Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ مبشر مہد ی

غزل ۔۔۔ مبشر مہد ی

مِری چشمِ تر میں ہیں بہہ رہے یہ عجب طر ح کے سر اب سُن
کہیں تازگی ،کہیں شُعلگی ، تُو جُنو ں کی سا ری کتا ب سُن

مِرے پیش و پَس ہی چُھپی رہیں کئی آفتیں مِر ے نا م کی
مِرے راہبر ، مِر ے راہز ن مِر ے پاس آ یہ عذَاب سُن

ہُو ں غُبا ر جا ں میں اَ ٹی ہو ئی وہ نوَ ائے کَم نَو ا دہر میں
جو ہے مثلِ نو حہ و مر ثیہ وہ خجَا لتوں کا نِصاب سُن

جو لکِھی ہیں میںِ نے حکا یتیں ،دلِ و جا ں پہ خُو ن کی دھا ر سے
اِنہیں پڑ ھ جو نَقش نہ بَن سکے جو اُجڑ گئے ہیں وہ خو اب سُن

شبِ تیر گی میں پئے دُعا جو اُ ٹھے کبھی مِر ے ہا تھ بھی
تو پکا ر آئی کہ با ز رِہ ،نہ صدائے قلبِ خراب سُن

کبھی شُعلگی کے لِبا س میں ذرا ورد سُن لے تُو خا ک کا
کبھی سا حِلو ں پہ قیا م کر کو ئی نغمۂ تہہِ آب سُن

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *