Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » حال حوال » سنگت اکیڈمی آف سائنسز

سنگت اکیڈمی آف سائنسز

کوئٹہ

جاوید اختر

سنگت اکیڈمی آف سائنسز کی ماہانہ پوہ زانت نشست20 جولائی 2014کو 5 بجے شام مری لیب میںمنعقد ہوئی۔ یہ نشست چونکہ ماہ رمضان میں منعقد ہوئی تھی اس لےے نشست کا اختتام افطاری پر ہوا۔ اس نشست میں محمد سرور ،ڈاکٹر شاہ محمدمری، پروفیسر عزیز مینگل ، جئیند خان جمالدینی ، جاوید اختر، عابد میر، محمو د ابڑو ، ڈاکٹر وزیر اللہ نصیر، غلام نبی ساجد، شاہ محمد شکیب، کلیم خان، جوہر بنگلزئی ، مراد اسماعیل ، آصف خان، کلا خان خروٹی، ڈاکٹر غلام محمد کھیترانڑ، شیر عالم کھیترانڑ اور ڈاکٹر منیر رئیسانڑیں نے شرکت کی۔
نشست کی صدارت محمد سرور نے کی اورسٹیج سیکرٹری عابد میر تھا۔
نشست کا آغاز کلا خان خروٹی کے مختصر افسانے ” بگ باس“ سے ہوا، جسے اس نے تنقید کے لےے پیش کیا۔ اس کے مذکورہ افسانے پر شرکاءمحفل نے اپنی اپنی تنقیدی رائے کا اظہار کیا اور اس کے مواد پر تفصیلی بحث کی۔ اس کے بعد کلا خان خروٹی نے شرکا کاشکریہ ادا کیا اور اپنے افسانے کے سلسلے میں کچھ وضاحتیں بھی پیش کیں۔
اس کے بعد ڈاکٹر شاہ محمد مری نے گل خان نصیرکی اسیری کے کچھ یادگارواقعات کی تفصیل سنائی، جو بہت ہی پر سوز تھے۔ اس پر سامعین نے بہت داددی اور مختصر طور پر اس پر گفتگو کی۔
اس کے بعد پروفیسر عزیز مینگل نے انا طول فرانس کے ایک افسانے ” جلی ہوئی روٹیاں“ کا براہوئی میں ترجمہ ” جلی آ اراغاک“ کے عنوان سے پیش کیا،جو ایک بہت ہی خوب صورت افسانہ تھا اور اس نے اس افسانے براہوئی زبان میں بہت خوب صورتی سے ترجمہ کیا تھا۔ اسے سامعین نے بے حد پسند کیا۔
آخر میں محمد سرور نے خطبہ صدارت پیش کیا اورنشست کے موضوعات کو سمیٹا ۔ اس نے کہا کہ سنگت اکیڈمی آف سائنسز کی پوہ زانت نشستیں نت نئے موضوعات پرمنعقد ہوتی ہیں اور سماج میں شعوری اور فکری تعلیم کا بہت بڑا ذریعہ ہیں۔
اس کے بعدسنگت اکیڈمی آف سائنسز کی پوہ زانت نشست کا باقاعدہ اختتام ہوا اورشرکا نے افطاری کرکے اپنے اپنے گھروں کا رخ کیا۔

خاران

ضیا شفیع

سنگت پوہ وزانتہ مچی 10 اگست2014 بیگاہا نصیر کبدانی لبزانکی دیوانے کار گسا سنگت اکیڈمی آف سائنسز خارانے سیکرٹری جنرل واجہ شکور زاہدے پا گوا جیا جم دارگ بوت ۔ جارجین ضیا شفیع ات۔ دیوانے اولی بہر میر گل خان نصیرئے اردو شاعری و فارسی شاعری سرا واجہ شکور زاہد و واجہ توقیر زرمبش بلوچا چمشانک دیگی ات۔ دومی بہر یک مشاعرھے ات۔ دیوانے بندات گوں میر گل خان نصیرئے شئیر ” ڈیوا“ بوت کہ واجہ فیض احمد فیضاہمے اُردوارجانک کرتگ ۔
میر گل خان نصیر ئے ” ڈیوا “ بلوچیا ضیا شفیع وانت و اُردو اصغر صفی آ۔
پروفیسر شکور زاہد ا وتی نبشتانک ” میر گل خان نصیر اور اردو ادب “ اے بندات گوں گل خان نصیرے اے شعرا کرت۔

بھوک سے تجھ کو بلکتے ہوئے بچوں کی قسم

سچ بتا کیا یہی انداز جہاں داری ہے

کیا یہی تھی ، وہ تمنا، وہ سر شتہِ کار

جس پہ ابنائے وطن بھینٹ چڑھائے لاکھوں

کیا اسی خواب کی تعبیر اجاگر کرنے

سربکف ہوکے گھر و بار لٹائے لاکھوں

دیمترا واجہ شکور زاہد گشت کہ میر گل خان نصیر کہ آئی مدام انگریز سرکارے ظلم و زورا کیانا ایئر جتگ و وتی بزگ و دِرتگ پچیں راجا را اے وڑا سرپدی داتگ۔
گھبراﺅ نہیں پچھتاﺅ نہیں ، چلتے ہی رہے گا دور یونہی
مٹتے ہی رہیں گے نقش یونہی، بدلا ہی کریں گے طور یونہی
گڈ سرا واجہ شکور زاہد ا گشت کہ میر گل خان نصیر وہدے وتی چاگردے چپ و راستا چمشانک دﺅر دنت گڑا سک دلپدر د بیت و گشیت۔

شب و روزفاقے ہیں، عریاں بدن ہے

نہ روٹی، نہ کپڑا ، نہ گوروکفن ہے

مشقت مصیبت ہے، رنج و محن ہے

نہ احساسِ قومی ، نہ ننگ وطن ہے

واجہ توقیر زرمبش بلوچا وتی نبشتانک ” گل خان نصیر ئے فارسی رنگ “ وانت ۔ آنہیا وتی نبشتانکے تہا گشت کہ ” گل خان نصیر بلوچی، اردو، براہوی و دِگہ زباناں ابید فارسیا ہم انچیں کلام گشتگ کہ آں باز مزن شانیں ۔ میر گل خان نصیرا بازیں فارسی شعر گشتگ و آئی چیزے انچیں فارسی ے رنگ دروشم استاں کہ آیاں میر گل خان نصیر افارسی ادبے تہا نام ے بکشاتگ۔ آیانی تہا ” سردارانِ قوم“، ” خوانین“، نوجوانانِ وطن ، پیغام عمل، تمہید برفرارِ غازی نصیر، وطن، کوہِ ماران، خطاب و شورشِ خاران اِنت ۔ اشیا ابید ہم میر گل خان نصیرا دگہ فارسی دستونک و غزل گشتگ ۔ میر گل خان نصیر ے ” شورشیں خاران“چیزے بند کہ اے وڑایاں:

بیا ساقیا است فرمانِ شاہ

بنو شِےم دریا دِ میر سپاہ

بیاہ برزنیم جامِ میمون سرشت

قلم را نبا شد جزایں آکشت

پدا

زدہ سوختہ چو کی خان را

بہ تاراج دا داست خاران را

گڈی بند

عقدہ قوم وطن اوز دست داد

من ہمیں گویم خدا یش یار باد

مچی ئے دومی بہر یک مشاھرے ات ۔واجہ شکور زاہد، توقیر زرمبش، اصغر صفی، اسلم شاہ ہاشمی، غنی حسرت ، کلیم ارمان ، دومی سنگتاں وتی شعر و انت ۔ آﺅ کیں مچی7ستمبر2014ئَ میر گل خان نصیرے جنک بانک گوہر ملک ے سرا بیت۔

Check Also

jan-17-front-small-title

یونیورسٹی آف بلوچستان

بلوچی ڈیپارٹمنٹ جامعہ بلوچستانا شعبہ بلوچی ہر سالا ادیباں لائف اچیومنٹ ایوارڈ دات ۔ اے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *