Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل….سرمد صہبانی

غزل….سرمد صہبانی

آنکھوں سے پرے نیند کی رفتار میں رہنا

ہر پل کسی نا دید کے دیدار میں رہنا

کھو جانا اُسے دیکھ کے عریاں کے سفر میں

چُھوتے ہی اسے ، حُجلہِ اسرار میں رہنا

اک خوابِ دریدہ کو رگِ ِ حرف سے سینا!

پھر، لے کے اُسے کوچہ و بازار میں رہنا

خود اپنے کو ہی دیکھ کے حیران سا ہونا

نرگس کی طرح موسمِ بیمار میں رہنا

مرنا یونہی اب، ریشم و کمخواب ہوس میں

دم توڑ کے زندہ کبھی دیوار میں رہنا

بادل، کبھی پروا، کبھی پھولوں سے لپٹنا

ہر لمحہ، تر ے آنے کے آثار میں رہنا

حسرت سی لےے خلقتِ معصوم میں پھرنا

سازش کی طرح، گردشِ دربار میں رہنا

سرمد! تپش ِ نار، سخن میں ہوں کہ مجھ کو

گُل کرتا رہا، شعلہ و انگار میں رہنا

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *