Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » میر گل خان نصیر کی براہوئی شاعری….ایژ عبدالقادر شاہوانی

میر گل خان نصیر کی براہوئی شاعری….ایژ عبدالقادر شاہوانی

میر غوث بخش بزنجو نے کہا تھا: ” گل خان جمہوریت ، انسانیت اور شرافت کے قیام کے لےے ہونے والی جدوجہد کے ایک سپاہی تھے۔ اس نے اپنے مقصد کے لےے شاعری اور جیل و زنداں کے ذریعے جہاد کیا۔ وہ انسان کے لےے انسانی شرافت کے لےے اور انسانیت کے لےے لڑتے رہے۔ اوریقیناً بلوچوں کے لےے بھی لڑے۔ کیونکہ بلوچ بھی انسانیت کا ایک حصہ ہیں۔
میر گل خان نصیر نے اپنی شاعری کی ابتدا چھٹی جماعت میں پڑھنے کے وقت براہوئی زبان سے شروع کی۔ کالج میں پہنچ کر انہوں نے اردو ا ور فارسی میں بھی طبع آزمائی کی۔ لیکن عجب ہے کہ اس کی شاعری گل و بلبل کی بجائے قومی اور وطن دوستی کے نغموں پر مشتمل ہے۔اپنی براہوئی شاعری کے متعلق راقم الحروف کو ایک ملاقات میں بتایا کابل دریا کی سیر کے دوران چند دوستوں نے طعنہ دیا کہ میں بلوچیت کا دعویدار ہونے کے باوجود دوسری زبانوں کو ذریعہ اظہار کیوں بنا تا ہوں ؟۔ چنانچہ اس دن کے بعد سے میں نے بلوچی زبان کو ہی کلی طور پر اپنایا؟۔
میر گل خان نصیر نے براہوئی زبان میں کافی شاعری کی ہے اور اس کی براہوئی شاعری بھی عوامی اور انقلابی ہے۔ انہیں سرداروں میروں، معتبروں کی تن آسانی اور مفاد پرستی شدت سے نا گوار گزرتی ہے ، چنانچہ وہ اپنے جذبات کا اظہار یوں کرتے ہیں:

” دے حسرتا دا حالے بلوچا تا ہو نم

تاریخاں کل جہاں نا نام و نشان تا گم

ہمت کبو خدانا پنٹ بش کبوتا نم

خا چو کے اوفتا غیرت، لگانے اوفتے سُم

خا چنگ کُننگ کن جو انو، سو برنج نا

انگور، انار، سوف و زردا لوترنج نا

پھڈے کرینو بھلن قابل افس ننگ نا

غالی تیا تماّ نو مثلٹ گرنگ نا

کفتاران بار سیر کرینو ہلکیرہ

نشہ ٹی بسو نو، دیچا انت انت بکیرہ

دے ئس تُغان سما کرور او تیار مرور

زیارت کن پی اے صاحب نا ضرورہنور

گھنٹہ ئس اِرٹ درگہ نا تہ مونا جک سلور

دے ئس خنور مونے تہ دے ئس خیزور

حکم بروئے اینو نمے ای کہ خمپرہ

نورانی، دامو نے نُمے ئَ پاش کیرہ

ترجمہ:

افسوس بلوچوں کی حالت زار دیکھو

دنیا کی تاریخ سے ان کا نام و نشان گم ہوگیا ہے

خدارا، ذرا ہمت سے کام لو اور ان کو خوب غفلت سے جگاﺅ

ان کی غیرت بھی سوئی ہوئی ہے اور وہ موت کی نیند سو رہے ہےں

امیروں اور معتبروںکو کھانے اور سونے سے فرصت نہیں، گوشت اور
پلاﺅ کے دلدادہ ہیں

انگور، انار، سیب ، زردالو اور ترنج کے شوقین ہیں

قومی ننگ و غیرت سے بے پرواہ ہیں

بڑے بڑے پیٹوں کو بھر کے قالیوں پڑ پڑے رہتے ہیں

وحشی درندوں کی طرح پیٹ بھر کر سوتے ہیں

اور نشے کی حالت میں کیا کیا بکتے ہیں

صبح گھر سے تیار ہوکر نکلتے ہیں

اور پولیٹیکل ایجنٹ کی زیارت کو اپنا فرض سمجھتے ہیں

گھنٹوں اس کے دروازے پر کھڑے رہتے ہیں

کبھی دیدار ہوتا ہے اور کبھی نہیں ہوتا

کبھی حکم ملتا ہے کہ آج ملاقات نہیں ہوگی

میر گل خان نے ” مشہد نا جنگ نامہ“ جنگ نامہ مشہد کے زیر عنوان ایک طویل نظم لکھی ہے ۔ جس میں حمد، نعت و منقبت سے ابتدا کی گئی ہے۔

یہا ں اس نظم میں شامل حمد کے چند اشعار:

حمد

شروع کیو پنٹ ای یک ثنا نا

کہ لائخ افٹ ای او نا تنانا

ارے قادر کریم و مہر بانے

کرے قدرٹ بڑ ہفت آسمانے

کرے تو بے ودے استاتے پیدا

نباتات و جماداتے نی ہم چا

ارے تعریف کل بے شک خدا کن

کرے پیدا ننے تینا ثنا کن

ترجمہ:

خدائے واحد کے نام سے شروع کرتا ہوں

اگرچہ میں اس کی ثنا کے لائق نہیں

وہ قادر کریم اور مہربا ن ہے

اس نے اپنی قدرت سے ساتوں آسمان کو بلند رکھا ہے

اس نے چاند، سورج اور ستاروں کو پیدا کیا

نباتات، جمادات، سب کا خالق ہے

حمدو ثنا اس ذاتِ واحد کے لےے

اس نے ہمیں حمد و ثنا کے لےے پیدا کیا

نعت

محمد مصطفی ختم رسالت

مصطفی شافئی اُمت

محمد رب تا دوست و جیبے

محمد درد منداتا طبیبے

محمد پیشوائے دو جہان تا

محمدناز بردار لا مکان نا

رسولاتا امام و پیشوائے

ارے کُلاں پسند تینٹ خدائے

ترجمہ:

محمد مصطفی پر رسالت ختم ہوئی

آپ امت کے شافی ہیں

آپ رب پاک کے دوست اور حبیب ہیں

آپ درد مندوں کے طبیب ہیں

محمد دونوں جہاں کے پیشوا ہیں

اور رب لا مکان کے نا ز بردار ہیں

آپ مرسلین کے امام اور پیشوا ہیں

آپ خدا کے پیارے ہیں

میر گل خان نصیر شہید ِ وطن خان محراب خان شہید کے بارے میں اپنے قلبی جذبات کا یوں اظہار کرتے ہیں:

خان شہیدے خان خاناں

غازی خواجہ مہراب خان

کافرتوں نیکی پوکے

گربدی خنتا روکے

لٹ ئٹ خل خا چف لو کے

غازی خواجہ مہراب خان

پٹ نے پا وہ انگریز

چال باز نگا شر انگیز

کافر ظالم دھن چنگیز

غازی خواجہ مہراب خان

پھُلان بارنی داڑے بر

گندس خوشبو جوانو کر

خا چو کا تے نی بش کر

غازی خواجہ مہراب خان

بر کہ نن نے حالے پان

یا صلوٰة داکا کان

کیک دعا ہنا گل خان

غازی خواجہ مہراب خان

ترجمہ:

خان خاناں شہید ہوگئے ، لاکھوں افسوس اور ارماں ہم قربان جائیں، غازی خواجہ مہراب خان کافروں کے ساتھ نیکی رائےگاں ہے ، بلکہ رائی کے مترادف ہے ، مست اونٹ کو ڈنڈے سے مار کر گرنا چاہےے ۔ انگریزچالباز اور فتنہ پرواز ہے، ان پر لعنت ہو

یہ انگریز چنگیز کی طرح ظالم ہےں

غازی خواجہ مہراب خان، پھول کی طرح آﺅ خوشبو پھلا کر سوتو ں کو جگاﺅ

آﺅ اپنی حالت زار سنائیں

گل خان کی دعا ہے

کہ ہم بھی درودو سلام پڑھتے ہوئے ، ناموس وطن پر قربان ہوجائیں۔
میر گل خان نصیر طالب علمی کے دور سے قوم پرستی کے جذبات رکھتے تھے۔ اور اپنے قومی رہنماﺅں سے والہانہ محبت چنانچہ اسی زمانے میں لاہور میں بلوچ طلبا نے میر یوسف علی مگسی کے اعزاز میں ایک دیوان کا انعقاد کیا ، اس موقع پر میر گل خان نے براہوئی زبان میں یہ اشعار پڑھے:

” ہرک نی ہمت دا مردنا ، دا مرد میدان نا

بلوچی قوم نا لیڈر نواب یوسف علی خان نا

مگسی قوم نا فرزند بلوچاتے کے مس رہبر

مرے اوڑا ہمیشہ سایہ ربّ پاک سبحان نا

ارے داسما نما غیرت کہ نم اوڑتو مبو شامل

ترقی کن کبو کوشش نُم تینا قوم بے جان نا

ترجمہ:

نواب یوسف علی خان بلوچ قوم کا رہنما بن کر میدان میں آگئے ہیں۔ اس مرد میدان کی ہمت ملاحظہ ہو۔ مگسی قوم کا یہ فرند بلوچوں کا رہبر بن گیا ہے ۔ اللہ تعالیٰ کا سایہ اس پر قائم ہے۔ اب بلوچوں کی غیرت کا تقاضا ہے کہ ان کے ساتھ مل کر اپنی قوم کی تعمیر و ترقی کے لےے کوشش کریں“۔

جب بلوچ تحریک کے روح رواں میر عبدالعزیز کردکو سیاسی بیانات پر پابند سلاسل کردیا گیا تو میر گل خان نصیر کو اس اقدام سے سخت رنج پہنچا۔ اور اس نے اپنے جذبات و احساسات کا اظہار اس براہوئی نظم میں یوں کیا:

” ہتھکڑی ئٹ، بیڑی ئٹ، قیدئٹ کہ تنیائٹ

وائے اے ظالم نی کیسہ جوان بے وس نا علاج

کم نگا ہاک فطرتاں انسان نا ہچ علم اف نُمے

سرکشی درّیسہ کائک ظلم و زور و جُورتوں

اُست نا آزاتی پوہ مر، ہچ جاہس قید مف

صید خلو کا آرزو صیاد نا ہچ و خت صیدف

نی خلیفو کا مصیبت ئٹ خولیفک نی برک

ظلم ئٹ نی تکلیف تیسہ ایتہ تکلیف نی ہُرک

جان نثاراتے وطن نا اف خُلیس بیدادنا

خواجہ غاتے اُست نا ہچ حاجت اف فریاد نا

ترجمہ:

ہائے ظالم تم ہتھکڑی ، بیڑی اور قید تنہائی سے

بے بسوں کا خوب علاج کرتے ہو

اے کم نظرظالم تمہیں انسانی فطرت کا علم نہیں

ظلم و جبر سے سرکشی اور بڑھتی ہے

دلوں میں موجود آزادی کا ولولہ قید وبند سے کم نہیں ہوتا

تمنائیں صیاد کے تیروں کا ہدف نہیں بنتیں

مصائب و آلام سے ڈرانے والو زور آزماﺅ

جس قدر ظلم بھی بڑھا سکتے ہو، بڑھا کر دیکھو

وطن کے جان نثاروں کو ظلم و جبر کا خوف نہیں

اہل دل فریاد کے عادی نہیں

میر گل خان نصیر نے اپنی براہوئی نظم میں خان میر احمد خان کی یوں مدح کی ہے:

ارے تاریکی آں گڈ روشنائی

بلوچاتا پدا بس بادشاہی

چیل سال نیست و نا بود مسسنن

زوال نا حدا بیخی بسوس نن

کرے اور نا فرمانے راہی

میر احمدیار خان نا بس بادشاہی

نبی نا کلمہ گو تا اوارے یار

غریب و بے کساتا ئے مدت گار

ارے او قدر دانے عالماتا

ہم بیخان چٹ کرو کے ظالماتا

مدت کن قوم نا مُخ تہ تفوکے

ہم مظلوماتا او آہے بنو کے

ترجمہ:

ہر تاریکی کے بعد روشنی لازمی ہے

بلوچوں کی بادشاہی دوبارہ قائم ہوگئی ہے

چالیس سال سے ہم نیست و نابود ہوگئے تھے

اور زوال کے حد تک پہنچ چکے تھے

رب تعالیٰ کا فرمان بروئے کار آیا

اور میر احمد یار کی بادشاہی قائم ہوگئی

اور نبی کے کلمہ گو مومنوں کے یار ہیں

غریبوں اور بے کسوں کے مددگار ہیں

وہ عالموں کے قدر دان ہیں

اور ظالموںکی بیخ کنی کرنے والے ہیں

قوم کی مدد کے لےے ہر وقت کمربستہ ہیں

اور مظلوموں کی فریاد سننے والے ہیں

میر گل خان نصیر کو اپنے وطن کی ہر چیز پر فخر ہے ۔ وہ ساتویں جماعت میں پڑھنے کے دوران اپنے وطن کے موسم بہار سے متاثر ہوکر یہ اشعار کہے تھے!

ہتم نا ہُر کاروان بسو نے

کہ جنت نا پھلا تیان ہیسونے

کہ گواڑخ دسوک پھُل و سنبل ارے

بہشت نا مثالٹ جہاں کل ارے

ترجمہ    :

دیکھو بہار کا کارواں آ پہنچا ہے

اور جنت کے پھولوں سے لد کر بہار آگئی ہے

گل لالہ ، گلاب اور سنبل ہر سو پھیلے ہوئے ہیں

اور سارا جہاں فردوس بریں بنا ہوا ہے

میر گل خان نصیر کوئٹہ میں زیر تعلیم ہونے کے دوران کوئٹہ کے باغات کی خوشنمائی سے متاثر ” انگور نا باغ“ کے عنوان سے ایک نظم کہی تھی ، جو یوں ہے:

دے ئس کنا گذر مس انگور نا باغ ٹی

او موں نا بھلا بام ئَ نظر شاغاٹ ای

اوڑے خناٹ ای پھُلس گلاب نا کہ خیسو نو

یا د ھنکہ، کو فنا پریک اوڑے تو سنو

دادے ای منیو ہ کہ اوپُھل مُراسکہ

لیکن کنیا گندس دھنو او نا بسکہ

اُست ئِ ہشا کہ جان ٹی شاغاکہ خا خرس

حیران مسٹ ای یا خدادا اراکابس

دازیبناک پھل گُدی تان کُوسی ئَ

جراب پائے جامہ کہ نت ٹی تہ روسی ئَ

آہو خنی ئَ گلبدنی ئَ اورا ہُشوک

ہڑتو ما خن تا نیا مان کنا اُست نا پُلوک

خرن خیالے اونا پیشانی نا نیا مٹی

جلدی کرے کنے اوگرفتار دام ٹی

ترجمہ:

ایک دن انگور کے باغ میں گزر رہا تھا

کہ اچانک بام کی بلندی پر نظر پڑی

جہاں سرخ گلاب کی مانند حسینہ نظر آئی

یوں سمجھیں کہ کوہ قاف کی کوئی پری بیٹھی تھی

اگرچہ وہ کافی دور تھی

مگر اس کی خوشبو ہر طرف پھیلی ہوئی تھی

میں محوِ حیرت تھا کہ یہ حسینہ کہاں سے آئی ہے

گلدار دوپٹہ، خوبصورت قیمتی لباس

روسی جرابیں اور جامہ زیب تن

اس نے آنکھوں ہی آنکھوں میں دل لوٹ لیا

ماتھے پر سبز خال جمائے

مجھے دام میں گرفتار کرلیا

میں نے یہ تمام اشعار اپنے محترم اُستاد نادر قمبرانی کے اس مضمون سے لےے ہیں جو شعبہ اردو جامعہ بلوچستان کے ” سریاب“ نامی میگزین مطبوعہ اگست1987 میں شائع ہوئے ہیں۔ میں کوشش کروں گا کہ میر گل خان نصیر کے تمام براہوئی اشعار جمع کرکے کتابی شکل میں منظر عام پر لاﺅں۔

Check Also

March-17 sangat front small title

گوادر، ادب اور سمندر۔۔۔ فاطمہ حسن

گوادر جو کبھی اپنے خوب صورت، پُرسکون ساحلِ سمندر کی وجہ سے پہچانا جاتا تھا، ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *