Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » نظم…. صنوبر سبا

نظم…. صنوبر سبا

پا بہ زنجیرنہ کر

پا بہ زنجیر نہ کرکہ !دل میرا وحشی ہے

قدم کہیں پہ ہیں تو من کہیں پہ

دل کو قید کروگے تو!محبت کیسے کریگا؟

مجھے پورا کرنا چاہتے ہو یا ادھورا؟کہو! محبت مانگتے ہو یا غلامی؟

محبت میں غلامی کاکیا سوال !

میں نے تمہارے ہاتھ میں ساری کائنات رکھ دی

تم خوابوں کا خیالوں کا حساب مانگتے ہو تو سنو!

میرا گناہ آدم کے گناہ سے بھی بڑا ہے

اس دھرتی پہ آگ میں نے لگا رکھی ہے

میں ہر دن موت کو بھول جاتی ہوں مگر!

زندگی کو نہیں بھولتی،میں روح سے جدا ہو کر

سانس لینا نہیں چاہتی!

مرنے والے جینے والوں سے زیادہ سکون میں ہیں

سنو !کھیل اور تماشے میں بہت فرق ہے

بازی لگاو گے تو! تن من ہارنا پڑے گا

تماشہ دکھاوگے تو تمہاری جھولی میں کھنکتے سکے آگریں گے

جب حقیقت تھپڑ کی طرح تمہارے منہ پہ آ لگتی ہے

تو تم تھپڑ نہیں اپنا منہ ہی بھول جاتے ہو

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *