Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » میٹریلزم او‘ امپیریوکرٹسزم ۔۔۔ ولادیمیر؍شامیر

میٹریلزم او‘ امپیریوکرٹسزم ۔۔۔ ولادیمیر؍شامیر

’’ماخ ؔ ‘‘و ’’ ایو ینار ؔ یو سا ‘‘علمہ نظریہ ئے وثی بنیادی اصول وثی سری نوشتانکانی اندرا راست گوئی، سادغی او ہیٹر تیا بیان کثغنت ۔ ماہمے نوشتانکانی باروا ٹوکہ کنوں ۔ پذاہمے لکھو خاں ہمے نوشتانکانی لافا ہرچی تبدیلی کہ آڑتغنت اوہمانہانی غلطی کہ کشتغنت آنہانی مطالعہ او تجزیہا پذی وختے واسطا ماثل داروں۔
1872 آ ما خا لکھثہ’’ سائنسہ مقصد چھڑو اے بیثہ بی کہ :
1۔ خیالانی رابطہ قانونانی اکیلا کنغ( نفسیات) 2۔احساسانی رابطہ قانونانی دریافت کنغ ( فزکس)
3۔ احساس اوخیالانی نیا ما رابطہ قانونانی بیان کنغ (نفسیاتی فزکس)‘‘۔ اے بالکل او شیشیں۔
فزکس احساسانی نیا ما رابطہ ایں ،نہ کہ چیزانی یا جسمانی نیا ما رابطہ ، کہ آنہانی عکس مئے احساسنت ۔ او1883 آماخاوثی نوشتانک’’مکینکسہ‘‘ اندرا ہمے پکر دوار گوئشتہ: ’’ احساس ‘‘ چیزانی علامت نہ ینت۔ ’’ چیز‘‘ تو دروکا پائیداری ئے احساسانی یک ڈھیرے آپہ دماغی علامتے ۔ چیز ( اجسام) نہ بلکنا رنگ ، توار، پریشر، زمان ،مکان ( کہ مااحساس گشونش) دنیا ئے اصلیں بن بہر وعنصرانت ۔
ہمے لفظ’’ عنصرہ‘‘ بارہا ما پذا ٹوکہ کنوں کہ ’پکروگنڑتی ئے ‘ دوازدہ سالہ نتیجہ ایں۔ فی الحال بیائیں ماگندوں کہ ماخ ایذا ہیڑتیابیانہ کنت کہ چیز یا جسم احساسانی مجموعہ انت ، او اے کہ آں او شیشیاہمے مخالفیں نظریہ خلافا وثی فلسفیانہ صلاحہ اے ٹاہینی کہ دعوی اِش ایشیں کہ احساس چیزانی ’’ علامت‘‘ انت ( چیزانی عکس گشغ زیات درستیں)۔ ہمے پذی تھیوری فلسفیانہ میٹیریلز میں۔ مثال:میٹریلسٹ فریڈرک اینگلزوثی کتابانی اندرا یکو ،او دھک مں دھکی چیز او آنہانی دماغی عکس، یا پوٹو آنی بارہا ٹوکہ کنت، او اے ظاہریں کہ ہمے دماغی عکس چھڑو احساساں ژہ پیدا بنت۔ہمنگا معلوم بی کہ ’’ مارکسزمہ فلسفہ‘‘ ئے ہمے بنیادی ٹوکہ علم ہر ہماں مڑدما باید یں معلوم بی آں کہ ہمشی ٹوکہ کنت، او خاص کں ہما نہیا کہ ہمے فلسفہ ئے نامہ چکا چھاپ بی۔ بلے مئے ما خسٹانی پلواژہ پیدا کثغیں کنفیوژ نہ سببا ہمے ٹوک دوارکنغ ضروری بیث آں کہ موڑی سر پیشا ژہ معلومیں ۔ ما’’ انٹی ڈو ہر نگہ ‘‘ اولی بہر ہ بوژوں پڑھوں:’’……..چیز او آنہا نی ذہنی عکس ……..‘‘ ؛ یا فلسفہ بہر ئے اولی سیکشنہ لافا پڑھوں:’’ پر فکرہماں اصولاں شکودستکوئی کنت (بزاں سجہ ایں علمہ بنیاد ی اصولاں)؟اژوث؟ اناّ…….فکرہمشاں نَیں تہ اژوث پیدا کثہ کنت او نیں دستکوئی کثہ کنت، بلکنا آں چھڑوڈنی دنیا آژہ کاینت۔۔۔۔۔۔ہمے اصول تحقیقہ بنداتی ٹوک نہ ینت ( چوکہ ڈیورنگہ خیالیں آں کہ میٹیریلسٹے تہ بیثہ بی پر محکمیا میٹیریلزمہ گوں سنگتی داثہ نہ خنت) بلکنا ریسرچہ حتمی نتیجہ انت۔ اے نیچر او انسانیتہ علاقہ نہ ینت کہ ہمے اصولاں گوں یک واجھ بنت بلکنا اصول تہ راست ہماں وختہ دَہ بنت داں وختیکہ آں نیچر او تاریخا گوں یک واجھیا دارنت ۔ ہمے معاملہ ہمے یکیں میٹریلسٹ نقطہ نظریں ، اومسٹر ڈیورنگئے بالکل پٹائیں نقطہ نظر آئیڈیلسٹیں ،کہ چیزاں پیلویا پٹائیا جکینی او حقیقی دنیا آخیالاں گوں دروشمہ داث۔ ما دوار گشوں کہ اینگلز ہمے ’’ واحدیں میٹریلسٹیں خیالہ‘‘ہر ہندے او بے فرق و ابے گشین پشینہ گزر کنت، او ڈیورنگہ چکا میٹریلز ما ژہ آئیڈیلزمہ پلواکستریں چپ چوٹہ چکا دِہ ناترسیا گوں ہلمہہ کنت۔ ’’ انٹی ڈوہرنگ او لڈوگ فیورباخا‘‘ کسے کہ دروکڑوئی دِہ خیالا گوں پڑھی تو آنہیا ہمنگیں بازیں ہند ملنت کہ او ذا اینگلز انسانی دماغہ اندرا،مئے زانت و فکرہ اندراچیزانی او آنہانی عکسانی ٹوکہ کنت۔ اینگلز اے نہ گوئشی کہ احساس یا خیال چیزانی ’’ علامت‘‘انت ، اے خاطرا کہ ثابت قد میں میٹریلزم ایذا بایدیں ’’ علامتانی‘‘ ہندا ’’ عکس‘‘ ، پوٹو، یا سایا گزر بہ کنت۔اشیا ما مناسبیں ہند یا دراژیہ بیان کنوں۔ پرایذا ٹوک میٹریلزمئے اے یا آں قاعدہ ئے نَیں ،بلکنا ٹوک میٹریلزم و آئیڈ یلز مہ مخالفتئے غیں، ٹوک فلسفہ ئے دو بنیادی دگانی نیا ما فر قیغیں۔ مار چیزاں ژہ احساس او فکرہ پلوا روغی ایں چہ؟ یا مار فکر او احساسا ژہ چیزاں دَہ روغی ایں ؟ ۔سری ،بزاں میٹریلسٹ دگّہ اینگلز روث ، دوہمی دگ بز اں آئیڈیلسٹ دگ ماخازڑتہ ۔ ہمے بگی او صفائیں حقیقتا ہچ اگھ و پذے، ہچ دلیل بازی اے گارکثہ نہ خنت کہ ما خہ اے نظریہ کہ چیز احساسانی ڈھیرے انت، موضوعی آئیڈیلزم او برکلے ازمئے دوہمی دروشمیں۔ اغر، چو کہ ما خ گشی جسم ’’ احساسانی ڈھیرنت‘‘ ، یا چو کہ برکلئے آ گوئشتغث’’احساسئے ڈھیر‘‘ انت تو خامخا اے نتیجہ درکفی کہ سجہ ایں دنیا چھڑومنی خیالیں ۔ ہمنگیں سرحالے آژہ شروع کنغہ گوں اے بی کہ اژوہ بغیر دوہمی مڑدمانی ہستی منغ گراں تری : اے کلاں ژہ زیات سُچائیں دلیل بازی اوسو فسطائیت(sophism )ایں۔ ماخ ، او یناریوس ، پٹیز ولڈٹ اینڈکمپنی سو فسطائیتاژہ تونڑیں ہر چی کہ تو بہا کننت ، آں اصلامں منطقی جخماری ئے گپاں گپغہ بغر سو فسطائیتا ژہ بھچثہ نونت۔ ماخ ازمہ فلسفہ ئے ہمے بنیادی ٹوکہ انگت زیات ورداسہ دیغا پہ ،ما ماخہ نوشتانکا ں ژہ کڑدے دوہمی ٹکراں ایذا کاروں۔’’ احساسانی تجزیہ‘‘ آژہ یک نمونغے اشیں:
’’ مایک جسمے گندوں کہ آنہی ئے یک چونبھے استیں، ’’ج ‘‘۔ اغرما’’ج ‘‘آوثی جانا جنوں تو اے مارماں شفی ۔ ما ماں شفغہ محسوس کنغابغر’’ ج‘‘ ءَ دیثہ کنوں۔ پر ہماں وختہ کہ ماماں شفغہ محسوس کنوں تو’’ج ‘‘ماروثی پوستہ چکہ ملی۔ ہمے خاطر ادیثہ بیوخیں چونبھ یک یکو ئیں نیوکلیس اے ، کہ آنہی پجیاحالتانی مطابقامانشفغ یک حاد ثاتی چیزے ڈولا سلھاڑتی ایں۔ یک ڈولیں واقعہانی یکودھک مں دھکی کنغاگوں ماآخر کا ر وثار اے ٹوکہ عادتی ٹا ہینوں کہ ماجسمانی سجہ ایں خاصتیا ں ’’نتیجہ ‘‘ لیکوں کہ مدامی ایں نیو کلیساں ژہ او وثا داں جسمہ ذریعہاپجینغ بنت :ہمے نیتجہاں ما احساس گشوں……..‘‘

Check Also

March-17 sangat front small title

گوادر، ادب اور سمندر۔۔۔ فاطمہ حسن

گوادر جو کبھی اپنے خوب صورت، پُرسکون ساحلِ سمندر کی وجہ سے پہچانا جاتا تھا، ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *