Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شونگال » عبداللہ جان ۔۔۔ بختہ بھروٹی

عبداللہ جان ۔۔۔ بختہ بھروٹی

بلوچی شیئر و لبزانک ہچ و ختے بے چو خاٹ نویثہ،نَیں پوہ وزانتہ حسابا اونَیں فنی کچ و برچہ پڑا۔ مئے سرقبیلوی ایں قوم، گوں سامراجا سئے گسیت سالاں دَہ ہمنگا بھیچثیا بیثہ کہ گاوانڈی ایں قومانی نسبتا فیوڈلزمہ جوریں درشکا پاڑ جنغہ آزادی گھٹ رستہ۔ او مئے ادب فیوڈل ویلیو سسٹما ژہ نسبتاً کم بٹارتیا سراتکہ، وثی پاکی و گراں مہذبی چیزے نہ چیزے برجاہ داشتیا گیست و یکمی صدی آآتکؤ پجثہ۔
سجلاں ہمے چوخاٹئے کاٹ و پنجھرانی نام نوزدمی صدی ئے مست توکلیا ژہ گرداں گیستمی صدی آ رحم علی، آزات و گل خان و ملا مزار اثنت۔ عبداللہ جان جھٹے آداں گیستمی صدی ئے ہمے بڑز بالا ذیں فلاسفرانی نو در بریا کناناں نیٹ رُستؤ وث مزن بیثہ۔ ہمے براہندغابلوچی زبانئے چوٹ و برچانی کشغا پہ گزریں تنش پیشی قرنہ دوہمی نیما دستہ کثہ۔ آں گنوخانی بھیرا مئے ادب و لٹریچرئے بنوہ ’’ رونڑ و مُشک ہوڈانی‘‘ گرغا وختے لَٹہ اے سراجھمبغا یث، و ختے آنسرا پونشغایث ۔ دز کمک دِہ مزائیں چی نہ ملثئی کہ آزات وثی جنجالاں گٹہ، گل خاں زیلانی بھانتی اث اولا لا غلام جان گروخی لانٹہ چیلکے جثو مرگہ مالا اوار بیثہ۔ او عبداللہ جان تہ گوئش کہ بے سنگتا بلوچی ئے تخلیقہ دائی او مسو بیثہ۔
بلے ہر کسے آ کہ قلم دستا کثہ عبداللہ جان ہما نہی کمک و واہرا سانڑیں بیثہ۔ شاوا شاوا کناناں ہمے ’’ قلمکار سازیں فیکٹری ‘‘ وثی پیداوارہ حساواباز بھاگیا بیاناں شتہ۔ نوخ و ستا ذانی بابتا عبداللہ جانا ہر وخت ایماں سلامتیا گوں کرشک انیشغی چخ کثہ۔ آں وثی جندہ پاذانی پاذگزاراں ژہ بے سما و بے تما، دو ہمیانی دگّہ ڈھنگراں شتہ چناناں۔ نتیجہ اے کہ مرشی مزائینا ژہ مزائیں، او ، مشہور ا ژہ مشہوریں ہمنگیں بلوچی رائٹر نے کہ بھیرے نہ بھیرے آ عبداللہ جانئے علمی پور دارمہ وی۔
بلوچی زبانہ گوشاں نثر ہ بانگ ، گیستمی صدی ئے دوہمی نیما دیغ بیثہ۔ اِڑِکیں تر ہانڑیں راجہ لافا ماہتاک و رسا لہانی درکفغ شروع بیثہ۔ ہر میگزینہ زیندغ دارغ اودیم روی دیغہ اندر امیر عبداللہ جانئے کار ہر وخت اکّیلا اث۔
ہمے زمانہا بلوچی ادبہ اندرا نازانت و ناپجھاروئیں صِنفاں ٹورہ کشغ شروع کثہ۔ قصہ، مضمون ، او ڈرامہ کل نوخیں پڑثنت۔ ہمے دراہیں کشاریانی اندرئے سنگانی چنغ ، پوڑانی کُٹغ ، او، ٹا پہ جنغہ کار ، اورندا ہمے کارہ نگرانی اونگہبانی، دِہ ہمے مڑدایک سریا کثہ۔ وثی چوخاٹ ، وثی شم و سر شم، سیم و سرسیم بھڑیں چوکیدارانی ڈولا رکھثئی۔
بلوچ رائٹرانی اندری تنظیم کاریا گِرداں در ملکی مچی و کانفرنساں ، عبداللہ جان ہر وخت، اگھی مڑداں گونث۔ بلوچی زبان و ادبا اے مڑدلاہور ولاڑکانہ، سویڈن ولندن، او کابل وزا بلا گیہلینتو بڑتہ۔
نرم گپتاری و نیخ نیتی ہپت جو بیثو اے مڑدہ کارا آتکغنت۔ ہمدردی و پَکرا شا، ہمے یک مڑدی زوارا گھوڑو بشکار تغنت۔ سُچائیں سنگتی ئے ہذا داثیں صفتا، ماما ہر وخت بے سنگتیا ژہ بھچینتہ ۔۔۔۔۔۔ او مرشی کہ آں سریں پروشیں بیماریا گیست سالی جڈوئی آ ما چ کثہ تہ تدڑی آگردَہ تہرانا او چانڈ کایا گردہ چاہ بہارا جھارانی جھار سنگتنتی۔
ہر کس گشی ماما مئیں ایں ۔وثار آنہی ناما گوں گنڈھغ مار ہماں دراہیں جوانہہ آں شریدارہ کنت کہ ماما یانو دو چار سالانی ناخُن کُٹائی ئے جوگی ای ڈکھاں گوں کٹثغنت ۔۔۔۔۔۔۔ شاھہ برکتاں بُلمٹا ر مادِہ چَٹثغنت او مزں سرو گلاب و گوامیشہ تر ینزک مئے بہرادِہ آتکغنت۔ علم اورُژنہ پخیرئے داثغیں دھاگا مار کلاں بھاگیا کنغایاں ۔
ماما عبداللہ جانا ہرچی کہ ترجمہ کثغنت، ہر چی کہ ریسرچہ کار کثہ ، ہر چی کہ تحریکانی باروا لکھثہ، او ہر چی کہ پیش گال و پجھارپنہ لکھثغنت آں کُل بلوچ قومی کا زاو بلوچی زبانئے بہندیں کَورہ چیڑاو روانیاپہ کثغنت۔ او ہمے دراہیں کارہ لافا وث گلائی، وث سری ، اووث غرضی ہچ وختیا نیستہ۔ واحدیں مقصد یک کاروانے ٹاہینغئے غث کہ بنی آدمہ وہاواوش کنت، آنہی امروزا سفک بار کنت، او آنہی بانگھا ساز گار بہ کنت۔
گیستمی صدی ئے تلانگ و تِلشکنڑاں ژہ بلوچی زبانئے پاریزتی دربرغا پہ ما کُل آنہی تورواں باروں۔
سیاستہ پڑا’’ دیما رووکیں اولس ‘‘ آبگرداں بلوچستان سنڈے پارٹی آ عبداللہ جانا ہچ وختے سلسلہ پرشغا نہیشتہ۔ شاہی قلعہ ئے سکھی و سختیاں بگرداں لنگھڑی و مسافریاں ماما ہچ وخت مانینتہ نہ خثہ۔ زالانی حقاں بگرداں مزدور و راھکانی ارماناں، عبداللہ جانا نزورو ضعیفانی ترجمانی کار ہچ برگھٹ نہ خثہ۔سڑداری او فیوڈل نظامئے دراہیں مخالف ہمے پڑا عبداللہ جانہ وثی امام لیکنت۔ آں گؤئستغیں چل سالاژہ سیاستہ پڑا مئے سینئریں سنگت او، راہشونیں۔
ماما نیں شتو ہلاک و لاغرو پیر بیثہ۔ آنہی دل و دماغ ،چم و گوش ، کونڈ و دست ، کارہ نہ ذی انت۔ پر گڑہ دِہ بلوچی زبانہ بیرک دارانی جھوک، انسانی آجوئی ئے کارواں مڑدانی ساہسار جاہ، او ،بے راشن و بے توشغیں انقلابی پندھ جنوخانی پٹرول پمپ، ہمے مڑدہ بیٹھکیں۔ بخت و الائی دوہمی چے ایں؟۔

Check Also

TO FIDEL CASTRO —  Pablo Neruda

Fidel, Fidel, the people thank you for your words in action and deeds that sing, ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *