Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ خیام ثناء

غزل ۔۔۔ خیام ثناء

عکس، چہرے، مسافر، سفر آئینہ
خُشک سایے، گلے جسم، تر آئینہ
نا خُدا ، موج ، دریا، ہوا گنگ تھی
چاند کو جب لگا تھا بھنور آئینہ
زرد بیلیں، سُلگتا فلک ، کھیت پھل
برف ، دھِقاں ، تھکن، بے ثمر آئینہ
خوب لگتی ، سنورتی ہے تُو آج کل
تُجھ پہ کرنے لگا ہے اثر آئینہ
پھول ، جلتے پرندے ، سیہ گھونسلے
سُرخ راہیں، صدائیں، شجر، آئینہ
کور آنکھوں کی تاریک دہلیز پہ
دے کے دستک پھرے رات بھر آئینہ
سَنگ باتیں، کئی تُند لہجے، بُجھے
کانچ یادیں،گِلے ، دھند ، گھر، آئینہ
میں بھی ہوجاتا خود سے کبھی آشنا
تو نہ مجھ کو دکھاتا اگر آئینہ
اُس کے خاموش ہونٹوں پہ مت جائیو !
سب کے رکھتا ہے دل کی خبر آئینہ
مجھ میں کیا بات ہے جانتا ہوں یہ بات
دیکھ تُو بھی کبھی اِک نظر آئینہ
میرا میرے سوا کون ہے اب ثناء!
دُور مجھ سے خُدارا نہ کر آئینہ

Check Also

jan-17-front-small-title

گوادر کے مچھیرے  ۔۔۔ سلمیٰ جیلانی

کبھی ہم مچھیرے تھے جال میں پھنسی چھوٹی مچھلیاں پانی میں واپس پھینک ان کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *