Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » میں کہاں ہونا چاہتی ہوں ۔۔۔ فہمیدہ ریاض

میں کہاں ہونا چاہتی ہوں ۔۔۔ فہمیدہ ریاض

ایک ٹرین میں
جو تیزی سے گزرتی جائے
چناروں کے گھنے جنگل سے
اور سفید جھاگ اڑاتی طوفانی ندی کے پل سے
لیکن میں دو جگہ ہونا چاہتی ہوں
اس ٹرین میں ، اور اُس کے ساتھ ساتھ اڑتی ہوئی
تاکہ میں اس پورے منظر کو دیکھ سکوں
منظر میں داخل ہوکر میں
بہت کم دیکھ سکی
جبکہ اس ورق پر میں سن سکتی ہوں ٹرین کی آواز
اس کی یکساں متواتر ردیف
اور شیشے کی بند کھڑکی سے باہر
ہوا کی غراہٹ
شیشے سے ٹکراتے زرد پتے
جبکہ میں تمہارے ساتھ نشست پر بیٹھی ہوں
دونوں ہاتھوں سے رگڑ کر تمہارا ہاتھ گرم کرتی ہوں
ایسا کبھی نہیں ہوسکا
افسوس تو ہے
اگر میں تصور کو اکساوں
تب تم میری طرف دیکھوگے
جیسے ہم نے بانہوں میں لے لیا ہو
موسم سرما کے جنگل کو
جو برق رفتاری سے پیچھے کی سمت بھاگ رہا ہے
ہوا کے شور کو، طوفانی ندی کی روانی کو
ٹرین کی رفتار کو
جیسے ہم نے اپنی آغوش میں بھر لیا ہو
تب ہم ایک ہی پل میں اکھٹے دو جگہوں پر ہو سکتے ہیں
اپنے منظر کے اندر
اور منظر کے مبہوت ناظر

Check Also

jan-17-front-small-title

گوادر کے مچھیرے  ۔۔۔ سلمیٰ جیلانی

کبھی ہم مچھیرے تھے جال میں پھنسی چھوٹی مچھلیاں پانی میں واپس پھینک ان کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *