Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ ساحر لدھیانوی

غزل ۔۔۔ ساحر لدھیانوی

لب پہ پابندی تو ہے ، احساس پر پہرا تو ہے
پھر بھی اہلِ دل کو احوالِ بشر کہنا تو ہے

خونِ اعدا سے نہ ہو، خونِ شہیداں ہی سے ہو
کچھ نہ کچھ اس دور میں رنگِ چمن نکھرا تو ہے

اپنی غیرت بیچ ڈالیں، اپنا مسلک چھوڑدیں
رہنماؤں میں بھی کچھ لوگوں کا یہ منشا تو ہے

ہے جنہیں سب سے زیادہ دعوئ حب الوطن
آج ان کی وجہ سے حُبِ وطن رسوا تو ہے

مرے دل میںآج کیا ہے، تو کہے تو میں بتادُوں
تری زُلف پھر سنواروں، تری مانگ پھر سجا دُوں

مجھے دیوتا بنا کر تری چاہتوں نے پُوجا
مرا پیار کہہ رہا ہے میں تجھے خدا بنادُوں

کوئی ڈھونڈنے بھی آئے تو ہمیں نہ ڈھونڈ پائے
تو مجھے کہیں چھپا دے، میں تجھے کہیں چھپا دُوں

مرے بازؤں میں آکر تیرا درد چین پائے
ترے گیسوؤں میں چُھپ کر میں جہاں کے غم بھلا دُوں

Check Also

jan-17-front-small-title

گوادر کے مچھیرے  ۔۔۔ سلمیٰ جیلانی

کبھی ہم مچھیرے تھے جال میں پھنسی چھوٹی مچھلیاں پانی میں واپس پھینک ان کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *