Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » اُسے کہہ دو ۔۔۔۔۔۔ امانت حسرت

اُسے کہہ دو ۔۔۔۔۔۔ امانت حسرت

شہر کاشہر خفا ہے تیرے جانے کے بعد
ہم نے راستوں کو بھی روتے ہوئے دیکھا اکثر
چلتے رکشوں میں بھی محسوس ہوا ماتم و غم
’’ سریاب سریاب‘‘ کی صدائیں بھی مدہم سی تھی
جیسے، دل شکستہ ہو لوکل اور کلینر دونوں
گویا کاشان* کی ویران دہلیز نے پوچھا
وہ جس کی خوشبو ں سے مہکتی یہاں دیوار و در
وہ جو تے درد و نظر کے مرکز۔۔۔۔۔۔
وہ جو ایک شخص، صبح و شام تیرے ساتھ آتا
اُسے کہہ دو۔۔۔۔۔۔
اسے کہہ دو کہ تم آؤ گے تو آئے گی بہار
اسے کہہ دو اب نہیں شام کا رنگین خمار
اسے کہہ دو کہ تیرے بن یہاں ویراں ہے فضا ء
اسے کہہ دو کہ پکارتی ہے تجھے قوس قزح
اُسے کہہ دو
اب کے لوٹ آؤ غمِ جام چھلک جاتی ہے
اب کے لوٹ آؤ تیری یاد بہت آتی ہے
*کاشان ہوٹل

Check Also

March-17 sangat front small title

نظم ۔۔۔ زہرا بختیاری نژاد/احمد شہریار

میں جبراً تم سے نفرت کروں گی تمہارے عشق سے میری زندگی کے حصے بخرے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *