Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل  ۔۔۔ قندیل بدر

غزل  ۔۔۔ قندیل بدر

ابھی سلگی ابھی دہکی نہیں ہوں
جنوں میں اس قدر ڈوبی نہیں ہوں

بنا کر روشنی سے اک گھروندا
فلک پر کیوں اسے رکھتی نہیں ہوں

تو میری کوکھ سے جنما ہے لیکن
تری پسلی سے میں جنمی نہیں ہوں

میں بکھری ہوں زمیں سے آسماں تک
تری آنکھوں تلک سمٹی نہیں ہوں

کہیں یہ آگ دل کی بجھ نہ جائے
میں پانی اس لیے پیتی نہیں ہوں

تو چھپ کر دیکھتا رہتا ہے مجھ کو
مگر میں ہوں کہ دِکھتی بھی نہیں ہوں

سنہری دائروں میں ہوں می رقصم
خدا تک میں ابھی پہنچی نہیں ہوں

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *