Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » شاہ لطیف، صوفی نہیں، یوٹوپیائی فلاسفر  ۔۔۔ شاہ محمد مری

شاہ لطیف، صوفی نہیں، یوٹوپیائی فلاسفر  ۔۔۔ شاہ محمد مری

ہم آج بھی اُس اولین بشر کی طرح ہیں جس نے پہلے پہل چیزوں کو متحرک و متبدل دیکھا تو خوف کی حد تک حیرا ن ہوا تھا۔ اسے ان متحرک چیزوں کی قوتِ متحرکہ داخلی کے بجائے خارجی لگی ، مافوق الفطرت ۔ بادل کی گرج، زلزلوں کے جھٹکے اور بارش کا برسنا عام انسانی تفہیم اور قوت سے تو باہر تھے ناں! لہٰذا اِن مظاہر کی مادی تشریح کو نا ممکن دیکھ کراُن کی پرستش شروع کردی۔ یہیں پہ تو دیوی دیوتاؤں کی ایجاد ہوئی ۔۔۔۔۔۔ یہ بارش کا دیوتا ہے، یہ آگ کی دیوی ہے، یہ زمین کا یہ سورج کا ، یہ اولاد کا ، یہ شکار کا۔ ایسا دیوتا جو ڈائنو سار سے بھی قوی تر ہو اور رعدوگرج سے بھی طاقتور۔
یہاں کچھ لوگ زندگی کی آنکھوں سے آنکھیں ملانے سے کتر انے ڈرنے لگے ۔ اُس سے گتھم ہونے کے مقابلے میں زندگی کو پشت دکھانا زیادہ آسان تھا ۔ محنت و جرات کی کمی شکست خوردگی کی طرف لے گئی۔ مقابلہ خارج ،تو پھر دنیا کی مسرتوں ، دولتوں ہی کو برابھلا کہنا شروع کردیا۔ دنیا اور زندگی دونوں کو جھوٹا قرار دیاگیا۔ بس ،’’دیوتا سچا ہے ۔ دیوتا ہی محبت وعبا دت کے لائق ہے ۔ اس لیے جو لوگ دنیا کے سکھ سیمٹنے میں لگ جاتے ہیں اور ہروقت دھن اور دولت جمع کرنے میں لگ جاتے ہیں اُن کو دیوتا کی دولت کبھی نہیں ملتی اورنہ اُن کی مکتی اور نجات ہوسکتی ہے ‘‘۔
اور جب دیوتا اور دیوی وجود میں آگئے تو پھر ان میں انسانی عادتیں گھڑلی گئیں۔کس چیز سے دیوتا خوش ہوتا ہے اور کیا بات اسے ناراض کرتی ہے ۔ دیوتا کو راضی رکھنے کی خاص رسومات بنتی گئیں۔ اِن رسومات میں بہت زیادہ منہمک انسان کو اعلیٰ اور اشرف جانا گیا اور یوں اِن دیویوں دیوتاؤں کو رام کرنے والے خصوصی افراد وجود میں آئے، اِن دیوتاؤں کے محبوب و چہیتے لوگ جو کسی بھی حاجتمند کی حاجت سفارش کرکے پوری کرواسکتے تھے ۔ یعنی دیویوں دیوتاؤں کے ساتھ ساتھ اُن کے اِن برگزیدہ و پسندیدہ لوگوں کی بھی پرستش و عبادت ہونے لگی۔۔۔۔۔۔۔ یوں مجاور، مخدوم، سجادہ نشین، خلیفہ ، گدی نشین، بھگت، سوامی وغیرہ کے القابات ایجاد ہوئے۔ انہی کو خوش کرنے میں دیوتا کی خوشی گھڑ لی گئی۔۔۔۔۔۔ ۔ اورانہی برگزیدگان نے آگے جاکر حکمرانوں کا روپ دھارنا تھا ۔پھر یہی آگے آئے دولت و طاقت کے ساتھ، اور دیوی دیوتا محض اُن کی کمپنی ا ور کارپو ریٹ رہ گئے۔
مگر بہ یک وقت کچھ ایسے لوگ بھی تھے جنہوں نے ان مظاہر کی منطقی تشریح کرنا چاہا۔اُن سے خوفزدہ ہو نے کے بجائے اُن میں دلچسپی لی ، انہیں کھوجا کھودا،ا ور ان کی اصل کو تلاش کرکے دنیا کو بتا دیا۔ ادھر ہی سے فلسفہ کی سائنس پنپنا شروع ہوئی۔
دونوں اطراف ترقیاں ہوتی رہیں۔ اُدھر مزید اساطیرعبادات و مندر میں بدلتے گئے، حیات بعد از مرگ کا نظریہ بنا اور اِدھر مزید ایجادات سامنے آنے لگیں، اندھی تقلید کی مخالفت ہوئی۔ کسی نے کائنات میں زمین کی مرکزی حیثیت کو للکار ا ، کسی نے سورج کو خدا قرار دینے کے بجائے اُسے گیسوں کا مجموعہ قرار دیا ۔اس ’’جرم‘‘پہ کسی کو زندہ جلا یا گیا اورکسی کو زہر پینے کی سزا دی گئی۔
یہ کشمکش ہر جگہ چلتی رہی ۔مگر سب سے منظم و ریکارڈ شدہ طور پر یونان میں۔ روم میں تو طویل و تباہ کن آمریت نے ہر بحث اور ہر کشمکش کو بند کردیا اور یہ جھگڑا یورپ سے باہر چلا گیا ۔بوعلی سینا نے پہلا حملہ ہی بائبل پر کیا یہ کہہ کر کہ اسے تو جاہلوں کے لئے قصے کہانیوں سے بھردیا گیا ہے۔ چرچ اور پادری کی حکمرانی پر پہلا حملہ میکاولی نے کیا۔۔۔۔۔۔ اور پھر رینیساں ہوا جس میں دلیل و سائنس نے ڈوگما، راسخیت اور جنونیت پر جوابی حملہ کیا اور بنی نوع انسان کے لئے سوچ کی آزادی حاصل کی ۔ چرچ سے ہٹ کر آزادانہ طور پر سچ کی تلاش کرنے کی جنگ کے کمانڈر وں میں سے کچھ کے نام یہ تھے: دانتے ، پٹرارچ ، ڈاونچی ، اراسمس ، لوتھر، ویچو، کوپرنیکس،گلیلیو، نیوٹن ، بیکن اور جیرارڈ برونو۔(آخر الذکر کو اس کے خیالات پہ پادریوں نے زندہ جلا دیا)۔ایسی کشمکش سے عبارت ہے انسانی تاریخ ۔اور سوچ و فکر کے یہی دونوں دھارے چلتے آئے۔آج انسانوں کی وسیع ترین اکثریت انہی دو مکتب ہائے فکر میں سے ایک سے وابستہ ہے۔ سائنس و ٹکنالوجی کی ساری ترقی کو اِن دونوں نے خوب خوب استعمال کیا، بالادست نے زیادہ اور کمزور نے ذرا کم ۔
ایک تیسر افریق ایسا وجود میں آگیاجسے ’’ یو ٹوپیائی‘‘ کہتے ہیں۔ یہ گروہ تھا تو عقیدہ پرست ، مگر وہ انسان اور انسانی زندگی پر زیادہ توجہ مرکو زرکھتا تھا ۔ بنی آدم کی خوشحالی وخوشی کی تمنا کر تاہوا۔ یہ گروہ بادشاہت کو پسند نہیں کرتاتھا ، جاگیر داریت کو اچھا نہ سمجھتا تھا۔دنیا میں بالعموم اور مشرق میں بالخصوص ایک تماشایہ کیا گیا ہے کہ یہاں بڑے بڑے مصلحوں، انقلابیوں اور خیر و آشتی کے پیامبر انسانوں کو پیرو مرشد، سینٹ اور مہاتما بنا کر ان کی پوجا شروع کرائی جاتی ہے۔اور دیکھتے دیکھتے موجود و مروج کا باغی، اُسی موجودو مروج کے پیشواؤں میں بھرتی کیا جاتاہے۔ یوں اُس کے کارناموں ،تعلیمات اور بشر دوستی کے رواں دواں جوہر کوعقیدہ و پرستش کے چوغے میں لپیٹ دیا جاتا ہے۔ اُس کے نام کے ترانے ، نعرے، ورد، جھنڈے ، جلوس اور رسومات گھڑ لیے جاتے ہیں۔
…..آئیڈ یلزم چیز وں کو تصورکرتا ہے ، روحوں کے وجود کو فرض کرتاہے ،ہر چیز کو تصورمیں کامل تصور کرتاہے ۔مگر جس بھی چیز کو فرض کرتاہے ثبوت پیش نہیں کرتا ۔ سائنسی وضاحت نہیں دیتا ۔ لوگوں نے اُن تقدیر پرست بزرگوں کی پوجا شروع کر دی۔
شاہ عبدالطیف بھٹائی گذشتہ چار صدیوں ہمارے پورے منطقے کا ایسا ہی مقبول ترین ولی رہا ہے۔ میں اُسے فلاسفر، دانشور اور شاعر تو بعد میں کہوں گا جب میں اپنی بات کررہاہوں گا۔ اب تو دیکھتے ہیں کہ لوگوں کی نظر میں شاہ کا مقام کیا ہے۔لوگوں کی نظر میں وہ معجزات بھرا ولی ہے ۔ اور ہمارے لوگ خود کیا ہیں؟۔ ہمارے عوام الناس شعور کی کس سطح پر ہیں؟ لوگ تو تقدیر پرستی کے پروردہ ہیں۔ لوگ عجوبہ اور وقوعہ پرست ہیں۔ لوگ گلی بازار میں بُت شکنیاں کرتے پھرنے کی شوبازیاں کرتے پھرتیہیں مگر اپنے دلوں میں تعصبات و چھوٹے پن کی بت سازی کرکے اس کی پرستش کرتے رہتے ہیں۔
ہر سماج میں کچھ لوگوں نے مختلف ناموں جھنڈوں بینروں سے انسان کو قتل کرنے کے جتھے بنا رکھے ہیں۔ وہ اِن جتھوں کی سربراہی کے لئے گزرے ہوئے اچھے اور محترم ناموں کواستعمال کردیتے ہیں۔ اس طرح اُن کے لوٹ مار حتیٰ کہ قتل و غارت کو جواز کا ایک موٹا پردہ مل جاتا ہے۔
پھر وقت آیا کہ ہمارے شاہ سائیں کو پنڈتوں ، سجادہ نشینوں نے ایک ایسے درویش کے روپ میں پیش کیا ، جوایک طنبورہ گود میں لیے تصورِ جاناں کیے بیٹھا رہتا ہے ۔ ہر لمحہ یادِ یار میں مشغول ہے ۔ دنیا ومافیا سے بے خبر ہے ۔ گر دوپیش سے اُسے کچھ خا ص سروکارنہیں ۔
ضیا الحق والے زمانے میں بس یہ فرق آیا کہ اس مشہورِ زمانہ پورٹر یٹ میں اُس کے ہاتھ سے طنبو ر ہ چھین کر ، وہاں تسبیح دے دی گئی ۔ یادِ یار کو یا دِ الہٰی میں بدل دیاگیا ۔ باقی بیا نیہ وہی ہا۔
بلاشبہ، تقدیر پرستی (آئیڈیلزم) دیگر دانشوروں کی طرح شاہ کا بھی اوڑھنا بچھونا رہی۔شاہ کے آئیڈ یلزم کی وجوہات مادی معاشی سماجی تھیں کہ ایک پسماندہ اور خود کفیل دیہی معاشرے میں ایکٹو عملی مزاحمت کی صورتحال موجود نہ تھی اورشاعری و موسیقی کا ملاپ معروض کی ضرورت تھی۔ مگر شاہ نے عوامی معاملات کو جس بھرپور اور موثر انداز میں چھیڑا اُس کا ثانی پہلے موجود نہ تھا۔ اپنے کلاسیک کی زمین پر مضبوطی سے پاؤں جمائے شاہ نے اپنے عوام سے مکمل وابستگی رکھی۔ کبھی فلسفیانہ اور کبھی سیدھا سیدھا انداز اپناتے ہوئے ۔
شاہ نے اہم ترین عصری موضوعات کا سامنا کیا۔ وہ بادشاہ ، فیوڈل، ملا اور پیر سے فاصلہ رکھ کر اپنی فکرکی آبیاری کرتا رہا۔ اور گو کہ بعد کے ہر دربار و سرکار نے اُس کے افکار کو اپنا کانٹے دار لگام پہنانے کی کوشش کی مگر شاہ کو عام اور غریب عوام کے دلوں سے نکالا نہ جاسکا ۔
ذرا سا غور کیا جائے تو حیرت ہوتی ہے کہ اِن بڑے بڑے انسانوں کی تعلیمات تو ساری کی ساری انسان دوستی کی تھیں۔ وہ عقیدہ بن ہی نہیں سکتی تھیں۔ مگر اس کے باوجود پیروں اور جاگیرداروں نے مزے مزے سے ’’Sufi Shrine Cult ‘‘(1)کھڑا کردیا ۔ اور ہمارے ان بہت بڑے انسانوں کو نرینہ اولاد عطا کرنے ، پرائی عورت کورام کرنے، ڈاکہ میں برکت ڈالنے، فلم کو کامیاب بنانے،اور مخالف کو زیر کرنے کے کام پر لگا دیا ۔ کہیں یہ راسخ مذہب بنا ، کہیں ذرا مبہم سا عقیدہ اور کہیں محض ایک فوک مکتبہ فکر ہی رہا۔
پاکستان میں بالخصوص پچھلے بیس پچیس برسوں میں ابھرآنے والی مڈل ، اور اپر مڈل کلاس واضح اکثریت میں سرکار کے ہاتھ میں ہے اور مطلق رائٹسٹ ہے۔یہ مطلق رائٹسٹ اب جج، سیکریٹری،ڈی جی اور جنرل کے عہدوں تک پہنچ چکا ہے۔وہ اپنے دکھوں دردوں کو اپنے مخصوص طبقاتی پس منظر میں ایک رومانوی اور شارٹ کٹ انداز میں فریم کرتی ہے اوران کے رومانوی انداز کے حل چاہتی ہے۔
اُدھر سوویت یونین کے خاتمے کے بعد پاکستان میں ہر حکومت کو یہ مسئلہ پیش ہوا کہ پاکستان کی قیادت میں ابھرنے ، منظم ہونے اور پھر بہت طاقتور ہونے والے دہشت گرد گروہوں کو کس طرح قابو کیا جائے ۔ تب بالائی طبقات کے کچھ دانشوروں کو سوجھا کہ گویا بنیاد پرستی کے خلاف لڑنے کے لئے ایک نیا محاذ کھڑا کرنے کی ضرورت ہے ، ایک مذہبی روحانی محاذ۔۔۔۔۔۔ جسے وہ ’’مِسٹسزم ‘‘ یا’’ صوفی گیری‘‘ کہتے ہیں۔ دوسرے لفظوں میں ہمارے خطے کے بشر دوست فلاسفر وں،مصلحوں اور بزرگوں کی تعلیمات کوCult اور عقیدہ بنایا جائے ، اُس عقیدے کو صوفی گیری کا نام دیا جائے اور اُس عقید ے کو دوسرے عقید ے یعنی وہابی عقید ے سے لڑوا دیا جائے ۔ا س تصور کو این جی اوز نے فوراً اچک لیا اور پھر ڈونروں والے مغربی ممالک کے تھنک ٹینکس نے اس کی منظوری دے دی۔
جاری ہے۔۔۔۔۔۔

Check Also

April-17 front small title

انگئی؛ مزاحمتی نسوانی چیخ ۔۔۔ بارکوال میاخیل

جس طرح ایک استحصالی طرز حکومت میں برسراقتدار طبقہ اپنے عوام کا استحصال کرتا ہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *