Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » خوش ترانہ سنگت ۔۔۔ گل بنگلزئی

خوش ترانہ سنگت ۔۔۔ گل بنگلزئی

اُوجوانو سنگت ، جوانو ایلم، جوانو شاعر ، جوان و آرٹسٹ ، ترجمہ کر وک ،تحقیق کروک، استاد ، دانشور اُوبھاز بڑ ءُ کامریڈ او انسان اس اسکہ اُوخواننفگ اَوہیت کننگا نا وختا ما خول ، ولے سنگتا تا ٹولی ٹی زیبا مخوک ءُ سنگت اس اسکہ۔
ای او لیکو وار اُوڑ تو ہمے وختا درستی راستی مسٹ کہ بلوچستان یونیورسٹی ٹی 1973-74 نا زمانہ ٹی اکاﺅنٹ اسٹنٹ لگا۔ اُڑان مُست اُو نا باروٹ کنے سما الو ۔ یونیورسٹی ٹی لگنگان پدمنہ وار نا سلام و دُعا اَو تول بش آن پدننا اسے ایلوڑتون دوستی داخس سوگومس کہ مُرونیا مان ننا شم کننگ کتوکہ۔ وختس کہ کاریم متوکتہ تو سیدا کنے ئَ رسیفیکہ تینے ۔ اندا وڑ ای ہم وختس اُوڑاہناٹہ۔ راستنگا ہیت داد ئِ ای امتحان آتاکار یم ، خوانو کاتا ہن و برٹی داخس زیات گٹ مسوٹہ کہ کُنڈ سے ئَ ہننگ کِن وار رسینگتو کہ کنے۔
ننا تول و بش کہ ودّا ، اسے ایلو نا تب ئِ چائسنُ تو ای مُسہ پین باوری او سنگت آتے تون اُودے نتیجہ آتا جوڑ کننگ نا کاریم ئَ راضی کریٹ ۔ داہمو وخت اس کہ ای سیکنڈری تعلیمی بورڈ ٹی اسٹ۔ داخواجہ آک غلام قادر لاشاری ، آغا عابد شاہ ، محمد ایوب دُرانی اَو اُواسُر ۔ اِرا بندغ نتیجہ نا ہر رجسٹر ئَ کاریم کریرہ۔ وختس کہ دفتر ٹی چھٹی مسکہ تو چار بجہ نا وختا داسنگت آک بسرہ تینا کاریم تیٹی لگارہ۔ ای ہم اُوتے توتُد اُسٹ ۔ جوان وجٹ اس کاریم کننگان پدداتیان اسٹسے نا زوراک و توارس بڑزا مسکہ خواجہ چوہ ”رچ برو“ نا چاءکُنے فیسہ ننے۔ تو د اپنی ئَ قلم کار بش مسکہ گیس نا ہیٹرا چادانے تخا کہ ۔ اُومدام ’ رچ برو‘ چا ءنا پُن بازاران تینتو ہیسکہ ۔ اُراغان کہ بسکہ تو دفترنا گَران پُروال ہم ہلککہ ۔ وختس کہ چاتیار مسکہ تو نعرہ اس خلککہ، رچ بروچا ءتیارے ۔ سنگتاک رجسٹراتے تینا بند کریرہ ۔ آرام اٹ چاءکنگورہ ، ولدا چاءنا باروٹ تبصرہ کریرہ ۔ باور کیرے کہ دہن وجوان و پینگُن و چاءاس جوڑ کریکہ کہ اسے کپ آن تہ بندغ نشہ مسکہ۔ ننا تبصرہ، کہ چاءجوڑ کننگنا باورٹ اس اودے خوش کتو کہ بشخند کریسہ پاریکہ دا تو کمال اس اف دہن و چاءتو ہر کس جوڑ کننگ کیک ، نُم ہم جوڑ کننگ کیر ے بھاز صفت کپہ بو۔ ولے راستنگا ہیت تو دادے کہ ہمو چا ءبھاز شیرین، خوش ذائقہ اس ۔ تو داوڑ اس کُبینا سنگت نا تب۔
پدان وخت وخت اس خداداخان روڈ نا دفتر ئَ تہ ہنا ٹہ تو دنکہ پاڈغاران بڑزا مسکہ ۔ اُود اوڑ کہ سمااف اُودے کمرشل کالج ٹی لیکچرر انتے لگیف توسہ۔ ننا گڑاس ذمہ دار و سنگت پروفیسر خلیل صدیقی صاحبا ہنا ر اُواستاداَو علم دوست و بندغس اس ، وختس کہ کاغذاتے تہ ہُرا تو اُست تہ پھوڑومس ، آڈراتے تہ کرے۔ پدا ن سما تما کہ اندا کالج نازمہ دار و بند غ اس خیل صدیقی صاحب ئِ اُو نا باروٹ غلط ءُ رپورٹ اس تِسہ سَس ۔ داڑان گڈ وخت و ختس اُوڑتو ملاقات ریڈیو سٹیشن ٹی یا گُڑا TV مسکہ اُی اُود ے مدام خوش خناٹہ۔ وختس ہم اُوگِڑا سے نا ، یادا حال آتیان غا وکتو ۔ نہ اُوٹی کست و کسور اس خناٹ، نہ ریس و پچار اس۔ بس تینا کاریم تون کاریم تخا کہ ۔ بھاز دیانندار اس۔ اُوتینا لیکچراَوکالج نا شون تننگ کِن ہر وخت حاضر اس۔
اُونا ادبی ئَ مڈی اصُل بھاز ے ۔ اولیکو براہوئی ترجمہ ہیمنگ وے نا ناول” پیر نگا او سمندر “ نا کتابے ۔ پدان تو ادبی ئَ کار یمک تہ داخس بھاز مُسرکہ بندغ حیران مسکہ کہ انسان اسے یا جِن اس ۔ غٹان بھلا کاریم تہ نہہ زبان نا لغت ئِ کہ بھلو خواری او پٹ و پول سے آن پد پورو اَو پدان چھاپ کریفے تہ۔
ترجمہ نا تہ ایلوگچین ئے کاریم تہ ” رباعیات ئِ خیام“ نا براہوئی منظوم ترجمہ ءِ اُودا منظوم ترجمہ ئَ بھلو سردڑدی او خواری اس کشا سَس ۔ اندو ڑ پٹ و پول ( تحقیق) نا تہ کتاب ” براہوئی ہندی و سنسکرت تو سنگتی“ ئِ ۔ دا کتاب نا تحقیق ئَ ہم بھلو خواری اس جانا درے سَس اَو بھلو وختس خلکہ سَس۔
براہوئی شاعری ٹی اُونا داوخت اِسکان 20 اِس کا کتاب چھاپ مسُن ءُ ۔ براہوئی ہائیکو نا تہ کتاب شیپانک ئِ اَوچُنا تیکن نظم نا تہ کتاب ’ دغو جان‘ ئِ۔
براہوئی شاعری ٹی اُو نا اُست مخلوق نا تینا بدحالی، نیستی ، جہالت ءُ نا خواندئی ئَ زرزرا کہ ۔ اُوالُس کن تینا روشن و کسراس پٹنگ، خوش او آجوئی نا دے تا خننگ ءخواہا کہ ۔ اُو پائک:
گڑھتی نا مہرنا کُورانے کنے
اُست ئِ نزور کرینے پورانے کنے
نن و دے نا خیال ٹی مسونُٹ گُم
اُو بھلو حساس و انسان اس اَسکہ ۔ خننگا کہ خوش ولے اُست تہ پّرا کہ مونجا اس انتیکہ کہ ا،واُستمان ئِ دوشان و شاہراہ سے ئَ روان خننگ خواہا کہ۔
اسے ہند سے ئَ پائک:
سُم تا کنے ئِ وارے ۔ گو آٹ تینا سار ے
خاخر کنے ئَ چارہ ۔ ہُشنگانے کنا جون
اُف! دا بندا خو بھلو دڑد سے تہ درشان کیک کہ اُستٹی تہ ہند کرے سَس، جاتے تہ پتُک تسہ سَس ۔ تینا کتاب شیہوال ٹی بلوچ اُستمان ئِ ھکل تریسہ پائک
ارمان نا بے سمائی۔ بے شونی بے وفائی
بِن پے سہ بس تباہی۔ صد شاغان بانڑ نانڑ
اُونا غٹ ئِ کلام الُس ئِ بے سمائی ، بے شونی اُوتار مئی نازندان دریہوتننگ وپیشن مننگ نا کلُو ے ۔ وختس کہ حساسا اُست تہ اوڑتون رٹ کُٹ کریکہ تو ہمے وختا شیراتا آمد مسکہ۔ ہمو جٹ ئِ اُونا غزل یا نظم تیاراس۔
منہ سال مُست کہ خواجہ عبداللہ جان جمالدینی ئَ نن اتوار پارٹی نا سنگتاک ہناغہ توغٹان مالواُوافضل مینگل تواوارساڑی اس ۔ اُوغٹ ئِ عُمر وخت نا پابندی ئِ بھاز سختی اٹ کرے۔ تب تہ جوان مروسُس یا مفروسُس اُو اتوار پارٹی ئِ گیرام کتوکہ ۔ ای وخت وختس اُوڑا جیم خانہ ئَ ہنا ٹہ ، ولے وختس ہم خنتوٹ تہ کہ اُوڑے ساڑی مف۔ اسے وارداز وتیٹ کہ لغوشت کریسَس تما سَس توننے اُصل سما متو اَو نہ اُوتینا تمنگنا ہیت ئِ کرے۔ منہ و ختان پد کہ اتوار پارٹی ٹی خنان تہ اُوبغل ٹی مُنک اس ٹیک تریسہ تینے سر کریسَس ۔ مارتہ گاڑی ٹی ہیسہ سَس تہ ۔ داڑان اندازہ مریک کہ اُواست ٹی تینا جمالدینی صاحب او سنگتا تیکن اخوقدر اس تخا کہ وخت نا اخس خیال اس تہ کہ دا حال ٹی ہم کنکونا بھاز اتیان مالوساڑی اس۔
اُوانداز ا ہڑدے کنکن اَوغالبا ایلو سنگتا تیکن موبائل ئَ SMS کو ٹیشن رائی کریکہ۔ ہر کوٹیشن تہ ایلوڑان گچین اَوز بر ءُ معنی اس تخا کہ، بامسخت مسکہ ، اُو تیٹی خوارنگ ئَ مخلوق کن پنت اُودڑداس مسکہ۔ ای ولدی ٹی صحت کنِ تہ دُعا خواہا ٹہ ولے اُود ے سما اس کہ دیک تیزی اٹ تدنگٹی ءُ ۔ منہ وارای پاریٹ تہ کہ اُراغا نا بننگ ، نے خننگ خو اوہ ولے اُو پارے کہ نہ ، نی تکلیف کپہ، جوان مریوہ اَو ایلودا کہ نی تینٹ چرینگ کپے سہ۔ خوار کپہ تینے۔ ای پاننگ ئِ تہ منتیوٹ اکتوبر نا26 تاریخ ئَ سر جن محمد اعظم بنگلزئی دیگر نا وختا کنے اُراغان ہر فے اُو نا اُراغا درے مارتہ ننے بخیرٹ کرے ولدا ہرفے ہمود کمرہا درے اراڑیکہ ننا نما مہربانے سنگت کٹا لیٹاسَس ۔ ننے خننگتون بش مننگ نا کوشَست ئِ کرے ولے بش مننگ کتو ، جان ٹی تہ ہچو سیک اس سلتیوسُس۔ پدان اعظم اَ و مارتہ اُودے کرار سیا بُڑزا کریر ولے لیٹیفوک الاّرانتیکہ کینسر نا بیماری جان نا تہ شیر و شوتہ ئِ کشاسَس ۔ اُوڑتون جٹ اس جوان و ہیت و گپ کرین ولے نن خنان کہ براہوئی زبان نا دا پنی ئَ شاعر ، ترجمہ کروک ، پنی ئِ آرٹِسٹ، ڈکشنری ترتیب تروکا مُحقق ،ایجوکیشنسٹ تینا نظریہ تون آخردم اسکا جیرت اٹ سلوکہ انسان بیرہ منہ دے تا مہمانے ۔ سرجن اُونا غٹے ہیتاتے ریکاٹ کرے، ما رتہ بھلو فوٹو گل اس ہلک۔ نن پالہ اس چاءنا کلئی سے اٹ گٹان گدریفین ۔ اُو مارے تینا پارے کہ غزل نا کمپوز کروکا مسودہے ہرف ہتہ۔ نن مسودہ ئِ ہرفین ، ہُران منہ پنہ تہ اڑسان ۔ کنا اُستٹی بس کہ براہوئی ادبی سوسائٹی نا سنگتاتے پا وہ کہ داآخر یکو کتابے تہ چھاپ کیر۔ انداڑ تو اوارای خواست کیرٹ تہ کہ منہ غزل کنے ہم ایتے کہ ” ماہنامہ ساھگ “ کراچی کن رائی کیوتا ۔ تو مہربانی کرے نا اومیت کتوکنے۔ داڑان بیدس منہ پین غزل تہ متکُن ءُ اخبار اور سالہ سے آن ہم کشاٹ تینتو تخاٹ ۔ آخیر ٹی نن اوڑان اِجازت ہلکن ولے کبُین و است سے اٹ پیش تمان ۔ کنا مونجا ئَ اُست پارے کہ ہنینا کامریڈ ے خننگنا دآخر یکووار ے ۔ داڑان گُڈ سما اف کہ دیدار تہ مرے یا نہ۔ منہ دے آن پد ہمو دے کہ اُود ادنیاے اِلاّ، براہوئی اکیڈیمی نا منہ باسک کہ شام نا وختا اُراغا سُر اُونا دنیائے النگ نا پاریر ۔ بھاز مونجا مسُٹ ۔ بھلوار مانس اُستا دڑا۔ ہنین اَو خلکُن ہیتی ئَ دانشور دنیائے اِلاّسَس بس آخریکو ہیتاک تہ سر جن اعظم نا موبائل ٹی خوندی ءُ۔تینا شیئر شل شپادٹی اُو پائک:
پھوتڑوک نت تا
دیر چلخ مَسُر
دتک چُریسہ باریسہ
چُٹ کیش مسُر
پازندگی دااراہندے
اسے پین جا گہ اس پائک
دیر ئِ پاوا ی تینا
کسَس کتوتیناک کریر
لِخ لوپ اُٹ دِاسہ ای
تینا کریر چَٹ کنے
اُونا شیئر اتا اندا منہ بندان دڑد ءُ مونجائی تہ درشان مریک کہ اُودے اینونا حالت آک اخہ در پریشان کریُسر ۔ اُوہر انسان کِن معاشی آسراتی ، خیال آتا آذاتی ، علم نا روشنائی، گفتار ناروانی بلا حسب و نسب ، بلا مذہبی فرقہ آتا تفریق تعصب آن خواہسکہ ۔ اُونا مہر ہر نسل، زبان اَو بولی تا بند غاتے کنِ اس۔ ہر زبان تو نیک نیتی او مہر تہ اُونا نہُہ زبانی لُغت آن درشان مریک۔
اُوبندغان، سنگت آن، اُوایلم آن زیات جو ان ءُ انسان اس اَس ۔ ہر کس نا خیر خواہ اس۔ دوست مر وسُس یا د شمن ، ہر کس ئِ ایلم پاریکہ، خواجہ کریک عزت تسکہ، خذمت ئِ تہ کریکہ۔ بس پین انت پاﺅ۔ اُونا باروٹ ایلو سنگتاک ہم نوشتہ کرور، شخصیت ئِ تہ کاریم تے تہ جوانی اٹ مونا ہتور۔
اُو جو اننگا انسنا تیان اِسٹ اس اسکہ ۔ کہ 6نومبر2014 پنچ شنبے نا دے دنیا ئِ اِلاّ ہنا۔ یا تاک تہ گیرام کروکا افس، نشان تروک ئَ کسر تہ انسانیت نا کسر ئِ رغامک
اُو پائک
گنوکی آن وختس ہناٹ مَش تیٹی
دروہی ئِ پدر ند خلیس نی کنا۔
داگچین بے مٹا انسان پروفیسر عبدلعزیز مینگل اس کہ گولون ولے خنپرون تہ۔ داکسر نا مُسافراتے مگہ کس ئِ ولداخنانے ؟۔

Check Also

April-17 front small title

انگئی؛ مزاحمتی نسوانی چیخ ۔۔۔ بارکوال میاخیل

جس طرح ایک استحصالی طرز حکومت میں برسراقتدار طبقہ اپنے عوام کا استحصال کرتا ہے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *