Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » حال حوال » گوادر کانفرنس ۔۔۔ شاہ محمد

گوادر کانفرنس ۔۔۔ شاہ محمد

’’جیوز ‘‘گوادرئے یک تنظیمے، ادبی تہ پک استیں کہ مزن فراقؔ جانیں نیں۔ باقی اللہ اے این جی او اے یادوہمی، مناں سمانہ ایں۔ ہمے تنظیما، شیڈوؔ ،نا میں دوہمی تنظیمے دِہ سنگت کثہ، آرٹس کونسل کوئٹہ دِہ گوں گیژتہ اوہر سئے ایناں اوار بیثؤآر سی ڈی سی کونسل گوادر اماما عبداللہ جان جمالدینی بارہا یک پُرسی دیوانے کثہ ۔مناں تہ بجار بلوچا حکم داثہ ۔ شارٹ نوٹسا چکا تہ مناں نہ لوٹائینتیش، پرمناں ہر سیمینارے گوانک شارٹ نوٹس معلوم بی۔ من سبطِ حسن کانفرنسا شتگثاں۔ شموداں پذ بھٹ شاہاوثی دل پسندیں شاعر و فلسفی ئے دربارا حاضری داتؤں۔ مخدوم طالب المولی ئے قبر زیارت کثو کوئٹہ آپجثغاں تہ گوادرئے گوانک بیثہ۔
اغر کسے آناڑی سُری ئے آ پتی دوستی ئے چیزے دہ اندازہ استیں تہ مں گشاں کہ گلزار گچکی او بجار بلوچئے آپسی سنگتی ہمے ناڑی سُری ئے سنگتی ایں۔
المستیں جیند سنگت اث۔ سنگت رفیق دِہ اولی دھکا گوما اواربیثہ۔ سئے مڑدیں ڈیلی گیشن ’’ کسائیں مرگہ‘‘ دستانا جناناں کسائیں جہازا زورا بیثغوں ۔ دو گھنٹہ شیمو شاں دیاناں، کوہ و تلار و سمندراگنداناں،گوشانی دمب بیغاژہ پھجغاپہ گوئنچکاں جایاناں، وتی ہمسفر خاص کں اولی دھکا جہازئے زوار بیوخیں مردانی مشاہد ہا کناناں، وختے چُپ اووختے مجالسا کناناں، موبائلہ چکا وثی مقالہا لکھاناں شتو گوادرا سربیثغوں۔ اولا اے گنجیں گوادرث، نیں ماناغیں کہ گنج رنج بیغاپہ سنج بیغیں ۔ ھذا ہیر بہ کاں۔
دوستیں ایئرپورٹا آتکغث گوں وثی سنگت و دوستاں۔ اومں گوادرہ ’’ ترقی‘‘ گندغا پہ شاثیاآنہی مزائیں گاڈی ئے فرنٹ سیٹا نشتغاں۔
سری سری ما ہماں سکولا شتغوں کہ چینا ٹاہینتؤ داثہ گوادریاں۔ بس سکولے ۔ پاکستانی ٹی وی چینلاں ہنچو واہو چیک کثؤ وثی گٹ ہو شینتغثنت ۔ بس سکولے۔ گوادر ہماں اولی گوادریں۔ سڑک دروکا پراہ بیثغنت۔ تلاشی گیش بیثغنت، پابندی ڈونگھا تر ثغنت۔۔۔۔۔۔ گوادر گوادریاں ژہ کمیں دِیر بیثہ۔
گڑتؤ لوغا آتکغوں۔ سفارغا ’’ گور‘‘ نا میں ماہی اے اث کہ زمستانا بازیں ۔ اے گراں بھائیں ، مزں بُھتیں ماہی اے ۔ گوژدوئیں۔ اے شاید واحدیں ماہی ایں کہ اشی ہڈاں پسانی ہڈانی ڈولہ جاینت۔
بڈے فرمائشی کثؤ کہ مں گوادر ابازچرّثغاں، جیمڑی سراتکہ۔ او اِشی روش ٹبہ سوادھ نہ دیثؤں۔ انگلینڈہ بادشاہئے جھگی دِہ نیئثوں۔
دوستیناگوئشتہ’’ مرشی۔۔۔۔۔۔گنزاروں‘‘۔
پچے؟
’’ اے خاطرا کہ’ من‘ نہ نئیثہ‘‘۔
ما چُپ کثہ کہ مارچپ کنغی اث۔ کمیں ساہسار تؤ درکپتغوں پہ گنز آ۔ آں شہر دوستینانہ دیثغہ۔ پکوئیں جوائیں سڑک۔ پیشکان دگا آتکہ تہ سنگت اکیڈمی ئے شبیر جانا میسج داثوں کہ تئی شہر اژہ گوئستغاں۔
گنزہ پلوا گڑتغوں تو پسماندگی اندازہ بیثہ۔ کوھ و ڈوکانی اندرا سمندرہ کندھی کندھی آ’’ گنزہ‘‘شہراث۔ کئے گشی کہ شہرے اث۔ گیست سی لوغ، دو مسیت او سی چل کشتی۔ پاکستانی فائبر گلاس والا گوں یاما ہا انجناں۔۔۔۔۔۔۔ بلوچی بولکے ، شہرے نہ ایں۔
عالما گوئشتغث کہ ہمے شہرہ مردم یونانیانی پدریچ و نسل انت۔ او اِشانی چم سبزنت او دیم گوڑو۔ مئے سنگت ہررائی ئے دیم و چماں گندغااثنت۔ مں دِیراژہ یک جنے دیثہ تو وہشیاگوں کوکار کثؤں۔’’ اڑے زالا گندیں۔ آں زالا گندیں، آں بلوچیں زالا گندیں۔ ماشاء اللہ۔ چپل پاذاانتی ‘‘۔
ایذا رئیس اثنت، سید اثنت۔بلوچئے پسماندگی پذکپتی دیتؤ ارمانی بیثغوں۔ ترثؤ گڑتغوں۔اشی روش ٹُب ئے سوادھ دِہ اژما سراتکہ کہ ما دیر پجثغوں۔
سنگتاں گوئشتہ کہ جیمڑی ہشت دہ میل ( یا کلومیٹر) یں ۔ ما گوئشتہ کہ گندوں رؤنی۔ مین بازار اشتغوں کہ دانڑتی ہاغہ اث ۔ حیراں بیثغوں کہ کل دکاّں پشتونانی اثنت۔ دنیائے آں کنڈا سمندرہ کنارہا دکاّں پشتونانی اثنت۔
گڑتؤ گوادرا آتکغوں پہ وفسغا۔
دوہمی صحبا ناشتہ ونیر نڑہ دعوت درانی صاحبا کثہ۔ آں ہر وخت ہمنگا کنت۔ مستغ و بینغ ، آنو او حلوا پوری، چھولے۔۔۔۔۔۔ اللّٰہے چے بلا جفا۔ وروخاں جھمبثہ، ماوثی آملیٹا گوں گزارہ کثہ۔ چاہ نہ واڑتؤں کہ شیرا صیلیں نہ یثاں۔
دہ ونیما سمینارہ وختہ او ما بالکل ٹیمہ چکا پجثغوں ہالا۔ درا حاضری ئے کاغذ دستخط کثؤ، وثی پجیا آڑتغیں کتاب گل انتظامیہ حوالہ آکثو، بھانکراں دیاناں گراناں ،ہالا پیہثغوں۔
ہال مئے دیثغین اے ۔ دو صذمڑدمہ گنجائشی ہالے ۔ بھتاں فریمیں فوٹو ٹنگثیا۔
سٹیجا کہ دَہ کرشی ایر بنت تو اندازہ بی کہ دَہ تقریر والا تہ استنت کہ استنت۔
ورنا ہیر ثؤ آتکغثنت۔ ہر کس پہ دراہیا باڑا ۔لیاری بے نظیر شہید یونیورسٹی ئے وائس چانسلراختربلوچ دیثئیں۔ گل حسن بلوچ دیثئیں۔ جوائیں شاہر بشیر بیدار ا دیر داں بھانکراں داشتہ۔ ڈکھاں یارہ ڈوبر کوگ کثغث۔
گلزار و بجار و فراق ہالہ درواندرا ہلشغئے ثنت۔ اے مہمانا ایذا نیاذیں، آں مہمانا اوذا بر۔ انتظام کاری تہ باز مزنیں ذمہ واری ئے ۔ او اے ہر سئیں مڑد باز ذمہ واریں مڑدنت۔بجار بلوچ، گلزار گچکی، دوستین جمالدینی ، کے بی فراق اور سورابی کہ دستاں اوار کننت تو کجام کار گرانیں؟۔یک زوارئے چے دنزے۔ شش مڑ بلوچی لشکراں۔
بجار بلوچ سٹیج سیکریٹری اث، سمین ارمانا ،دیوانئے بسم اللہ کنائینتہ۔
بجار گوں وثی مزں مریں دانشوری او بلوچی زبانہ سرا شہسواریا کناناں مچی کاروائیا دیما براناں شتہ۔
اے پروگرامئے زیبائی ایش اث کہ سائنسی وڑا ہر سپیکر ے آ سر حال دیغ بیثغہ۔ او ہر کس وثی ٹاپکہ بارہا ٹوکاں کنغایث۔ ہنچو کورہ دھک نہ اث ۔ اِنگری آنگری ٹوک نہ اثنت۔ باز با مقصد او ٹو دی پوائنٹ ۔نَیں دراژ ،نہ غیر متعلقہ۔
ہمے گرانیں مچی خاصیں مہمان ماما عبداللہ جانئے دوستی ایں شاعر بشیر بیدارث۔ کے بی فراق سمینار اپریذائڈ کنغایث۔ سٹیجہ چکا دوہمی عزتمندیں مڑد( کہ زال نیستہ، نَیں سٹیجا، نَیں ہالہ اندرا) ایش اثنت: دوستین جمالدینی ،بے نظیر بھٹو یونیورسٹی کراچی وائس چانسلر اختر بلوچ،دانشور جیند جمالدینی،تربت یونیورسٹی شعبہ بلوچی ئے چیئرمین غفور شاد،تربت یونیورسٹی ئے شعبہ بلوچی ئے اسسٹنٹ پروفیسر طاہر حکیم بلوچ،بلوچستان یونیورسٹی ئے اسسٹنٹ پروفیسر رفیق سنگت،کراچی ئے دانشور حنیف دلمراد،سید ظہور شاہ ہاشمی ڈگری کالج گوادر ئے لیکچرار بلوچ خان،ادیب ورائٹر رحمان مراد،بلوچی زبانئے ناول نگار اسلم تگرانی۔
بلوچ خان کہ کوئٹہ آ اث تو ہر سنڈے آ ماما آگوئر کا تک۔ ماما باز دوست داشتی۔ مناں اندازہ اث کہ آنہی مقالہ ژہ کلاں دراژ بیث ۔ آنہیا اردوآ لکھثغث ۔ ہمے دِیر سریں کؤر پہ پندہاں نہ جہ اِث، ہمے خاطرا باز گوئنڈ کثو وث دہ تُنی ای آشتہ او اش گنوخ دِہ شو شوڑی کثغنتی۔
اسلم تگرانی آتکہ گوں وثی ہنگیں کاغذاں ۔ مامائے ادبی ، پٹ و پولکاری او صحافتی کارانی سرا مقالہ پڑھثو تاڑیانی ترڈھاٹاں گوں گڑتؤ شتہ۔
رحمن مراد ا مامائے ازم وشخصیتہ سرا مقالہ پڑھثہ۔
رفیق سنگت وثی داشتغیں طرزا گوں دیرداں سٹیجا بیثہ ۔مامائے راج دوستی، آنہی پروگریسو فکر، ششکہ خلافا آنہی جُہد ، او طبقاتی نا برابری او سامراج دشمنی باروا مخلوق جوانیا سرپد کثئی ۔
حنیف دلمرادا ماما بطور فلاسفر و راہشونا بیان کثہ۔
طاہر حکیم لٹ خانہ ئے باروا وثی تحقیقی کاغذا وا نغایث۔ باز گوں مہر او دلدوری آ۔
وائس چانسلر پروفیسر اختر بلوچ یونیورسٹیانی اندرا ماما عبداللہ جان شناسی ئے امکانانی سرا مجالسا ات۔
غفور شاد ا’’ بلوچی زبان و ادبئے دیمرئی واسطا عبداللہ جان جمالدینی ئے کرد‘‘ بیان کثہ۔ گوئشتئی کہ :آں نہ صرف مئے نوخیں ادبئے بنیادا یر کنوخانیں بلکہ ریسرچ، ٹرانسلیشن او نوخیں لوٹ و ضرورتاں گوں ہم گرنچ کنوخانی اگھی مڑدیں۔ بلوچی زبانئے بابتا آنہی اپروچ سائنسی اث ۔ سکرپٹ بی، یا اصطلاح و ٹرمنالوجی او درآمدیں لفظانی ہندی کنغ بی،یا زبانئے سٹنڈرڈائز یشنہ معاملہ بی ، عبداللہ جان ہر وخت گوں فہم وپوہا ہمشی گی ایشغا سانڑیں اث ۔ عبداللہ جان ہچبر اشتاف خورے نہ ویثہ۔آنہیا بلوچی زبان و ادبئے اندرا ادارہ سازی ئے کار باز کثہ۔تعلیمی ادارہاں بلوچی مان کنائینتئی خاص کں بلوچستان یونیورسٹیا۔
شادصاحبا دوہمی زبانانی استاد و ادارہاں گوں میر صاحبئے تعلق و سیادی دارغئے جہد و کوشستانی خاصیں صورتا پچار کثہ ۔
جیند خان ماما ئے سیاسی زیندھہ سرا ٹوکا کنغایت۔ سرداری نظامہ خلافا مامائے کرد، جاگیردار یا گوں مامائے نا ٹاھندی۔
دوستین جمالدینی آوثی او وثی خاندانئے پلواژہ انتظام کارانی تورو منثغت۔
شاہ محمد اوثی سجہ ایں دلگوش اے سر حالہ چکاکثہ ’’ پوسٹ عبداللہ جان بلوچستان‘‘ ۔
خاصیں مہمان بشیر بیدارث۔ آنہیا سردارو سرداری نظامہ خلافا وثی تقریر کثہ ۔ آنہیا وثی بخت گنڑثہ کہ آں مامائے شاگردے ۔ بیدار خاص کں مامائے سائنسی طرز و بھیرا ژہ متاثراث۔
عبداللہ جان یک اکیڈمی، ایک ادارہ اے اث ۔ آں ادارہ سازیں شخصیت اے اث۔ آنہیا بلوچستان یونیورسٹی اندرا بلوچی ڈیپارٹمنٹ پجھارو کثغہ او ہمشی چلائینغا مزائیں کردے اثی ۔ بلوچستان یونیورسٹی ئے شعبہ بلوچی سببادراہیں پاکستانا بلوچی زبان پجارے جیثہ۔
نتیجہ اے درکپتہ کہ لس مہلوک ماما آگوں پجارو بیثغنت ۔ شہ یک دگرا سکثیش۔ شہ یک دگرا۔ عوام ئے شعور دیما شتہ۔
پریذائڈکنوخیں گران و سنگینیں سنگت کے بی فراقا آتکؤ وثی تنظیم ئے بارہا ، او بلوچی ادبہ لافا وثی تنظیمئے کاروخذمتانی بارہا ہیٹر تیا بیان کثہ۔ پروفیسر عبداللہ جانا گوں وثی عقیدت درشاں کثئی او ہندی او دری آتکغیں مہمانانی تورو زرتغنت۔اواے گران و متین ایں مچی پرشغئے اعلان کثئی۔
مچی کہ پرشتہ تہ ما گڑ تؤ ہندا آتکغوں۔ سفارغ کثؤ درکپتغوں کہ تیابہ ( ساحلہ) چکر ے جنوں۔ مں وثی حالاسئی اثاں کہ سمندر مناں گنوخہ کنت۔ بس کہ ژہ گاڈیا ایر کپتغوں تہ بوٹ کشتؤ مں گوں موجاں لیواشروع بیثغاں۔ اندرائیا شتؤ ماخ و موج موجاں بیثغوں۔ آنہیا ہچ پرواہ نیستہ کہ سپرپاورمروشاں ٹرمپہ دستانیں، یا پاکستان باجوہ ئے حوالہہ ایں۔ آنہیا تہ وثی وشیں سنگت دیثغہ بازوختا رند۔ مں دِہ وثی پیر مڑدی لٹ سٹثؤ سری بندا ژہ وثی چُک کشتؤ وثی سرا حاوی کثہ۔ سمندر یک موجے ٹاہینی مئیں پلوہ چغل داث گوں اے چیلنجا کہ کونڈا میسینغامیل۔ مادِہ نزی بیوخیں موجہ وختا بڑزہ درک داث موج ژہ وثی پاذانی شیرا گزغہ کشت۔ سمندرا وس کثغنت پرماوثی کونڈ میسینغا نہیشتغنت۔
مئے ٹورنامنٹ جاری اث ۔آں وثی ہینیثراٹاگوں،او ،مں وثی ھذا داثیں زبانا گوں رننگ کمنٹریادِہ کنغئے ثوں۔
مادوئیں چُک شہ دنیا آ بے خبر لیواا ثوں۔ سمندر گوں وثی سجہ ایں خزانگ ومڈی آں، منے بے غرضیں عاشقا پہ پیلویاhave-not اے اث۔
بلے مں اکھر جذباتی بیثؤ اشیاگوں لیوا شروع بیثغثاں کہ جیوہ مڈی کشغ و گاڈی اندرا ایر کنغ شمشتغثوں۔ اوگڑہ یک آؤخیں موجے آژہ کونڈہ بھچینغہ خاطرا بڑزا ٹوپ داثؤں تہ مئیں اگھی جیبہ لافئے مئیں عینک دہ جذباتی بیثہ او وثار سمندرا چغل داثئی ۔ جیبہ اندرا آنہی سنگتہ دف دِہ آف بیثہ ۔ او آنہیا دِہ دھڑام وثار سمندرا چغل داثہ۔ ۔۔۔۔۔۔ اواے منی موبائل فون اث۔
کہ کپتغئے تہ کپتغئے۔جھٹے مڑثغانی کہ اللہ بھچینی ثی۔ پر اللہ آنہ بھچینتہ۔ بیٹرثؤ سوٹ کیسا ماں کثیں کہ کوئٹہ داں بلاّں بے موبائلی آبرواں۔۔۔۔۔۔۔او ما اگھی سے چیار روشا بے موبائل بیثغاں ( بے موبائل بیغ دِہ اللہ ای نیامتے)۔
اکھر کامیابیں پروگرامے بیثہ کہ خاران و تربتہ دف دِہ آف بیثہ ۔ آں دِہ پروگرامے کنغا باڑایاں۔

گوادر سمینارئے ریزولیوشن

-1 واجہ عبداللہ جان جمالدینی ئے ناما بلوچستان یونیورسٹیا چیئرے نا مینگ ببیت۔
ؑ -2 گوادر یونیورسٹی بلوچ لبزانتے ناما نامینگ ببیت۔
-3 گوادرئے اے دگہ بلوچ دَمگانی کدیمی ھَندی لیب و گوازیانی زندگ دارگ و دیمروی ئے ھاترا سرکاری کمکا لیبہ مقابلہ کنگ بنت۔
-4 دیمروی ئے پُشد ا گوادر ئے کدیمی ھَند و باجانی نام وتی اَسلی دروشما برجاہ دارگ بنت۔

Check Also

jan-17-front-small-title

یونیورسٹی آف بلوچستان

بلوچی ڈیپارٹمنٹ جامعہ بلوچستانا شعبہ بلوچی ہر سالا ادیباں لائف اچیومنٹ ایوارڈ دات ۔ اے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *