم ٹکنالوجی کی نعمت پر شکر و صبر کرنا چاہتے تھے کہ ایک بارپھر نظر پر شکوہ شہزادی پر پڑی۔ وہ ابھی تک دو ر دیکھ رہی تھی۔ یعنی ابھی انسانی علم نے مزیدبے شمار ایجادات کرنی تھی۔ مگرمجھے یقین ہے کہ شہزادی اُس وقت بھی نیچے نہیں دیکھے گی۔ ارے بلوچو! چلتے ہی جاؤ، کوئی سٹاپ ، فل سٹاپ نہیں۔ اچھی امید کی شہزادی کا حکم ہے کہ سائنس اور علم کے حصول کے لیے نگاہیں دور افق پر ٹکا ئے چلتے جاؤ۔ سچ، سائنس اوراِنسا نو ن کے لئے سہولتو ں کی جستجو اور تقسیم میں کوئی آرام ، کوئی سستانا نہیں۔
ہم نے شہزادی کی منشا پڑھ لی، اُس کا فرمان پلو میں باندھا ، اور نہ رکنے کے لیے چل پڑے۔

Check Also

March-17 sangat front small title

گوادر، ادب اور سمندر۔۔۔ فاطمہ حسن

گوادر جو کبھی اپنے خوب صورت، پُرسکون ساحلِ سمندر کی وجہ سے پہچانا جاتا تھا، ...

One comment

  1. واجہ شاہ محمد مری صاحب۔۔۔۔۔۔۔امید انت کہ شما وش ءُ جوڑے۔۔۔۔۔۔۔ہمے انجلینا جولی والہ کسہ کہ آئی ءَ ہمے بتءَ را نام بستگ۔۔۔۔من کمے وضاحت کنگ لوٹاں۔۔۔۔۔۔پنسز آپ ہوپ۔۔۔۔اسلءَ بلوچی “امیتانی بانک” ءِ ترجمہ انت۔۔۔ءُ ہمے علاقہ ءَ چہ کرناں اے بتءَ را امیتانی بانک گشگ بوتگ۔۔۔کہ بے اولادیں جنین آدمانی مراد ہمے بتءِ ساھگ ءَ پیلو بیتگ انت۔۔۔۔۔اے گپ تحقیق لوٹیت ۔۔۔بلے منی زاتی ہیال ہمیش انت کہ انجلیما جولی ءَ بلوچانی امیتانی بانک۔۔۔ترجمہ کتگ ءُ پرنسز آف ہوپ گشتگ۔۔۔۔منت وار

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *