Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » عباس رضوی

عباس رضوی

چند لمحوں کی رفاقت نہیں مل سکتی کیا

اک ملاقات کی عزت نہیں مل سکتی کیا

وہ تراقرب وہ خوشبو ترے پیراہن کی

مجھ کو پھر سے مری دولت نہیں مل سکتی کیا

دور سے دیکھ لیں اُس شاخِ صنوبر کی طرف

وحشتوں کو یہ اجازت نہیں مل سکتی کیا

شہر میں کوئی نہیں اُس کی شباہت والا

کسی صورت سے وہ صورت نہیں مل سکتی کیا

کوئی چہرہ، کوئی خوشبو کوئی موسم کوئی خواب

اب ہمیں کوئی بشارت نہیں مل سکتی کیا

اس خرابے میں بھلا کیا ہے جو پاﺅ گے مگر

سانس لینے کی بھی مہلت نہیں مل سکتی کیا

مرنے والے نے کیا وقت سے بس ایک سوال

زندگی حسبِ ضرورت نہیں مل سکتی کیا

آج کل مجھ سے مری بے ہنری پوچھتی ہے

اب کسی خواب کی قیمت نہیں مل سکتی کیا

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *