Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ حضرت عثمان مروندی لال شہباز قلندر

غزل ۔۔۔ حضرت عثمان مروندی لال شہباز قلندر

نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم
مگر نازم بہ ہر صورت بہ پیشِ یار می رقصم

تو ہر دم می سرائی نغمہ و ہر بار می رقصم
بہ ہر طرزِ کہ می رقصانیم اے یار می رقصم

تو آں قاتل کہ از بہر تماشا خون می ریزی
من آں بسمل کہ زیرِ خنجرِ خوں خوار می رقصم

بیا جاناں تماشا کن کہ در انبوہ جانبازاں
بہ ایں دستارِ رسوائی سرِ بازار می رقصم

اگرچہ قطرہ¿ شبنم نہ پوید برسرِ خارے
منم آں قطرہ¿ شبنم بہ نوکِ خار می رقصم

منم عثمان مروندی کہ یارے شیخ منصورم
ملامت می کند خلقے ومن بردار می رقصم

—————————————-

ترجمہ: ڈاکٹر فاطمہ حسن

نہیں معلوم کیوں آخر دمِ دیدار رقصاں ہوں
مگر ہے ناز ہر صورت بہ پیشِ یار رقصاں ہوں

تو ہو نغمہ سرا ہر دم میں ہر اک بار رقصاں ہوں
تری خاطر میں ہر اک طرز پر اے یار رقصاں ہوں

تو وہ قاتل کہ جو بہر تماشا خون کرتا ہے
میں وہ بسمل کہ زیرِ خنحرِ خوں خوار رقصاں ہوں

مری جاں آ تماشا دیکھ جانبازوں کے مجمعے میں
ردا رسوائی کی اوڑھے سرِ بازار رقصاں ہوں

اگرچہ قطرہ¿ شبنم نہیں رکتا ہے کانٹے پر
میں وہ قطرہ ہوں شبنم کا بہ نوکِ خار رقصاں ہوں

میں ہوں عثمان مروندی کہ ہے منصور سے یاری
ملامت خلق کرلے میں تو سوئے دار رقصاں ہوں

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *