Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ مبشر مہدی

غزل ۔۔۔ مبشر مہدی

دوستو رات کے دامن میں سحر ہے کہ نہیں
پوچھتا ہوں یہ سلاسِل کا سفر ہے کہ نہیں
رستہ چپ چاپ سا اور منزلیں بھی نا معلوم
اس کٹھن راستے پہ کوئی خضر ہے کہ نہیں
کارواں تو سبھی ہوئے جاتے ہیں صحرا بُرد
خاک کیا کہتی ہے اس کی بھی خبر ہے کہ نہیں
دوست دشمن ہیں یہاں ایک گروہ کی صورت
منفرد تجھ میں بھی رہنے کا ہنر ہے کہ نہیں
آ ئینے ٹوٹ چکے ہیں اور ہیں طرفین بھی گم
جلوہ گر حسن کی صورت بھی مگر ہے کہ نہیں
میر ی تشکیل سا معدوم ہے چہرہ میرا
تم ہی کہو میرے ماحضر کی خبر ہے کہ نہیں
چھوڑو شکوے گلے اور حسرتیں بھی رہنے دو
بس بتلاؤ کہ آ نکھوں میں بھنور ہے کہ نہیں
ابرو گیسو بھی ۔ لب و رخسار بھی تراشے میں نے
کیا غزل میں انہی باتوں کا ہنر ہے کہ نہیں

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *