Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔ وصاف باسط

غزل ۔۔ وصاف باسط

کسی ویران رستے پر کھڑا تھا
جہاں میں آج خود سے مل رہا تھا

جونہی تصویر ہونے کو تھی پوری
وہیں آنکھوں سے منظر گر گیا تھا

ڈرایا تھا بہت کشتی نے مجھ کو
میں جب ساحل پہ تنہا چل رہا تھا

بڑی مشکل سے کٹتی تھیں وہ راتیں
اندھیرا پاس آکر چیختا تھا

کڑی تھی دھوپ لیکن پھر بھی باسط
میں اپنے ساتھ سایہ کھیچتا تھا

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *