Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » سستی نظم  ۔۔۔ انجلیل صحیفہ

سستی نظم  ۔۔۔ انجلیل صحیفہ

کیسے ماتم کروں؟
کیسے نوحے لکھوں ؟
کیسے روحوں کی چیخوں سے نظمیں بُنوں؟
جاگتی ، بین کرتی ہواؤں سے
جاکر لپٹ جاؤں کیا؟
کرچی کرچی یہ خوابوں کے اعضا جو بکھرے پڑے ہیں
انہیں دیکھ کر پھر پلٹ جاؤں کیا؟
اپنے اقدار سے ، قول واقرار سے پیچھے ہٹ جاؤں کیا؟

مجھ کو اقرار ہے
میں نے خوابوں میں بچھڑے کئی خواب
چہرے لکھے ہی نہیں
میں نے ہاتھوں میں پکڑے کسی ہاتھ کے خوف
لکھے نہیں
میں نے آنکھوں سے بہتے لہو رنگ کو لال لکھا نہیں
میں نے اب تک کسی کو کھ ویرانی کا حاصل لکھا نہیں
کیوں یہ وحشی قلم میرے وجدان میں نظم بوتا نہیں
میرے الہام سے یہ جو لپٹا ہوا خوف کا عکس
ہے کیوں یہ سوتا نہیں؟
اب کوئی حادثہ ہو بھی جائے اگر تو بھی ہو تا نہیں
نظم لکھوں مگر
اب میرے شہر میں نظم لکھنے پہ کوئی بھی
روتا نہیں!!!۔

Check Also

jan-17-front-small-title

گوادر کے مچھیرے  ۔۔۔ سلمیٰ جیلانی

کبھی ہم مچھیرے تھے جال میں پھنسی چھوٹی مچھلیاں پانی میں واپس پھینک ان کے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *