Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ کرامت بخاری

غزل ۔۔۔ کرامت بخاری

قریۂ معرفت جہاں تک ہے
منزل عشق بھی وہاں تک ہے

دِل کی دیوانگی یہ پوچھتی ہے
ہوش کی سلطنت کہاں تک ہے

صورت کا سلسلہ سماعت تک
بات کا ذائقہ زباں تک ہے

زیست کی بے کراں مسافت بھی
چند لفظوں کی داستاں تک ہے

اِک خسارہ ہے کاروبارِ حیات
سود کو واسطہ زیاں تک ہے

دِل بھی خائف نہیں ہے خطروں سے
یہ تصور تو جسم و جاں تک ہے

باکرامت ہے میرا رنگِ سُخن
یہ روایت بھی رفتگاں تک ہے

Check Also

jan-17-front-small-title

گوادر کے مچھیرے  ۔۔۔ سلمیٰ جیلانی

کبھی ہم مچھیرے تھے جال میں پھنسی چھوٹی مچھلیاں پانی میں واپس پھینک ان کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *