Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » گل خانہ بلوچ ۔۔۔ شاہ محمد مری

گل خانہ بلوچ ۔۔۔ شاہ محمد مری

پڑی آ بلوچہ ٹہکو آدِہ بہائیں او موتکا دِہ۔ چاپ جنوخیں دھریسوڑی، او جیرانڑاں قبر کنوخیںکاندھی ، دوئیں و ڈیو بنت و فنڈاں کا رنت۔کتاب پروش گشی کتابہ نامہ پجیا لفظ بلوچا اوارکں دَوری ایں گٹورہ ڈولہ بھابی۔ تنظیم و سیاسی پارٹی و فٹ بال کلبہ ناما بلوچا شیر دئے گڑہ گندی چندہ و پوڑیاں ۔ وث بلوچادِہ جی با۔ بلوچہ ناما بلوچہ پاڑہ پٹغا پہ دِہ اوارکنئے تو بلوچ یبریں ضرور دروھہ واڑت و اوار بیثی۔ بلوچ پکغیں باغے کہ بر شکند و پرات دوئینانی ٹھیکیداراں بے ٹنڈر و بولی آلکھ و کروڑاں داث۔ ڈکھ سکھ بلوچئے ،چرپیں آفشک ٹھیکیدارئے۔
پر ،ہمے ڈغارہ ہم رنگیں ڈب ،موڑی سراے نیم صدی ئے کارستانی ایں۔ میر گل خانہ و ختانی بلوچ رُکیں آسنثنت۔ رواج سازی ، رواج بازی او رواج پروشی کا ر وبار نہ ویثغثنت ۔ سادھیں زیندھئے دوست و دژمن جلشکوخیں سنگہ ڈولا سہرا اثاں۔ انگریز کہ ڈیھا مارتکہ تو نفسک و گوخ پروش وطں پالی ئے چیذغ بیثغنت۔ ہر مڑدم زہم زیر، زہم جن او زہم کارَث۔ وث سڑدار، وث وثی میش و گوامینشہ مختیار، او وث وثی تغار تلبہہ ئے محافظ و چوکیدار۔ نفرہ بے سندھوئیں آزاتیا ،چھڑو سماجی اغمہ کُنٹغوئیں لغام، وثی حدّا داشتیایث ۔ پیر مڑدائی سماجی اغمہ بڑز تریں واژھا نصیو بیث کہ سماجی باور و اعتبار ا ،سپاہی دِہ ٹاہینت او کمانڈر انچیف دِہ۔ سڑدار مالی و طبقاتی بڑزدستی ئے علامت نہ یث بلکنا بلوچی رواجانی جولاناں گاٹثیایک عامیں مڑدے اث۔ انسانانی باور و اعتبارا، چیف جسٹس و بارزیر و ترجمان و سردارئے عہدہ یک مڑدا بشکثغنت ۔ ہمے باورداریں مڑدجنگہ و ختہ ،کوانہ تیرہ مزلہ دِیر نشت اوشموذاں جنگہ کمانڈری کثی۔ پجیا چھڑو دومڑد نشتنتی: ہدودار، او شاھر۔ شاھرگل خانہ حق اث کہ سڑدار اپجیا©، جنگہ پڑاژہ دیر نشتے۔
پر کُل بلوچستان سلیمانہ کوہ نہ ایں ۔ملپذیں بلوچستان یک کیچہے، او گل خان ہمے کانٹی ننٹہ روش ٹُبی پلوا یث ۔ آنہی پڑنگ آبادا، و بٹوا، او کوہنگا ،جنگہ دروشم اُصل دوہمی اثنت ۔ ایذا جنگہ پڑ،ز ہم و سنگر نہ یہ، جلسہ جلوسہ ۔ ایذا شاہرا تیر کشہ حداژہ دِیرنہ ، بلکناجنگہ پڑا سانڑیں بیغی اث ۔ چیا کہ ہمے ڈیھاں تمنی و قبائلی نظام نزوربیثغہ۔ ایذاسنگری سنگت ھذائی پلواژہ سانڑیں نہ اثنت، پولغی اثنت۔ دستکوئی کنغی ، سرپذ کنغی او ہم صلاح کنغی اثنت ۔ایذامئے انقلابی ایں شاہر یکگ و بے سنگتث۔ آں وابیں براثاں ہوش کنائینیں، کُنگریں، بیل ویلاں پولی۔=بلکنا پیدابی خریدارے ، قیمتی گا لانی طلبگارے = گل خاں سنگت چنو خیں دانشورے اث۔وش گشیں گل خانہ دراہیں شاھری ادا سائیں کنغ، سرپذو پوہ زانت کنغ ، شاکارغ ، بیدار و چم پچ کنغ او سارا ئینغہ شاھری ایں…….. بلوچ چھڑو ہم صلاح بی لُڑی زور وزرہ زورا ہچبرنہ۔
سہریں ہنگریں گالانی واژھیں گل خانہ کلور ایشث کہ آں ایذ ا او اذاکفاناں ،کڑو بیاناں نیٹ بلوچی زبانہ سٹیشنا آتکﺅ پُجثہ۔ گڑھ شموذاںہچبرنہ جُزرتہ۔ شمیذ کو دیماشاھری کُل،بلوچی لا فئینی ۔چل سال ہول ٹائم بلوچی شاھری۔ اکھر باز شاھری کہ شانہی شاھری پڑھغا ما بلوچ کلچر، بلوچی شاعری ئے کلچر، اوبلوچی لفظ و حرفانی کلچر اژہ معلوم دار بوں ۔ آنہی خیالانی بنزہ دِہ بلوچ اث، اش کنوخ دِہ بلوچ، اومنوخ یا رذ کنوخ دِہ بلوچ۔ جُھل وپُل ، پاذوپینز ، ہڈو گوژد، بن و بنیاد ، زی و بانگھ ، بندات و عاقبت کُل بلوچ ، کل بلوچی، کل بلوچستانی…….. گل خان یک ویہ مڑدیا بلوچستانیں۔
خلق می گوید کہ ازیک گُل نمی آید بہار
من گُلے دارم کہ عالَم راگلستان می کند
گل خاں کہ شلوار پاذی بیثہ تہ سُنبل و گل آفرینیں بلوچستان انگریزانی زُنڈانی شیراد یثئی ۔ شماں روشاہمے دراں ڈیہی نرازاں ژہ ،بلوچہ پاغ و شملہ ئے رکھغا پہ جرلانچنغنتی ۔ او ہمے لانچثہ شلواری وثی یندھئے روش ٹُباداں برجاہ داشتئی ۔شعور آتکئی کہ آکسیجنا پریں بلوچستان ھذائی پلواژہ چھڑو بلوچانی پپڑاں پہ ریزویں۔ او ہمے فیصلہ داں آخرا تبدیل نہ ویثئی ۔ کہ بلوچستان مئے جَدّانی پاکیں ہَندوگوریں۔زیلانی تنکیں کوٹی جھلثغنتی ، ژہ سٹیٹا جلا وطن بیثہ ، براث و براہند غ کُشا ئینتغنتی پروثی لوز و قولا ژہ نہ گڑتہ۔
آں اے نتیجہ آدِہ پجثہ کہ چھڑوبلوچ نہ بلکنا دراہیں دنیا آ ہر قومہ وطن ،بلاّںپہ ہما ں قومہ جندابی۔سامراج مقامی معاملہ اے نَیں اے جہانی ہﺅپے۔ہچ زور اورا، ہچ زاغ وزغنا،ہچ چوٹ زوانادوہمیانی دنگہ شیر ترینغہ حق نے۔گل خانئے بلوچہ سامراج دژمنی سبب ،آنہی جندہ سراگوئستغیں درملکی زورا خان گوں دراژو زہرنیں جنگیں ۔ چکھراشرافیں مڑدم اثنت کہ بلوچ داں عاقبتاسامراج دژمن ٹاھینتیش۔نزوریں لتاڑتغیں قومانی سنگت کثیش۔بلوچ وثی جندہ سامراج دژمنیاانٹرنیشنلسٹ ٹاہینتہ۔ او گل خان ہمے پڑامئے توارو ترجمانث۔ پوڑیانی یک کنوخیں گل خان۔
بلوچہ سماج وث دِہ چُپ گڑ پیں سماجے نَیں۔ اے سماج لَون لونیں، اے یک بھیرو یک رنگ و یکساں نَیں۔آں وثی راجئے درماندگی، گژنغی، احتیاج،او پذکپتغی سرا پکر کنوخیں انسانے۔ ایذا، پِلنگہ دَرگہا کپتغیں نرازیںبھاگیاینت۔ آنہی سیث و کٹ گوں نیز گارہ نیز گار بیغیں۔پلوایذازیاں کاریں حکومتیں، ریاکاریں عدالتیں، جرگہ و لب و بجاریں۔ ایذاسیٹھیں سودوار، سیاہیں بازار، کھڈیں انبار، زرپالیں حاکم ، ڈونڈواریں مڑدار، ٹھگیں سوذاگر، ہوں وریں گرک است و موجود نت، کہ بلوچ استمانا پہ چمانی پٹغہ نیلنت۔آں پلوخیں طبقہہ پجھ کاری اکّیلا کنت۔گل خان وثی بلوچہ ڈسی کہ محل و ماڑی و طلائیں پوشاک و مال و مڈی و گیابیں املاک، ہنچو ہیر ھذائی دستہ نیا ینت ۔ آں گندی کہ یکے پُریں ہمانی، دوہمی ئے پدو ہورگی ئے نتیجہ ئیں۔ یک چالاک و روباہیں بلوچے ہزاریں ساذغ و بود لائیں بلوچاں پرامی ھذیں مزں لاف او بھاگیا بی ۔ گوں ہمے پوہ وزانتا گل خانہ بلوچ دراہیں فیوڈل نظامہ خلافہ کڑوبی ۔ فیوڈل کہ سلھاڑتی ایں گوں ہپت کوھہ دری دِنگاں ۔ فیوڈل کہ سنگتیں گوں ملٹی نیشنل کمپنیاں، گوں ملاّوہنگیں کاغذاں، گوں ٹُک گریں پیر او وث سریں شاہاں،گوں منڈی و پڑی ئے واژھاں ، گوں زمب و اریں شیہہ او دانشوراں ، گوں ظالم و زوراخاں او ڈُنگ و ڈاکوئیں میراںسڑداراں ،واجگاں…….. گل خانا وثی بلوچ ہمے کلانی خلافاپوہ و باشعور کثو او شتارینتہ۔ گل خانہ بلوچ ،نسل وہون و بولی ئے بلوچ نَیں آں طبقاتی بلوچیں۔سادہیں ٹوک نیں کمپاﺅنڈ بیثہ۔ بلوچ ہڑکشتغیں پُلوخیں بلوچہ ،دری زوراخانی کُٹا نشتغیں بلوچہ ،او ،دونانئے مولدیں بلوچہ ہچبر وثی براث نہ لیکی۔
گل خان طبقاتی بلوچ سماجہ لکینی نہ ، او ڈھروابدیں نہ خنت۔ آں شاہ و گدا ، ازگارو گریو، بوتا روراہک، مظلوم و ظالم، اومولدوگودی ئے یاری آگرک و پسہ یاری لیکی، کہ ہچ بر بیثہ نہ وی۔کلی کیمپہ اندرا ناروخیںگل خانہ بلوچ مجبور و نزورہ سنگتیں۔ آںپورہاتی ایں پا ک باطنیں گوئزورہ سنگتیں، پہ گریواں آنہی دست چوغیبی کمکا ینت۔آںبگ جت و شوانگ و مجبور و بزگر و کمزورہ سریں بندیں۔ وہارو ہراب و لنگڑو لوچ و نزورو بزگ و نادارو بے علم و بے ہنرو نا بودو کورہ پلہ بندیں۔
پر ، آں گندی کہ سماجہ تنظیم و ساخت ہمے ڈولینے کہ اشی چپی کنغا بغیر آنہی بلوچ آزاد بیثہ نوی۔ آں گندی کہ استیں سماج گوئپتی ایں اے ڈولا کہ گوں کستریں ڈِٹکاراں دَراہی نہ۔ شخصی جوانہہ او انفرادی نیخی ریخہ آفہ ڈولہ رونت گارہ باں ۔گل خاں ہمے دِیر پاڑو باز شاخیں رستریں نظامہ چپی کنغا پہ وثی بلوچاں آپتی یک کنت، سلھاڑی ،او منظم کنت ۔ آں نزورو پُلثغیں پورہاتیانی سیاسی پارٹی اے ٹاہینی او گوں زردارو ڈنگیں طبقہ ئِ پارٹیا جنگہ نیتہ تیارہ کنت۔گل خانہ بلوچا ہر وخت نوخ و رنائیں جذبہ، او ارادہئے سُھریں بیرک دَستیں ۔
گل خانہ متبادلیں نظامہ نام دِہ مرشی روزگارئے یک سندرے ٹھیثہ ۔ ہر پاک و عزتمندیںٹرمنالوجی زرداراں لڑثﺅ، لیغاروکثہ۔ اے خاطرا مں سوشلزمہ نامہ نہ گراں ، ہماں ورداسہ دیاں کہ گل خانا داثغہ ۔ بلوچا پہ گل خانہ تجویز کثغیں نظام ہما نہیں کہ تہا اِش غریباں پہ نازل مصیبت مہ ویثی، امیر انی ظلمیں حکومت مہ ویثی، کسے آچہ کسا شکایت مہ وی ، او، کہ عزت گوں انبارِ دولت مہ وی ۔
گل خانہ بلوچ بھڑینانی بھڑی آگار نہ خنت، دیمہ کاری ثش ۔ آں تونڑیں کہ بلوچیں نورا مینگل ولعل شہید ونوروزومیوہ او کہنیا بگٹی بنت یاغیر بلوچیں نہرو،اوجالب، اوکاسٹرو، اولینن، یا کارل مارکس بنت۔
گل خانہ آئیڈیلیں بلوچ ،روایت پرست ہچبرنَیں۔ آں رسم و رواجانی بندی نَیں۔ لٹ زڑتغو عقلئے رندا کپتغیں بلوچ آنہی ئے نَیں۔ گل خانہ وطن بہو شانی وطن نَیں۔ گل خان تہ گشی کہ کہنیں راہ و گمان :قوماں نیلنت پہ امان۔
ہرپلوا ژہ گیواڑی داثغیں بیٹر ترینتغیں بندی ایں مخلوق بزاں زال و جن ،گل خانہ بلوچہ نیخ نغا ہی ئے خاصیں حقدارَنت۔ آنہیازالانی زارھہ لوا،ژہ بلوچی زبانا چٹ کشتﺅ چغل داثہ۔گل خان بلوچیں جنکّہ بے عملی ئَ نیلی۔گل خانہ بلوچ لب واریا ژہ ،دیر تر ینزی ۔آنہی بلوچ مردین و جنینا ہم تنگ گندی، آنہانی عزت و شرفہ ہمسنگ لیکی۔
گل خانہ بلوچ تنک و تغار گندیں قبائلی عینکاں دیر چغل دات و مزں پاندیں بلوچہ بی۔گل خاں وثی لیلویں بلوچہ سڑدارہ چُلھہ پُر کشی ئَ ژہ کڑوکں آزادی ئے مزں پاندیں کیچہاں باڑت کلّی۔آں وثی بلوچا سڑداری نظاما سِنگ جنوخ ٹاہینی۔ گل خانہ بلوچ ہر فرعونہ او طاقا ژہ تراسہ کنت، او وثار دیرداری ژہ دربارا ، ژہ سرکارا۔© گل خان، ہژمب خلاصیں گل خان۔
گونڈل لوزیں گل خان، تگ و تاچیں زندہ لافا ،بلوچاپذ کفغہ نَیلی ۔ آں بلوچا پہ نا بودیہ، پہ وہا وینغی ئَ اصُل نیلی۔ آں تہ وثی قوماجھٹ وجھمب ،تیز گامی و بے سکونی، شیموش و ترندروانی ئے ہکلاں داث، چا بک و چالاک او علم وہنردار کنغہ پہ سیکالی ثی۔ آنہی بلوچ قدم قدم روانیں ، دلیر یں، پہلوانیں۔آنہی ورنا پہ آزادی ئے بیکانی مانا رغا، پہ جُہدا ، پہ عملاّ، پہ کارا ہر وخت سریں بستغیں۔ آ ںوثی بلوچا بے امیدی اوبے توفیقی پلوا روغہ نیلی۔گل خانہ بلوچ نیخ نیت و صاف دلیں، سر جھل نہ خنوخے۔ آنہی بلوچ مزں سگ ایں ، مڑاداریں۔ بنگویں، جور جواویں، عالم و پہمندھیں، دُرکتابیں ۔آںگال و گفتارا ہُل و کاٹارے ، کارو کردارا سُچہ ڈاتارے۔آنہی ورنا عامیں ورنائے نئیں، گیہلیں بنگلیں ورنائے ، قوما پہ دل کبابیں مڑدے، آں مڑاداریں، دل مترسیں سرمچاریں، سرمچنڈیں۔ ایذا بلوچ انیشغ بستغیں تنک طبیعت او زہروڑ ی اے نَیں، آں تہ ٹہکو جنوخیں، وش مجالس ایں، خوش خرامیںانسانے۔دوہمیاں مار ہرچی کہ سخت و سنگدل مشہور کثہ، ما چوش نہ اوں۔گل خانہ بلوچ تہ باز نرم دلیں۔ آنہی چم پہ ڈکھاں غماں کڑدیاں آفسارہ بنت۔ آں گرے ای دِہ ۔ او کہ گرے ای تہ زار زار گرے ای، الہانہ کنت نوذی شلی۔ترونگلیں ،گلگلیں، گُم گمیںانڑساں ریشی۔ما تو کلی رڑغا دیثہ، ما جامہ زارہِ اَش کثغنت، مارن و چوری کوکُغا دیثغنت۔
گل خان زیندھہ، کُوڑی ئے مزائیں نیامتے لیکی۔ ہمے نیامتہ گزر کنغ و ہنڈائینغہ پُشتا قدرتئے ارادھا پولی گندی۔ اے نتیجہا کشی کہ زیندھ بے مقصد ہچبرنیں۔ زیندھ چم جہل اوبے لج نَیں۔گل خانہ بلوچ زیندھئے نیامتاں پیلویں بہرہ گیڑت ۔ آں نرم و نازکیں صَحر گواثہ پجھ کاری، پیلوشیں آہاڑاں وش آفیں کانافاں نوشہ کنت، چیتر و بہار گاہئے امبرومِسک و سمن بو آں وثار ڈوباری ۔ زری نوذاں گوں وثی دلہ نرمہ کنت ، گوہریں ترنپاں شاثیں بلوچ سیاہیں جڑانی کندغاں بھانکر کنت، چاٹوانی ترندیں شنز غاں سینگھاری۔ سوزیں چَراغاں، ملگزاراں گھولی پولی ۔ پرپغا نی برشکنداں برشکندی ، وش بو آں سندی وثی کوکریں پاغئے ولاں توخہ داث۔ گل خانہ بلوچ پہ سوادھ و سیلہاں عاشقیں۔ آں پہ زیبداریں چہرو جھنڑساراں وثی ساہ و سرہ ندر کنت۔آں نڑوسراں، محفلاں مچیاں چٹکیاں جنت۔ سیراں شاذہاں ہلوہالو کنت چاپ وہمبو ئَ کنت۔
گل خانہ بلوچ ژہ فیوڈل اخلاقہ زڑدوئیا پکّوائیںوی۔ آں نَیں ہُشک و لاغرو زڑدترثغیں زاہدے او نَیں اصطلاح بازیں بے کرامتیں انقلابی اے۔ گل خانہ بلوچا سوزیں ہمبوئیںدلے گونیں۔ آں گنوخے گوں وثی دلہ جھیڑی ، مہرہ کنت۔ گل خانہ بلوچ عاشقے۔ یاراں داری، دوہپت سالی، ہیر دروشمیں ہنج گڑدنیں خمار چمیں، شیفغ پونزیں ، مہتوس و ماہل وکَجل چمیں دلبراں داری ، شینزارہ کنت ڈیہی آں جنت۔ آں بھانکراں دیر بیثغیں دوستہ پہ باڑابی ، چندن ہاریں، کپوت گامیں، پری رنگیں یارا پہ زہیرہ بی۔ دیذارو گندوانا پہ وازمندیں زَروخیں روح پلپٹی پلپٹینی ۔ آں درائیاں کنت، درائیاں گَھٹ بیغہ نیلی، درائیاںرو۔تحفہ و سوکڑیاں باڑت۔ نندونیا ذہ کنت، وثی مُشتہ بیکیں دوستئے شکلیںدیمہ چُکی، آنہی گواڑخی سہریں رکّاں شیری تنگی، اوپُشتی ئَ کوفغہ کنت سرگیڑت پہ نوخافیں انقلابا۔

Check Also

March-17 sangat front small title

گوادر، ادب اور سمندر۔۔۔ فاطمہ حسن

گوادر جو کبھی اپنے خوب صورت، پُرسکون ساحلِ سمندر کی وجہ سے پہچانا جاتا تھا، ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *