Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ جمیل ادیب سید

غزل ۔۔۔ جمیل ادیب سید

اب قوم پہ ہے نیند کے عالم کا گماں اور
غفلت سی ہے پھیلی ہوئی تا حد سماں اور

وہ حسِ لطافت جو سجھا دیتی ہے سب کچھ
نا پیدا گر ہو تو نہیں ہوتا عیاں اور

اک آتشِ پنہاں جو نظر آتی ہے مجھ کو
جلتے ہیں خس و خار تو اُٹھتا ہے دھواں اور

کون آئے گا سوئے ہوئے لوگوں کو جگانے
اک دکھ ہے، کہ بڑھتا ہے کراں تا بہ کراں اور

احساس زیاں ہی نہیں جب پھر کیا سمجھنا
افتادِ طبع اور ہے احساسِ زیاں اور

پشتوں کے تحفظ سے جو بے فکر ہے حاکم
جب آئے گا سیلاب تو ڈوبے گا مکاں اور

دشوار غزل کہنا ہے غالب کی زمیں پر
اسلوب جمیل اپنا ہے غالب کا بیاں اور

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *